Fitnoo ka zahoor 24

al-Qur’ān

(2) وَ مَنْ يَّبْتَغِ غَيْرَ الْاِسْلَامِ دِيْنًا فَلَنْ یُّـقْبَلَ مِنْهُ ج وَھُوَ فِی الْاٰخِرَةِ مِنَ الْخٰسِرِيْنَo (آل عمران، 3/ 85)

اور جو کوئی اسلام کے سوا کسی اور دین کو چاہے گا تو وہ اس سے ہرگز قبول نہیں کیا جائے گا، اور وہ آخرت میں نقصان اٹھانے والوں میں سے ہوگاo

(2) Aur jo ko’ī Islām ke siwā kisī aur Dīn ko chāhegā to woh us se hargiz qubūl nahīṅ kiyā jā’egā, aur woh āḳhirat meṅ nuqṣān ut̥hāne wāloṅ meṅ se hogā.

[Āli ʻImrān, 3/85.]
〰〰

al-Ḥadīt̲h̲

25۔ عَنْ أَبِي سَعِيْدٍ الْخُدْرِيِّ وَأَنَسِ بْنِ مَالِکٍ رضي الله عنهما عَنْ رَسُوْلِ اللهِ ﷺ قَالَ: سَیَکُوْنُ فِي أُمَّتِي اخْتِلَافٌ وَفُرْقَةٌ قَوْمٌ یُحْسِنُوْنَ الْقِيْلَ وَیُسِيْئُوْنَ الْفِعْلَ یَقْرَأُوْنَ الْقُرْآنَ لَا یُجَاوِزُ تَرَاقِیَھُمْ یَمْرُقُوْنَ مِنَ الدِّيْنِ مُرُوْقَ السَّھْمِ مِنَ الرَّمِيَّةِ لَا یَرْجِعُوْنَ حَتّٰی یَرْتَدَّ عَلٰی فُوْقِهٖ ھُمْ شَرُّالْخَلْقِ وَالْخَلِيْقَةِ طُوْبٰی لِمَنْ قَتَلَهُمْ وَقَتَلُوْهُ یَدْعُوْنَ إِلٰی کِتَابِ اللهِ وَلَيْسُوْا مِنْهُ فِي شَيئٍ مَنْ قَاتَلَهُمْ کَانَ أَوْلٰی بِاللهِ مِنْھُمْ قَالُوْا: یَا رَسُوْلَ اللهِ، مَا سِيْمَاھُمْ؟ قَالَ: التَّحْلِيْقُ۔
وَفِي رِوَایَةِ أَنَسٍ رضي الله عنه : أَنَّ رَسُوْلَ اللهِ ﷺ قَالَ نَحْوَهٗ: سِيْمَاھُمْ التَّحْلِيْقُ وَالتَّسْبِيْدُ۔
رَوَاهُ أَحْمَدُ وَأَبُوْ دَاوُدَ وَاللَّفْظُ لَهٗ وَابْنُ مَاجَہ مُخْتَصْرًا وَالْحَاکِمُ۔

25: أخرجہ أحمد بن حنبل في المسند، 3/ 224، الرقم/ 13362، وأبوداود في السنن، کتاب السنۃ، باب في قتال الخوارج، 4/ 243، الرقم/ 4765، وابن ماجہ في السنن، المقدمۃ، باب في ذکر الخوارج، 1/ 60، الرقم/ 169، والحاکم في المستدرک، 2/ 161، الرقم/ 2649۔

حضرت ابوسعید خدری اور حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہما سے مروی ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: عنقریب میری امت میں اختلاف اور گروہ بندی ہوگی، ایک قوم ایسی ہوگی کہ جس کے لوگ گفتار کے اچھے اور کردار کے برے ہوں گے، قرآن پڑھیں گے جو ان کے گلے سے نہیں اترے گا، وہ دین سے اس طرح خارج ہوجائیں گے، جیسے تیر شکار سے نکل جاتا ہے، اور اس وقت تک واپس نہیں آئیں گے جب تک تیر کمان میں واپس نہ آ جائے وہ ساری مخلوق میں سب سے برے ہوں گے، خوشخبری ہو اسے جو انہیں قتل کرے اور جسے وہ قتل کریں۔ وہ لوگوں کو اللہ سبحانہ وتعالیٰ کی کتاب کی طرف بلائیں گے لیکن اس کے ساتھ ان کا کوئی تعلق نہیں ہو گا ان کا قاتل ان کی نسبت اللہ تعالیٰ کے زیادہ قریب ہو گا، صحابہ کرام نے عرض کیا: یا رسول اللہ! ان کی نشانی کیا ہے؟ آپ ﷺ نے فرمایا: سر منڈوانا۔
ایک روایت میں حضرت انس رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے اسی طرح فرمایا: ان کی نشانی سر منڈانا اور اکثر منڈائے رکھنا ہے۔ ‘‘
اس حدیث کو امام اَحمد، ابو داود نے مذکورہ الفاظ میں، ابن ماجہ نے اختصار سے اور حاکم نے روایت کیا ہے۔

  • Ḥaz̤rat Abū Saʻīd Ḳhudrī aur Ḥaz̤rat Anas bin Mālik raḍiya Allāhu ‘anhu se marwī hai keh Rasūl Allāh ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihī wa-sallam ne farmāyā: ʻanqarīb merī ummat meṅ iḳhtelāf aur guroh-bandī hogī, ek qaum aisī hogī keh jis ke log guftār ke achc̥he aur kirdār ke bure hoṅge, Qur’ān par̥heṅge jo un ke gale se nahīṅ utregā, woh Dīn se is ṭarḥ ḳhārij ho jā’eṅge, jaise tīr shikar se nikal jātā hai, aur us waqt tak wāpas nahīṅ ā’eṅge jab tak tīr kamān meṅ wāpas nah ā jā’e woh sārī maḳhlūq meṅ sab se bure hoṅge, ḳhẉush-ḳhabrī ho use jo unheṅ qatl kare aur jise woh qatl kareṅ. Woh logoṅ ko Allāh subḥānahu wa-Ta‘ālá kī kitāb kī ṭaraf bulā’eṅge lekin us ke sāth un kā ko’ī taʻalluq nahīṅ hogā un kā qātil un kī nisbat Allāh Taʻālá ke ziyādāh qarīb hogā, Ṣaḥāba’e kirām ne ʻarz̤ kiyā: yā Rasūl Allāh! un kī nishānī kyā hai? Āp ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihī wa-sallam ne farmāyā: sar muṅd̥wānā.
    Ek riwāyat meṅ Ḥaz̤rat Anas raḍiya Allāhu ‘anhu se marwī hai keh Rasūl Allāh ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihī wa-sallam ne isī ṭarḥ farmāyā: un kī nishānī sar muṅd̥ānā aur aks̲ar muṅd̥ā’e rakhnā hai.
    Is ḥadīs̲ ko Imām Aḥmad, Abū Dāwūd ne maz̲kūrah alfāẓ meṅ, Ibn Mājah ne iḳhteṣār se aur Ḥākim ne riwāyat kiyā hai.

    [Ṭāhir al-Qādrī fī al-Qawlu al-Ḥasani fī ʻalāmatī al-sāʻaṫi wa-ẓuhūri al-fitan,/62_63, raqam: 25.]
    〰〰