Farman e Nabi Pakﷺ::ba’ad-al-maut

🌻 ba’ad-al-maut🌻
Rasoolallah ﷺ ne farmaya , “Wo nek aamaal aur kaar-e-khair ke jin ka sawaab momin ko uski maut ke ba’ad bhi pahunchta rahta hai, un me se ilm hai jisko us (momin) ne seekha aur (dars wa tadrees ya tasneef wa taaleef waghaira ke zareeye) phailaaya, aur nekbakht aulaad jo usne chhodi ya Quraan paak (aur deeni wa mazhabi kitaabe) jo apane waariso ke liye wo chhod gaya, ya masjid (aur madarsa wa khaanqaah) jo wo bana kar gaya, ya musaafirkhaana jo wo bana kar gaya, ya nahar jo wo jaari kar gaya, ya wo sadqa jo usne apani sehat wa tandurasti aur apani zindagi me apane maal se nikaala (in cheezo ka sawaab) momin ko uski maut ke ba’ad bhi pahunchta rahta hai” (Ibne Maaja, Bayhqi)
🌻 बाद -अल-मौत🌻
रसूलल्लाह ﷺ ने फरमाया , “वो नेक आमाल और कार-ए-खैर के जिन का सवाब मोमिन को उसकी मौत के बाद भी पहुंचता रहता है, उनमे से इल्म है जिसको उस (मोमिन) ने सीखा और (दर्स व तदरीस या तसनीफ व तालीफ वगैरा के जरिए) फैलाया और नेकबख्त अवलाद जो उसने छोडी या कुरआन पाक (और दीनी व मजहबी किताबे) जो अपने वारिसो के लिए वो छोड गया, या मस्जिद (और मदरसा व खानकाह) जो वो बनाकर गया, या मुसाफिरखाना जो वो बनाकर गया, या नहर जो वो जारी कर गया, या वो सदका जो उसने अपनी सेहत व तंदुरुस्ती और अपनी जिंदगी मे अपने माल से निकाला (इन चीजों का सवाब) मोमिन को उसकी मौत के बाद भी पहुंचता रहता है” (इब्ने माजा, बैहकी)

Quote of Maula Ali AlaihisSalam

मौला ए क़ायनात अली अलैहिस्लाम फ़रमाते है:- दौलत,रूतबा, ओर इख्तियार मिलने से इंसान बदलता नही उसका असली चहेरा सामने आ जाता है

Fitnoṅ kā ẓuhūr 18

al-Qur’ān

(19) وَاِنَّ الْفُجَّارَ لَفِيْ جَحِيْمٍo يَّصْلَوْنَھَا یَوْمَ الدِّيْنِo وَمَا ھُمْ عَنْھَا بِغَآئِبِيْنَo وَمَآ اَدْرٰ کَ مَا یَوْمُ الدِّيْنِo ثُمَّ مَآ اَدْرٰ کَ مَا یَوْمُ الدِّيْنِo یَوْمَ لَا تَمْلِکُ نَفْسٌ لِّنَفْسٍ شَيْئًا ط وَالْاَمْرُ یَوْمَئِذٍ ِﷲِo
(الانفطار، 82/ 14-19)

اور بے شک بدکار دوزخِ (سوزاں) میں ہوں گےo وہ اس میں قیامت کے روز داخل ہوں گےo اور وہ اس (دوزخ) سے (کبھی بھی) غائب نہ ہو سکیں گےo اور آپ نے کیا سمجھا کہ روزِ جزا کیا ہےo پھر آپ نے کیا جانا کہ روزِ جزا کیا ہےo (یہ) وہ دن ہے جب کوئی شخص کسی کے لیے کسی چیز کا مالک نہ ہوگا، اور حکم فرمائی اس دن اللہ ہی کی ہو گیo

(19) Aur Be-shak bad-kār dozaḳhe (sozaṅ) meṅ hoṅge. Woh us meṅ qiyāmat ke roz dāḳhil hoṅge. Aur woh us (dozaḳh) se (kabhī bhī) ġhā’ib nah ho sakeṅge. Aur Āp ne kyā samjhā keh Roze Jazā kyā hai? Phir Āp ne kyā jānā keh Roze Jazā kyā hai. (Yeh) woh din hai jab ko’ī shaḳhṣ kisī ke liye kisī chīz kā mālik nah hogā, aur ḥukm farma’ī us din Allāh hī kī hogī.
[al-Infiṭār, 82/14_19.]
〰〰
Join Karen

al-Ḥadīt̲h̲

19۔ عَنِ ابْنِ مَسْعُوْدٍ رضي الله عنه فِي رِوَایَةٍ طَوِيْلَةٍ قَالَ: قُلْتُ: یَا رَسُوْلَ اللهِ، ھَلْ لِلسَّاعَةِ مِنْ عِلْمٍ تُعْرَفُ بِهِ السَّاعَةُ؟ فَقَالَ لِي: یَا ابْنَ مَسْعُوْدٍ، إِنَّ لِلسَّاعَةِ أَعْلَامًا وَإِنَّ لِلسَّاعَةِ أَشْرَاطًا۔ أَلَا، وَإِنَّ مِنْ أَعْـلَامِ السَّاعَةِ وَأَشْرَاطِھَا أَنْ یَکُوْنَ الْوَلَدُ غَيْضًا وَأَنْ یَکُوْنَ الْمَطْرُ قَيْظًا وَأَنْ تَفِيْضَ الأَشْرَارُ فَيْضًا،
یَا ابْنَ مَسْعُوْدٍ، إِنَّ مِنْ أَعْـلَامِ السَّاعَةِ وَأَشْرَاطِھَا أَنْ یُصَدَّقَ الْکَاذِبُ وَأَنْ یُکَذَّبَ الصَّادِقُ،
یَا ابْنَ مَسْعُوْدٍ، إِنَّ مِنْ أَعْـلَامِ السَّاعَةِ وَأَشْرَاطِھَا أَنْ یُؤْتَمَنَ الْخَائِنُ وَأَنْ یُخَوَّنَ الأَمِيْنُ،
یَا ابْنَ مَسْعُوْدٍ، إِنَّ مِنْ أَعْـلَامِ السَّاعَةِ وَأَشْرَاطِھَا أَنْ تُوَاصَلَ الأَطْبَاقُ وَأَنْ تَقَاطَعَ الأَرْحَامُ،
یَا ابْنَ مَسْعُوْدٍ، إِنَّ مِنْ أَعْـلَامِ السَّاعَةِ وَأَشْرَاطِھَا أَنْ یَسُوْدَ کُلَّ قَبِيْلَةٍ مُنَافِقُوْھَا وَکُلَّ سُوْقٍ فُجَّارُھَا،
یَا ابْنَ مَسْعُوْدٍ، إِنَّ مِنْ أَعْـلَامِ السَّاعَةِ وَأَشْرَاطِھَا أَنْ تُزَخْرَفَ الْمَسَاجِدُ وَأَنْ تُخَرَّبَ الْقُلُوْبُ،
یَا ابْنَ مَسْعُوْدٍ، إِنَّ مِنْ أَعْـلَامِ السَّاعَةِ وَأَشْرَاطِھَا أَنْ یَکُوْنَ الْمُؤْمِنُ فِي الْقَبِيْلَةِ أَذَلَّ مِنَ النَّقْدِ،
یَا ابْنَ مَسْعُوْدٍ، إِنَّ مِنْ أَعْـلَامِ السَّاعَةِ وَأَشْرَاطِھَا أَنْ یَکْتَفِيَ الرِّجَالُ بِالرِّجَالِ وَالنِّسَاءُ بِالنِّسَاءِ،
یَا ابْنَ مَسْعُوْدٍ، إِنَّ مِنْ أَعْـلَامِ السَّاعَةِ وَأَشْرَاطِھَا أَنْ تَکْثُفَ الْمَسَاجِدُ وَأَنْ تَعْلُوَ الْمَنَابِرُ،
یَا ابْنَ مَسْعُوْدٍ، إِنَّ مِنْ أَعْـلَامِ السَّاعَةِ وَأَشْرَاطِھَا أَنْ یُعْمَرَ خَرَابُ الدُّنْیَا وَیُخْرَبُ عِمْرَانُھَا،
یَا ابْنَ مَسْعُوْدٍ، إِنَّ مِنْ أَعْـلَامِ السَّاعَةِ وَأَشْرَاطِھَا أَنْ تَظْهَرَ الْمَعَازِفُ وَتُشْرَبَ الْخُمُوْرِ،
یَا ابْنَ مَسْعُوْدٍ، إِنَّ مِنْ أَعْـلَامِ السَّاعَةِ وَأَشْرَاطِھَا شُرْبَ الْخُمُوْرِ،
یَا ابْنَ مَسْعُوْدٍ، إِنَّ مِنْ أَعْـلَامِ السَّاعَةِ وَأَشْرَاطِھَا اَلشُّرَطُ وَالْغَمَّازُوْنَ وَاللَّمَّازُوْنَ،
یَا ابْنَ مَسْعُوْدٍ، إِنَّ مِنْ أَعْـلَامِ السَّاعَةِ وَأَشْرَاطِھَا أَنْ یَکْثُرَ أَوْلَادُ الزِّنَی۔
رَوَاهُ الطَّبَرَانِيُّ۔

19: أخرجہ الطبراني في المعجم الکبیر، 10/ 229، الرقم/ 10556، وأیضًا في المعجم الأوسط، 5/ 127، الرقم/ 4861۔

حضرت عبد اللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ ایک طویل روایت میں بیان کرتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ ﷺ کی خدمت میں عرض کیا: یا رسول اللہ! کیا کوئی علم ایسا بھی ہے جس سے قربِ قیامت کے بارے میں جانا جا سکے؟ آپ ﷺ نے فرمایا: اے ابنِ مسعود! بے شک قیامت کے کچھ آثار و علامات ہیں وہ یہ کہ اولاد (نافرمانی کے سبب والدین کے لیے) غم و غصہ کا باعث ہو گی، بارش کے باوجود گرمی ہو گی اور بدکاروں کا طوفان برپا ہوگا،
’اے ابن مسعود! بے شک قیامت کے آثار و علامات میں سے یہ بھی ہے کہ جھوٹے کو سچا اور سچے کو جھوٹا سمجھا جائے گا،
اے ابن مسعود! بے شک قیامت کے آثار و علامات میں سے یہ بھی ہے کہ خیانت کرنے والے کو امین اور امین کو خیانت کرنے والا بتلایا جائے گا،
اے ابن مسعود! بے شک قیامت کے آثار و علامات میں سے یہ بھی ہے کہ بیگانوں سے تعلق جوڑا جائے گا اور خونی رشتوں سے توڑا جائے گا،
اے ابن مسعود! بے شک قیامت کے آثار و علامات میں سے یہ بھی ہے کہ ہر قبیلے کی قیادت اس کے منافقوں کے ہاتھوں میں ہوگی اور ہر بازار کی قیادت اس کے بدمعاشوں کے ہاتھ میں ہو گی،
اے ابن مسعود! بے شک قیامت کے آثار و علامات میں سے یہ بھی ہے کہ مساجد سجائی جائیں گی اور دل ویران ہوں گے،
اے ابن مسعود! بے شک قیامت کے آثار و علامات میں سے یہ بھی ہے کہ مومن (نیک اور دیانت دار آدمی) اپنے قبیلہ میں بھیڑ بکری سے زیادہ حقیر سمجھا جائے گا،
اے ابن مسعود! بے شک قیامت کے آثار و علامات میں سے یہ بھی ہے کہ مرد، مردوں سے اور عورتیں، عورتوں سے جنسی تعلق استوار کریں گی،
اے ابن مسعود! بے شک قیامت کے آثار و علامات میں سے یہ بھی ہے کہ مسجدیں بہت زیادہ ہوں گی اور اُن کے منبر عالی شان ہوں گے،
اے ابن مسعود! بے شک قیامت کے آثار و علامات میں سے یہ بھی ہے کہ دنیا کے ویرانوں کو آباد اور آبادیوں کو ویران کیا جائے گا،
اے ابن مسعود! بے شک قیامت کے آثار و علامات میں سے یہ بھی ہے کہ گانے بجانے کا سامان عام ہوگا اور شراب نوشی کا دور دورہ ہوگا،
اے ابن مسعود! بے شک قیامت کے آثار و علامات میں سے یہ ہے کہ مختلف اَقسام کی شرابیں پی جائیں گی،
اے ابن مسعود! بے شک قیامت کے آثار و علامات میں سے یہ بھی ہے کہ (معاشرے میں) پولیس والوں، چغلی کرنے والوں اور طعنہ بازوں کی بہتات ہوگی،
اے ابن مسعود! بے شک قیامت کے آثار و علامات میں سے یہ بھی ہے کہ ناجائز بچوں کی ولادت کثرت سے ہوگی۔
اِس حدیث کو امام طبرانی نے روایت کیا ہے۔

  • Ḥaz̤rat̤ ʻAbd Allāh bin Masʻūd raḍiya Allāhu ‘anhu ek ṭawīl riwāyat meṅ bayān karte haiṅ keh maiṅ ne Rasūl Allāh ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihī wa-sallam kī ḳhidmat meṅ ʻarz̤ kiyā: yā Rasūl Allāh! Kyā ko’ī ʻilm aisā bhī hai jis se qurbe qiyāmat ke bāre meṅ jānā jā sake? Āp ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihī wa-sallam ne farmāyā: ae Ibn Masʻud! Be-shak qiyāmat ke kuc̥h ās̲ār-o alāmāt haiṅ woh yeh keh aulād (nā-farmānī ke sabab wāledain ke liye) ġhām-o ġhuṣṣah kā bāʻis̲ hogī, bārish ke bā-wujūd garmī hogī aur bad-kāroṅ kā ṭūfān barpā hogā,
    ʻAe Ibn Masʻūd! Be-shak qiyāmat ke ās̲ār-o ʻalāmāt meṅ se yeh bhī hai keh jhūt̥e ko sachchā aur sachche ko jhūt̥ā samjhā jā’egā,
    Ae Ibn Masʻūd! Be-shak qiyāmat ke ās̲ār-o ʻalāmāt meṅ se yeh bhī hai keh ḳhayānat karne wāle ko amīn aur amīn ko ḳhayānat karne wālā batlāyā jā’egā,
    Ae Ibn Masʻūd! Be-shak qiyāmat ke ās̲ār-o ʻalāmāt meṅ se yeh bhī hai keh begānoṅ se taʻalluq jor̥ā jā’egā aur ḳhūnī rishtoṅ se tor̥ā jā’egā,
    Ae Ibn Masʻūd! Be-shak qiyāmat ke ās̲ār-o ʻalāmāt meṅ se yeh bhī hai keh har qabīle kī qiyādat us ke munāfiqoṅ ke hāthoṅ meṅ hogī aur har bāzār kī qiyādat us ke bad muʻāshoṅ ke hāth meṅ hogī,
    Ae Ibn Masʻūd! Be-shak qiyāmat ke ās̲ār-o ʻalāmāt meṅ se yeh bhī hai keh masājid sajā’ī jā’eṅgī aur dil wīrān hoṅge,
    Ae Ibn Masʻūd! Be-shak qiyāmat ke ās̲ār-o ʻalāmāt meṅ se yeh bhī hai keh Momin (nek aur dayānat-dār ādamī) apne qabīlah meṅ bher̥ bakri se ziyādah ḥaqīr samjhā jā’egā,
    Ae Ibn Masʻūd! Be-shak qiyāmat ke ās̲ār-o ʻalāmāt meṅ se yeh bhī hai keh mard, mardoṅ se aur ʻaurteṅ, ʻaurtoṅ se jinsī taʻalluqāt ustuwār kareṅgī,
    Ae Ibn Masʻūd! Be-shak qiyāmat ke ās̲ār-o ʻalāmāt meṅ se yeh bhī hai keh masjid bŏhat ziyādah hoṅgī aur un ke minbar ʻālī-shān hoṅge,
    Ae Ibn Masʻūd! Be-shak qiyāmat ke ās̲ār-o ʻalāmāt meṅ se yeh bhī hai keh dunyā ke wīrānoṅ ko ābād aur ābādiyoṅ ko wīrān kiyā jā’egā,
    Ae Ibn Masʻūd! Be-shak qiyāmat ke ās̲ār-o ʻalāmāt meṅ se yeh bhī hai keh gāne bajāne kā sāmān ʻām hogā aur sharāb noshī kā daur daurā hogā,
    Ae Ibn Masʻūd! Be-shak qiyāmat ke ās̲ār-o ʻalāmāt meṅ se yeh bhī hai keh muḳhtalif aqsām kī sharābeṅ pī jā’eṅgī,
    Ae Ibn Masʻūd! Be-shak qiyāmat ke ās̲ār-o ʻalāmāt meṅ se yeh bhī hai keh (muʻāshare meṅ) polīs wāloṅ, chuġhlī karne wāloṅ aur ṭaʻnah-bāzoṅ kī bŏhtāt hogī,
    Ae Ibn Masʻūd! Be-shak qiyāmat ke ās̲ār-o ʻalāmāt meṅ se yeh bhī hai keh nā-jā’iz bachchoṅ kī wilādat kas̲rat se hogī
    Is ḥadīs̲ ko Imām Ṭabarānī ne riwāyat kiyā hai.

    [Ṭāhir al-Qādrī fī al-Qawlu al-Ḥasani fī ʻalāmatī al-sāʻaṫi wa-ẓuhūri al-fitan,/39_43, , raqam: 19.]
    〰〰
    Join Karen

Fitnoṅ kā ẓuhūr 17

al-Qur’ān

(18) اِذَا السَّمَآءُ انْشَقَّتْo وَ اَذِنَتْ لِرَبِّھَا وَحُقَّتْo وَ اِذَا الْاَرْضُ مُدَّتْo وَ اَلْقَتْ مَا فِيْھَا وَتَخَلَّتْo

(الانشقاق، 84/ 1-4)

جب (سب) آسمانی کرّے پھٹ جائیں گےo اور اپنے رب کا حکمِ (اِنشقاق) بجا لائیں گے اور (یہی تعمیلِ اَمر) اُس کے لائق ہےo اور جب زمین (ریزہ ریزہ کر کے) پھیلا دی جائے گیo اور جو کچھ اس کے اندر ہے وہ اسے نکال باہر پھینکے گی اور خالی ہو جائے گیo

(18) Jab (sab) āsmānī kurre phat̥ jā’eṅge. Aur apne Rabb kā ḥukme (insheqāq) bajā lā’eṅge aur (yahī taʻmīle amr) us ke lā’iq hai. Aur jab zamīn (rezah-rezah kar ke) phailā dī jā’egī. Aur jo kuc̥h us ke andar hai woh use nikāl bāhar phaiṅkegī aur ḳhālī ho jā’egī.

[al-īnshiqāq, 84/1_4.]
〰〰
Join Karen

al-Ḥadīt̲h̲

18۔ عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِکٍ رضي الله عنه قَالَ: قَالَ رَسُوْلُ اللهِ ﷺ : إِذَا اسْتَحَلَّتْ أُمَّتِي سِتًّا فَعَلَيْھِمُ الدِّمَارُ، إِذَا ظَھَرَ فِيْھِمُ التَّـلَاعُنُ، وَشَرِبُوْا الْخُمُوْرَ وَلَبِسُوْا الْحَرِيْرَ، وَاتَّخَذُوْا الْقِیَانَ، وَاکْتَفَی الرِّجَالُ بِالرِّجَالِ وَالنِّسَاءُ بِالنِّسَاءِ۔
رَوَاهُ الطَّبَرَانِيُّ وَالْبَيْھَقِيُّ وَأَبُوْ نُعَيْمٍ۔

18: أخرجہ الطبراني في المعجم الأوسط، 2/ 18، الرقم/ 1086، والبیھقي في شعب الإیمان، 4/ 377، الرقم/ 5469، وأبو نعیم في حلیۃ الأولیائ، 6/ 123، وذکرہ المنذري في الترغیب والترھیب، 3/ 71، الرقم/ 3123، والھیثمي في مجمع الزوائد، 7/ 331، والھندي في کنز العمال، 7/ 177۔

حضرت انس رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: جب میری اُمت چھ چیزوں کو حلال سمجھنے لگے گی تو اُن پر تباہی نازل ہو گی۔ جب اُن میں باہمی لعنت ملامت عام ہو جائے، لوگ کثرت سے شرابیں پینے لگیں، مرد ریشمی لباس پہننے لگیں، لوگ گانے بجانے اور رقص کرنے والی عورتیں رکھنے لگیں، مرد، مردوں سے اور عورتیں، عورتوں سے جنسی لذت حاصل کرنے لگیں (یعنی ہم جنس پرستی عام ہو جائے اور gays اور lesbians کے گروہ عام ہو جائیں اس وقت تباہی و بربادی ان کا مقدر ٹھہرے گی)۔

اِس حدیث کو امام طبرانی، بیہقی اور ابو نعیم نے روایت کیا ہے۔

  • Ḥaz̤rat Anas raḍiya Allāhu ‘anhu bayān karte haiṅ keh Rasūl Allāh ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihī wa-sallam ne farmāyā: jab merī ummat c̥he chīzoṅ ko ḥalāl samajhne lagegī to un par tabāhī nāzil hogī. Jab un meṅ bāhamī laʻnat malāmat ʻām ho ja’egī, log kas̲rat se sharābeṅ pīne lagīṅ, mard reshamī libās păhăn·ne lagīṅ, log gāne bajāne aur raqṣ karne wāli ʻaurateṅ rakhne lagīṅ, mard, mardoṅ se aur ʻaurateṅ, ʻaurtoṅ se jinsī laz̲z̲at ḥāṣil karne lageṅ (yaʻnī ham jins parastī ʻām ho jā’e aur gays aur lesbians ke guroh ʻām ho jā’eṅ us waqt tabāhī wa barbādī un kā muqaddar t̥hăhregī). Is ḥadīs̲ ko Imām Ṭabarānī, Bayhaqī aur Abū Nuʻaym ne riwāyat kiyā hai.

    [Ṭāhir al-Qādrī fī al-Qawlu al-Ḥasani fī ʻalāmatī al-sāʻaṫi wa-ẓuhūri al-fitan,/38_39, raqam: 18.]
    〰〰
    Join Karen

Fitnoṅ kā ẓuhūr 16

al-Qur’ān

(17) اِذَا زُلْزِلَتِ الْاَرْضُ زِلْزَالَهَاo وَ اَخْرَجَتِ الْاَرْضُ اَثْقَالَهَاo وَقَالَ الْاِنْسَانُ مَالَهَاo یَوْمَئِذٍ تُحَدِّثُ اَخْبَارَهَاo

(الزلزال، 99/ 1-4)

جب زمین اپنے سخت بھونچال سے بڑی شدت کے ساتھ تھرتھرائی جائے گیo اور زمین اپنے (سب) بوجھ نکال باہر پھینکے گیo اور انسان (حیران و ششدر ہو کر) کہے گا: اسے کیا ہوگیا ہےo اس دن وہ اپنے حالات خود ظاہر کر دے گیo

(17) Jab zamīn apne saḳht bhūṅchāl se bar̥ī shiddat ke sāth thar tharā’ī jā’egī. Aur zamīn apne (sab) bojh nikāl bāhar pheṅkegī. Aur insān (ḥairān-o shashdar ho kar) kahegā: ise kyā ho gayā hai. Us din woh apne hālāt ḳhẉud ẓāhir kar degī.

[al-Zilzāl, 99/1_4.]
〰〰
Join Karen

al-Ḥadīt̲h̲

(17) عَنْ عَبْدِ اللهِ بْنِ عَمْرٍو رضي الله عنهما قَالَ: یَأْتِي عَلَی النَّاسِ زَمَانٌ یَجْتَمِعُوْنَ وَیُصَلُّوْنَ فِي الْمَسَاجِدِ وَلَيْسَ فِيْهِمْ مُؤْمِنٌ۔

رَوَاهُ ابْنُ أَبِي شَيْبَةَ وَالْحَاکِمُ وَالطَّحَاوِيُّ وَالْفَرْیَابِيُّ وَالدَّيْلَمِيُّ وَالْمَقْدِسِيُّ۔ وَقَالَ الْحَاکِمُ: هٰذَا حَدِيْثٌ صَحِيْحُ الإِسْنَادِ۔

17: أخرجہ ابن أبي شیبۃ في المصنف، 6/ 163، الرقم/ 30355، وأیضًا، 7/ 505، الرقم/ 37586، والطحاوي في شرح معاني الآثار، 2/ 172، والفریابي في صفۃ المنافق/ 80، الرقم/ 108- 110، والدیلمي في مسند الفردوس، 5/ 441، الرقم/ 8680، والمقدسي في ذخیرۃ الحفاظ، 5/ 2767، الرقم/ 6469۔

وَفِي رِوَایَةٍ قَالَ: یَأْتِي عَلَی النَّاسِ زَمَانٌ یَجْتَمِعُوْنَ فِي الْمَسَاجِدِ، لَيْسَ فِيْهِمْ مُؤْمِنٌ۔

رَوَاهُ الْحَاکِمُ وَالْآجُرِّيُّ، وَقَالَ الْحَاکِمُ: هٰذَا حَدِيْثٌ صَحِيْحُ الإِسْنَادِ۔

أخرجہ الحاکم في المستدرک، 4/ 489، الرقم/ 8365، والآجري في کتاب الشریعۃ، 2/ 601-602، الرقم/ 236-237۔

وَفِي رِوَایَةٍ قَالَ: لَیَأْتِیَنَّ عَلَی النَّاسِ زَمَانٌ یَجْتَمِعُوْنَ فِي مَسَاجِدِهِمْ، مَا فِيْهِمْ مُؤْمِنٌ۔

رَوَاهُ الْآجُرِّيُّ۔

أخرجہ الآجري في کتاب الشریعۃ، 2/ 602-603، الرقم/ 238۔

حضرت عبد اللہ بن عمرو رضی اللہ عنہما نے فرمایا: لوگوں پر ایک ایسا زمانہ بھی آئے گا کہ وہ مساجد میں اکٹھے ہوں گے اور باجماعت نمازیں پڑھیں گے، لیکن ان میں کوئی ایک بھی (صحیح) مؤمن نہیں ہوگا۔

اسے امام ابن ابی شیبہ، حاکم، طحاوی، فریابی، دیلمی اور مقدسی نے روایت کیا ہے۔ امام حاکم نے فرمایا: اس حدیث کی سند صحیح ہے۔

ایک اور روایت میں حضرت عبد اللہ بن عمرو رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں: لوگوں پر ایک ایسا زمانہ بھی آئے گا کہ وہ (باجماعت نمازوں کے لیے) مساجد میں اکٹھے ہوں گے لیکن ان میں کوئی ایک بھی مومن نہیں ہوگا۔

اسے امام حاکم اور آجری نے روایت کیا ہے۔ امام حاکم نے فرمایا: اس حدیث کی سند صحیح ہے۔

ایک اور روایت میں حضرت عبد اللہ بن عمرو رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں: لوگوں پر ضرور بالضرور ایک ایسا زمانہ آئے گا جس میں وہ (باجماعت نمازوں کے لیے) اپنی مساجد میں جمع ہوں گے لیکن ان میں کوئی ایک بھی مومن نہیں ہوگا۔

اسے امام آجری نے روایت کیا ہے۔

  • Ḥaz̤rat ʻAbd Allāh bin ʻAmr raḍiya Allāhu ‘anhu ne farmāyā: logoṅ par ek aisā zamānah bhī ā’egā keh woh masājid meṅ ikat̥t̥he hoṅge aur bā-jamāʻat namāzeṅ par̥heṅge, lekin un meṅ ko’ī ek bhī (ṣaḥīḥ) Momin nahīṅ hogā. Ise Imām Ibn Abī Shaybah, Ḥākim, Ṭaḥāwī, Faryābī, Daylamī aur Maqdisī ne riwāyat kiyā hai. Imām Ḥākim ne farmāyā: is ḥadīs̲ kī sanad ṣaḥīḥ hai. Ek aur riwāyat meṅ Ḥaz̤rat ʻAbd Allāh bin ʻAmr raḍiya Allāhu ‘anhu bayān karte haiṅ: logoṅ par ek aisā zamānah bhī ā’egā keh woh (bā-jamāʻat namāzoṅ liye) masājid meṅ ikat̥t̥he hoṅge lekin un meṅ ko’ī ek bhī Momin nahīṅ hogā. Ise Imām Ḥākim aur Ājurrī ne riwāyat kiyā hai. Imām Ḥākim ne farmāyā: is ḥadīs̲ kī sanad ṣaḥīḥ hai. Ek aur riwāyat meṅ Ḥaz̤rat ʻAbd Allāh bin ʻAmr raḍiya Allāhu ‘anhu bayān karte haiṅ: logoṅ par z̤arūr bil-z̤arūr ek aisā zamānah ā’egā jis meṅ woh (bā-jamāʻat namāzoṅ ke liye) apnī masājid meṅ jamʻa hoṅge lekin un meṅ ko’ī ek bhī Momin nahīṅ hogā. Ise Imām Ājurī ne riwāyat kiyā hai.

    [Ṭāhir al-Qādrī fī al-Qawlu al-Ḥasani fī ʻalāmatī al-sāʻaṫi wa-ẓuhūri al-fitan,/36_38, raqam: 17.]
    〰〰
    Join Karen