Taleemat e Ameer 69

** تعلیمات امیر (Taleemat e Ameer r.a)
** انسٹھواں حصہ (part-69)

اس بشارت سے امیر کبیر سید قطب الدین محمد
مدنی رحمت اللہ علیہ کو انتہائی خوشی ہوئی۔ چنانچہ آپ اپنے اور اپنے والِد کے مریدوں اور تینوں فرزندوں کے ہمراہ مدینہ منورہ سے غزنی پہونچے۔

ادھر سلطان غزنی کو عالم مثال میں آنحضرت کی آمد کی اور آپ کے ہاتھوں ہی ہندوستان میں پرچم اسلام پھیرنے کی بشارت دے دی گئی تھی۔ لہذا اس نے نہ صرف آپ کے ہمراہ اٹھارہ ہزار فوج اور پیادہ کئے بلکہ آپ سے تعلق مستحکم کرنے کے لئے اپنی دختر شہزادی خنیزہ خاتون کو بتور خدمت آنحضرت کے بڑے فرزند حضرت نظام الدین حسن رحمت اللہ علیہ کے حبالہ عقد میں دے دیا۔

آنحضرت نے کچھ دن غزنی میں قیام کرنے کے بعد ہندوستان کے طرف کوچ کیا اور شہر دہلی تشریف لائیں۔ سلطان قطب الدین ایبک نے آپ کے راہوں میں پلکیں بچھا دیا اور پورے جوش خروش کے ساتھ آپ کا خیر مقدم کیا۔ اس نے آپ کی خدمت و اعانت میں کوئی دقیقہ فروگزاشت نہیں کیا یہاں تک کہ وہ آپ کا مرید ہو گیا۔ چنانچہ سید حامد بخاری سندھی کے ملفوظ میں ہے کہ۔
“حضرت سید قطب الدینؒ حضرت غوث الثقلینؒ کے عم زاد اور حضرت نجم الدین کبریؒ کے خلفاء میں سے تھیں۔ وہ سلطان قطب الدین ایبک کے استدعا پر، جو آنحضرت کے مریدوں میں سے تھا۔ دہلی تشریف لاکر کافروں سے جہاد میں اس کے ممدو معاون ہوئے اور کفار کے قتل اور رونقِ اسلام کو دوبالا کرنے میں انتہائی کوشش کرتے رہیں۔”

📚 ماخذ از کتاب چراغ خضر۔

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s