Taleemat e Ameer 26

** تعلیمات امیر (Taleemat e Ameer r.a)
** چھبیسواں حصہ (part-26)

پس اسی طرح امام احمد بن حنبل رضی اللہ تعالی عنہ جن کا پورا نام ابو عبد اللہ احمد بن محمد بن حنبل شیبانی ذہلی ہے۔ وہ اپنے عہد کے سب سے بڑے عالم حدیث، مجتہد تھے۔سنت نبوی سے عملی و علمی لگاؤ تھا، اس لیے امت سے امام اہل السنت و الجماعت کا لقب پایا۔ آپ حضرت امام شافعیؓ کے شاگرد تھے۔ اپنے زمانہ کے مشہور علمائےحدیث میں آپ کا شمار ہوتا تھا۔ انہوں نے مسند کے نام سے حدیث کی کتاب تالیف کی، جس میں تقریباً چالیس ہزار احادیث شامل ہیں۔ اور ان کے شاگردوں میں مؤلفین صحاح ستہ میں امام محمد بن اسماعیل بخاری (م ۲۵۶ھ)، امام مسلم بن حجاج (م ۲۶۱ھ) اور امام ابو داؤد سلیمان بن اشعث (م ۲۷۵ھ) بلاواسطہ شاگرد تھیں۔
اور بالواسطہ تلامذہ میں سے امام ابو عیسیٰ ترمذی (م ۲۷۹ھ) احمد بن حسن ترمذی کے واسطہ سے
امام ابو عبد الرحمان احمد بن شعیب نسائی
(م ۳۰۳ھ) عبد اللہ بن احمد بن حنبل کے واسطہ سے
اور امام ابن ماجہ (م ۲۷۳ھ) امام محمد بن یحییٰ کے واسطہ سے امام احمد بن حنبل کے شاگردوں میں تھے۔
اور حضرت شیخ محی الدین عبدال قادر جیلانی رحمت اللہ علیہ آپ ہی کے نسبت سے حنبلی کہلاتے ہیں۔
پس امام احمد بن حنبل سے پوچھا گیا کہ آپ یزید کے بارے میں کیا حکم کرتے ہیں؟ انہوں نے جو فتویٰ دیا آفاقِ عالم میں آج تک اس کی آواز گونجتی ہے، فرمایا:
میرے نزدیک یزید کافر ہے۔ آپ کے صاحبزادے عبداللہ بن احمد بن حنبل نے اس کو روایت کیا اور کثیر کتب میں آج تک بلا اختلاف امام احمد بن حنبل کی تکفیر کا فتویٰ یزید پر آج تک قائم ہے۔ آپ کی مودت اور محبت بھی اہل بیت کے ساتھ لاجواب تھی۔
پس ان چاروں آئمہ فقہ کی فطرت میں محبت اور مودت اہل بیت تھی، ان کے علم اور ایمان کا خمیر محبت اور مودت اہل بیت سے اٹھا تھا۔

📚 ماخذ از کتاب چراغ خضر۔

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s