Who is Silsila e Ameeriya Zaidiya first Imam??

حضرت حسن مثنی کربلا کے میدان میں زخمی ہوئے اور اپنے
ماموں اسماء بن خارجہ فزاری کے توسط سے اس معرکے سے نجات
حاصل کر سکے۔ کوفہ میں اپنے ماموں کے زیر نگرانی صحت یاب
ہوئے۔ اس کے بعد کوفہ سے مدینہ واپس آگئے۔
حجاج بن یوسف کے خلاف عبد الرحمان بن محمد بن اشعث کی
حیات
شورش میں آپ نے عبد الرحمان کا ساتھ دیا۔ آپ اپنے زمانِ
میں حضرت علی علیہ السلام کی وصیت کے مطابق حضرت علی
علیہ السلام کے موقوفات کے متولی تھے۔ ابن عساکر، تاریخ مدینہ
دمشق، ج۱۳ ،ص۶۱ـ۶۲ میں لکھتے ہیں کہ حضرت حسن مثنی علیہ
السلام نے اپنے والد حضرت امام حسن علیہ السلام اور دوسرے
افراد سے حدیث نقل کی ہے۔ حسنی، المصابیح، ص۳۷۹۔۳۸۰۔۳۸۱؛
محلی، الحدائق الوردی￾ فی مناقب ائم￾ الزیدی￾، ج۲ ،ص۲۳۵ میں
درج ہے کہ آپ علویوں کے بزرگ اور زیدیوں کے امام تھیں اور عراق
کے مشہور علما عبدالرحمان بن ابی لیلی، شعبی، محمد بن سیرین و
حسن بصرؒی نے ان کی بیعت کی۔.

📚 Chiragh-e-Khizr Qalmi
Safa no.230

Hazrat Hassan Muthanna was wounded in the field of Karbala.
He recovered under the care of his uncles in Kufa
After that they returned to Madinah from Kufa.
He sided with Abdul Rehman in the revolt against Hajjaj.
According to the will of Hazrat Ali (as)
He was the trustee of the Prophet ﷺ Askars. Ibn Asakr, History of Madinah
Damascus, vol. 1, p. Writes that Hazrat Hassan Muthanna Alayh
Salam to his father Hazrat Imam Hassan (as) and others
Hadith has been narrated from individuals.

It is recorded that he was the elder of the Alawites and the Imam of the Zaidis and Iraq
The famous scholars of ‘Abd al-Rahman ibn Abi Laila, Sha’bi, Muhammad ibn Sirin and others
Hassan Basri swore allegiance to him.

Imam Hasan Musanna(a.s) ki Wiladat san 29 hijri hai Aur Imam Zaid Shaheed (a.s) ki Wiladat san 80 hijri hai bus isse saaf zahir hai ki Silsila-e-Zaidiyah ke pahle imam aap Hazrat Hasan Musanna(a.s) hai.n. Aur inn riwayato.n shahadato.n se ye baat sabit ho gyi……..ki

مستدرک الوسائل و مستنبط المسائل، الخاتمہ، ج ۸ ص ۲۴۲ و
ج۹ ،ص۴۶.و بحار الانوار، ج ۴۶ ،ص۱۵۷۔۱۵۸ پر یوں رقم ہے کہ امام حسین علیہ السلام کی
شہادت کے بعد بعض علویوں نے مسلحانہ قیام کی فکر کو امامت کے شرائط اور ظالموں سے مقابلہ کی روش کے عنوان سے پیش کیا۔ اس سیاسی تفکر کی تشکیل کے ساتھ، امام زین العابدین علیہ السلام کے زمانہ میں زیدیہ مسلک کا سنگ بنیاد رکھا گیا۔ علویوں کے درمیان اختلاف کی باز گشت ان دو نظریوں اموی حکومت سے ثقافتی جنگ یا مسلحانہ قیام کی طرف ہوتی ہے۔ اس اختلاف کا نتیجہ امام زین العابدین علیہ السلام کی شہادت کے بعد
ظاہر ہوا۔ بعض نے امام محمد باقر علیہ السلام کو قبول کر لیا اور دوسرے گروہ نے جو تلوار کے ذریعہ سے قیام مسلحانہ کا قائل تھا، وہ امام محمد باقر کے بھائی زید بن علی کی امامت کے قائل ہو گئے اور زیدیہ مشہور ہو گئے۔ اس بنیاد پر وہ شیعہ جو قیام مسلحانہ کا عقیدہ رکھتے تھے انہوں نے زید بن علی کو امام علؑی، امام حسنؑ، امام حسینؑ، اور امام حسن مثنیؑ
کے بعد اہل بیت علیہم السلام میں پانچویں امام کی حیثیت سے مانتے ہیں۔
پانچویں امام کی حیثیت سے مانتے ہیں۔. 📚 Chiragh-e-Khizr Qalmi
Safa no.231.


After the Karbala, some Alawites introduced the idea of armed struggle as a condition of Imamate and a way of fighting the oppressors. With the formation of this political thought, the cornerstone of the Zaidi sect was laid in the time of Imam Zainul Abidin (as). The differences between the Alawites these two ideologies, from the Umayyad government to a cultural war or armed struggle. The result of this disagreement was after the martyrdom of Imam Zainul Abidin (as)
Appeared Some accepted Imam Muhammad Baqir (as) and the other group, which was convinced of the armed establishment by the sword, became convinced of the leadership of Imam Muhammad Baqir’s brother Zaid bin Ali and Zaidi became famous. On this basis, the peoples who believed in the establishment of armed forces called Zaid bin Ali Imam Ali.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s