Taleemat e Ameer 14

** تعلیمات امیر ( Taleemat e Ameer r.a)
** چودہواں حصہ ( part-14 )

(۳) فتاویٰ دار العلوم دیوبند۔ جلد۱ ص۱۴۳ پر شفاء العلیل کی یہ عبارت نقل کرکے لکھا ہے ’’اس عبارت سے واضح ہوا کہ نسبت اویسیہ کے معنی روحی فیض کے ہیں۔ اور یہ نسبت قوی اور صحیح ہے، یہ بھی معلوم ہو کہ نسبت اویسیہ کے لئے یہ ضروری نہیں کہ خواجہ اویس قرنی سے کوئی مرید ہوا ہو۔ اور یہ بھی واضح ہوا کہ نسبت اویسیہ کا انکار غلط ہے، چونکہ اویس قرنی کو آنحضرت ﷺ سے روحی فیض حاصل ہوا اور صحبت آنحضرت ﷺ کی ان کو حاصل نہیں ہوئی …… اس لئے جس کو روحی فیض کسی بزرگ سے حاصل ہوگا اس کو نسبت اویسیہ سے تعبیر کریں گے۔‘‘

(۴) عقائد علمائے دیوبند، مرکزی رسالہ ہے، جس پر مسلک دیوبندی کا مدار ہے اس میں سوال نمبر ۱۱ روح سے فیض باطنی کے متعلق ہوا ہے اور علمائے دیوبند نے مفصل جواب دیا کہ وہ روح سے باطنی فیض کے قائل ہیں اور صرف قائل نہیں بلکہ :
واما الاستفادۃ من روحانیۃ المشائخ الاجلۃ ووصول الفیض الباطنیۃ من صدورھم او قبورھم صحیح علی الطریقۃ  المعروفۃ فی اھلھا وخواصھا لا بما شائع فی العوام۔

بہر حال مشائخ سے روحانی فیض حاصل کرنا اور فیض باطنی کا پہنچنا ان کے سینوں سے یا ان کی قبروں سے صحیح ہے، اس مشہور و معروف طریقے سے جو ان اولیاء و صوفیہ میں مروج ہے اور خاص خاص بندوں کو حاصل ہوتا ہے۔ وہ طریقہ نہیں جو عوام میں مروج ہے۔ 
یہ تو روح سے اخذ فیض اور اجرائے فیض کے علمی جوابات ہیں۔ رہی دوسری صورت تو وہ ذوقی چیز ہے، لطف ایں مے نشاسی بخدا تانہ چشی، اگر کوئی اللہ کا بندہ یہ ذوقی جواب بھی چاہتا ہے تو صلائے عام ہے۔ طلب اور خلوص لے کر آجائے اور ممکن اور محال میں تمیز کرے۔ ورنہ صرف باتیں بنانے سے وہ حاصل نہیں ہو سکتا جو عملی طور پر کرنے سے حاصل ہوتا ہے۔

📚 ماخذ از کتاب چراغ خضر۔

Note :-

Naql hai ki Kisi shakhs ne Hazrat Ali (عليه السلام) se sawal kiya ki Ishq kya hai?
Aap ne farmaya Ishq Khuda ke naamo.n mein se ek naam hai Subhan Allah.

Hazrat Khwaja Ajmeri Chishti r.a ne farmaya “ke Ishq e Illahi ka hasil ye hai ke Allah Ta’ala apne mohib ke dil mein apne deedar ka zauq paida kar deta hai aur use sardari ata karta hai iss se koi aisa fail sarzad nahi hota jis ke sabab Haq se doori hojaye.Kyunki jisne Haq ko Raazi karliya Haq uska dost hai aur Jannat uski deedar ki mushtaq.
Phir farmaya Hazrat Khwaja Abu Saeed abul khair r.a farmate the.n ke Allah Ta’ala kisi bande ko apna dost banata hai Tu usko apni mohabbat ata kar deta hai aur woh banda iski raza ke liye apne ko hamatan waqf kar deta hai.Bil akhir Haq Ta’ala usko apni taraf kheench leta hai taaki woh FanaFillah ho jaye.
Chunanche Hazrat Ameer Kabir is sher mein farmate hain ki main ishq ki naher hoon yani ishq ki Dariya ka chashma hoon. isse sabit hai ki aap ishq ke bhi Aala darje par faiz hai’n.
Subhan Allah.