Fitnoo ka zahoor 22

al-Qur’ān

Log apnā Dīn aur aḳhlāq qalīl dunyāwī matāʻ ke ʻiwaz̤ faroḳht kar d̥āleṅge

(1) اُولٰٓـئِکَ الَّذِيْنَ اشْتَرَوُا الْحَیٰوةَ الدُّنْیَا بِالْاٰخِرَةِ فَـلَا یُخَفَّفُ عَنْهُمُ الْعَذَابُ وَلَا هُمْ یُنْصَرُوْنَo (البقرۃ، 2/ 86)

یہی وہ لوگ ہیں جنہوں نے آخرت کے بدلے میں دنیا کی زندگی خرید لی ہے، پس نہ ان پر سے عذاب ہلکا کیا جائے گا اور نہ ہی ان کو مدد دی جائے گیo

(1) Yahī woh log haiṅ jinheṅ āḳhirat ke badle meṅ dunyā kī zindagī ḳharīd lī hai, pas nah un par se ʻaz̲āb halkā kiyā jā’egā aur nah hī un ko madad dī jā’egī.

[al-Baqarah, 2/86.]
〰〰

Log apnā Dīn aur aḳhlāq qalīl dunyāwī matāʻ ke ʻiwaz̤ faroḳht kar d̥āleṅge

al-Ḥadīt̲h̲

(23) عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ رضي الله عنه أَنَّ رَسُوْلَ اللهِ ﷺ قَالَ: بَادِرُوْا بِالْأَعْمَالِ فِتَنًا کَقِطَعِ اللَّيْلِ الْمُظْلِمِ یُصْبِحُ الرَّجُلُ مُؤْمِنًا وَیُمْسِي کَافِرًا أَوْ یُمْسِي مُؤْمِنًا وَیُصْبِحُ کَافِرًا یَبِيْعُ دِيْنَهٗ بِعَرَضٍ مِنَ الدُّنْیَا۔

رَوَاهُ مُسْلِمٌ وَأَحْمَدُ وَالتِّرْمِذِيُّ وَابْنُ حِبَّانَ۔

23: أخرجہ مسلم في الصحیح، کتاب الإیمان، باب الحث علی المبادرۃ بالأعمال قبل تظاھر الفتن، 1/ 110، الرقم/ 118، وأحمد بن حنبل في المسند، 2/ 303، الرقم/ 8017، والترمذي في السنن، کتاب الفتن، باب ما جاء ستکون فتن کقطع اللیل المظلم، 4/ 487، الرقم/ 2195، وابن حبان في الصحیحِ، 15/ 96، الرقم/ 6704، وأبو یعلی في المسند، 11/ 396، الرقم/ 6515، والطبراني في المعجم الأوسط، 3/ 156، الرقم/ 2774۔

وَفِي رِوَایَةِ أَنَسِ بْنِ مَالِکٍ رضي الله عنه، قَالَ: یَبِيْعُ أَقْوَامٌ دِيْنَهُمْ بِعَرَضٍ مِنَ الدُّنْیَا قَلِيْلٍ۔ (1)

رَوَاهُ أَحْمَدُ وَالتِّرْمِذِيُّ وَابْنُ أَبِي شَيْبَةَ وَالْحَاکِمُ۔

(1) أخرجہ أحمد بن حنبل في المسند، 2/ 303، الرقم/ 8017، والترمذي في السنن، کتاب الفتن، باب ما جاء ستکون فتن کقطع اللیل المظلم، 4/ 487، وابن أبي شیبۃ في المصنف، 7/ 459، الرقم/ 37216، والحاکم في المستدرک، 4/ 485، الرقم/ 8355، وابن راہویہ في المسند، 1/ 401، الرقم/ 441، وأبو یعلی في المسند، 7/ 252، الرقم/ 4260۔

وَفِي رِوَایَةِ النُّعْمَانِ ابْنِ بَشِيْرٍ رضي الله عنهما، قَالَ: یَبِيْعُ أَقْوَامٌ أَخْـلَاقَهُمْ بِعَرَضٍ مِنَ الدُّنْیَا یَسِيْرٍ۔ (1)

رَوَاهُ الطَّیَالِسِيُّ وَأَبُوْ نُعَيْمٍ وَالْمُقْرِئُ۔

(1) أخرجہ الطیالسي في المسند، 1/ 108، الرقم/ 803، وأبو نعیم في حلیۃ الأولیائ، 10/ 171، والمقرئ في السنن الواردۃ في الفتن، 1/ 260، الرقم/ 50، وذکرہ الہندي في کنز العمال، 14/ 103، الرقم/ 38512۔

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: ان فتنوں کے واقع ہونے سے پہلے نیک اعمال کر لو، جو (فتنے) اندھیری رات کی طرح چھا جائیں گے، ایک شخص صبح مومن ہو گا اور شام کو کافر ہو جائے گا، یا شام کو مومن ہو گا اور صبح کو کافر ہو جائے گا اور معمولی سی دنیاوی منفعت کے عوض اپنی متاعِ ایمان فروخت کر ڈالے گا۔

اِس حدیث کو امام مسلم، اَحمد، ترمذی اور ابن حبان نے روایت کیا ہے۔

حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ آپ ﷺ نے فرمایا: کئی لوگ دنیاوی عزت کی خاطر اپنا دین بہت تھوڑی دنیاوی متاع کے عوض فروخت کر ڈالیں گے۔

اِس حدیث کو امام اَحمد، ترمذی، ابن ابی شیبہ اور حاکم نے روایت کیا ہے۔

حضرت نعمان بن بشیر رضی اللہ عنہما سے مروی ہے کہ آپ ﷺ نے فرمایا: کئی لوگ دنیاکی عزت کی خاطر اپنے اَخلاق بہت تھوڑی دنیاوی متاع کے عوض بیچ ڈالیں گے۔

اِس حدیث کو امام طیالسی، ابو نعیم اور مقرئ نے روایت کیا ہے۔

  • Ḥaz̤rat Abū Hurayrah raḍiya Allāhu ‘anhu bayān karte haiṅ keh Rasūl Allāh ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihi wa-sallam ne farmāyā: in fitnoṅ ke wāqeʻ hone se păhle nek aʻmāl kar lo, jo (fitne) aṅdherī rāt kī ṭarḥ c̥hā jā’eṅge, ek shaḳhṣ ṣubḥ Momin hogā aur shām ko kāfir ho jā’egā, yā Shām ko Momin hogā aur ṣubḥ ko kāfir ho jā’egā aur maʻmūlī-sī dunyāwī manfaʻat ke ʻiwaz̤ apnī matāʻe īmān faroḳht kar d̥ālegā. Is ḥadīs̲ ko Imām Muslim, Aḥmad, Tirmid̲h̲ī aur Ibn Ḥibbān ne riwāyat kiyā hai. Ḥaz̤rat Anas bin Mālik raḍiya Allāhu ‘anhu se marwī hai keh Āp ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihi wa-sallam ne farmāyā: ka’ī log dunyāwī ʻizzat kī ḳhāṭir apnā Dīn bŏhat thor̥ī dunyāwī matāʻ ke ʻiwaz̤ faroḳht kar d̥āleṅe.

Is ḥadīs̲ ko Imām Aḥmad, Tirmid̲h̲ī, Ibn Shaybah aur Ḥākim ne riwāyat kiyā hai.

Ḥaz̤rat Nuʻmān bin Bashīr raḍiya Allāhu ‘anhu se marwī hai keh Āp ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihi wa-sallam ne farmāyā: ka’ī log dunyā kī ʻizzat kī ḳhāṭir apne aḳhlāq bŏhat thor̥ī dunyāwī matāʻ ke ʻiwaz̤ bech d̥āleṅge.

Is ḥadīs̲ ko Imām Ṭayālisī, Abū Nuʻāym aur Muqrī ne riwāyat kiyā hai.

[Ṭāhir al-Qādrī fī al-Qawlu al-Ḥasani fī ʻalāmatī al-sāʻaṫi wa-ẓuhūri al-fitan,/50_52, raqam: 23.]
〰〰
Join Karen

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s