A Jew and A Muslim

A Jew was a neighbor of a Muslim.  With this Jew  Her Muslim neighbor treated her very well.  It was the habit of this Muslim to say this sentence every once in a while.  By sending Durood Sharif to Hazrat Muhammad (PBUH) every prayer is accepted and every need and purpose is fulfilled.  Whoever meets this Muslim.  The Muslim would recite this sentence to him and whoever sat with him would recite this sentence many times in a meeting with full conviction that by sending Durood Sharif to Hazrat Muhammad (PBUH) every prayer is accepted and every need  The purpose is fulfilled.  This sentence of this Muslim was the belief of his heart.
He hatched a conspiracy to humiliate this Muslim.  And his belief in the effectiveness of “Durood Sharif” should be weakened.  And get rid of the habit of saying this sentence.  The Jew made a gold ring from a goldsmith.  And he urged her to make a ring that no one else had ever made before.  The goldsmith made the ring.
He came to the Muslim with a Jewish ring.  After the incident, the Muslim repeated the same sentence, the same invitation, “By sending Durood-e-Sharif to Hazrat Muhammad (PBUH) every prayer is accepted, every need and purpose is fulfilled”.  The Jew said in his heart,  That’s enough.  You will soon forget this “sentence”.  After a short conversation, the Jew said.  I’m going on a trip.  I have a precious ring.  He wants to go to you in trust.  I’ll take it back to you.  The Muslim said.
No problem, you can leave the ring with me without any worries.  The Jew handed the ring to the Muslim and guessed where the Muslim had placed the ring.  At night he hid in the house of this Muslim and finally found the ring and took it with him.  The next day he went to sea and got into a boat and reached the depths of the sea where he threw the ring.  And then he set off on his journey.  He thought that when I come back.  And if I ask this Muslim for my ring, he will not be able to give it.  Then I will shout at him, accusing him of stealing and betrayal, and defaming him everywhere.  When that Muslim sees so much disgrace in himself, he will think that Durood Sharif did not work and thus he will give up his sentence and his invitation.  But what did this fool know?  What a blessing Durood Sharif is.  The Jew returned the next day.
He went straight to the Muslim and asked for his ring.  The Muslim said, “Sit down with satisfaction. Today, with the blessings of Durood Sharif, I went out hunting after praying in the morning, then I came across a big fish.”  You have come from a journey to eat fish.  The Muslim then engaged his wife in cleaning and cooking fish.  Suddenly his wife screamed and called him.  When he ran away, his wife said that a gold ring had come out of the fish’s stomach.  And that’s exactly what we entrusted to our Jewish neighbor’s ring.  The Muslim hurried to the place where he had placed the Jewish ring.  The ring was not there.  He brought the ring with the belly of the fish to the Jew and as soon as he came, he said: By sending Durood-e-Sharif to Hazrat Muhammad (PBUH) every supplication is accepted and every need is fulfilled.
Then he put the ring on the Jew’s hand.  The Jew’s eyes widened in surprise, his complexion pale and his lips trembled.  He said, “Where did you get this ring?”  The Muslim said.  Where we kept it, we haven’t seen it yet.  But the fish that was hunted today has been found in its stomach.  I don’t understand the matter either but thank God your trust has reached you and Allah Almighty saved me from trouble.  Of course, by sending blessings on Prophet Muhammad (peace be upon him) every supplication is accepted and every need is fulfilled.  The Jew trembled for a while and then burst into tears.  The Muslim was looking at him in amazement.
The Jew said, “Give me a bath.”  After taking a bath, he came and immediately started reciting the Kalima Tayyaba and the Kalima Shahadat.  And the Muslim was reciting the word and the Jew was reciting this great word.  When his condition improved, the Muslim asked him the “reason” and then the new Muslim told the whole story.  The tears of the Muslim began to flow and he said without any pretense that sending Durood Sharif to Hazrat Muhammad (PBUH) accepts every supplication.  And every need is fulfilled.
One last thing, if you ever like a video, comment, event, true story or writing, etc., after reading it, take a little more effort and share it with your friends, make sure that it includes your  Barely a moment will pass but maybe, the writing you share with the pain of this one moment can be instructive for thousands of people. Thank you.

ایک یہودی کسی مسلمان کا پڑوسی تھا۔ اس یہودی کے ساتھ۔ اس کا مسلمان پڑوسی بہت اچھا سلوک کرتا تھا۔ اس مسلمان کی  یہ عادت تھی کہ وہ ہر تھوڑی دیر بعد یہ جملہ کہتاتھا۔ حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم پر درود شریف بھیجنے سے ہر دعا قبول ہوتی ہے اور ہر حاجت اور مراد پوری ہوتی ہے۔ جو کوئی بھی اس مسلمان سے ملتا۔ وہ مسلمان اسے اپنا یہ جملہ ضرور سناتا اور جو بھی اس کے ساتھ بیٹھتا اسے بھی ایک مجلس میں کئی بار یہ جملہ مکمل یقین سے سناتا تھا کہ حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم پر درود شریف بھیجنے سے ہر دعا قبول ہوتی ہے اور ہر حاجت اور مراد پوری ہوتی ہے۔ اس مسلمان کا یہ جملہ اس کے دل کا یقین تھا۔
اس نے ایک سازش تیار کی تاکہ اس مسلمان کو ذلیل و رسوا کیا جائے۔ اور ’’درود شریف‘‘ کی تاثیر پر اس کے یقین کو کمزور کیا جائے۔ اور اس سے یہ جملہ کہنے کی عادت چھڑوائی جائے۔ یہودی نے ایک سنار سے سونے کی ایک انگوٹھی بنوائی۔ اور اسے تاکید کی کہ ایسی انگوٹھی بنائے کہ اس جیسی انگوٹھی پہلے کسی کے لئے نہ بنائی ہو۔ سنار نے انگوٹھی بنا دی۔
وہ یہودی انگوٹھی لے کر مسلمان کے پاس آیا۔ حال احوال کے بعد مسلمان نے اپنا وہی جملہ ، اپنی وہی دعوت دہرائی کہ ’’حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم پر درود شریف بھیجنے سے ہر دعا قبول ہوتی ہے ہر حاجت اور مراد پوری ہوتی ہے‘‘۔ یہودی نے دل میں کہا کہ۔ اب بہت ہو گئی۔ بہت جلد یہ ’’جملہ ‘‘ تم بھول جاؤ گے۔ کچھ دیر بات چیت کے بعد یہودی نے کہا۔ میں سفر پر جا رہا ہوں۔ میری ایک قیمتی انگوٹھی ہے۔ وہ آپ کے پاس امانت رکھ کر جانا چاہتا ہوں۔ واپسی پر آپ سے لے لوں گا۔ مسلمان نے کہا۔
کوئی مسئلہ نہیں آپ بے فکر ہو کر انگوٹھی میرے پاس چھوڑ جائیں۔ یہودی نے وہ انگوٹھی مسلمان کے حوالے کی اور اندازہ لگا لیا کہ مسلمان نے وہ انگوٹھی کہاں رکھی ہے۔ رات کو وہ چھپ کر اس مسلمان کے گھر کودا اور بالآخر انگوٹھی تلاش کر لی اور اپنے ساتھ لے گیا۔ اگلے دن وہ سمندر پر گیا اور ایک کشتی پر بیٹھ کر سمندر کی گہری جگہ پہنچا اور وہاں وہ انگوٹھی پھینک دی۔ اور پھر اپنے سفر پر روانہ ہو گیا۔ اس کا خیال تھا کہ جب واپس آؤں گا۔ اور اس مسلمان سے اپنی انگوٹھی مانگوں گا تو وہ نہیں دے سکے گا۔ تب میں اس پر چوری اور خیانت کا الزام لگا کر خوب چیخوں گا اور ہر جگہ اسے بدنام کروں گا۔ وہ مسلمان جب اپنی اتنی رسوائی دیکھے گا تو اسے خیال ہو گا کہ درود شریف سے کام نہیں بنا اور یوں وہ اپنا جملہ اور اپنی دعوت چھوڑ دے گا ۔ مگر اس نادان کو کیا پتا تھا کہ۔ درود شریف کتنی بڑی نعمت ہے۔ یہودی اگلے دن واپس آ گیا۔
سیدھا اس مسلمان کے پاس گیا اور جاتے ہی اپنی انگوٹھی طلب کی۔ مسلمان نے کہا آپ اطمینان سے بیٹھیں آج درود شریف کی برکت سے میں صبح دعا کر کے شکار کے لئے نکلا تھا تو مجھے ایک بڑی مچھلی ہاتھ لگ گئی۔ آپ سفر سے آئے ہیں وہ مچھلی کھا کر جائیں۔ پھر اس مسلمان نے اپنی بیوی کو مچھلی صاف کرنے اور پکانے پر لگا دیا۔ اچانک اس کی بیوی زور سے چیخی اور اسے بلایا۔ وہ بھاگ کر گیا تو بیوی نے بتایا کہ مچھلی کے پیٹ سے سونے کی انگوٹھی نکلی ہے۔ اور یہ بالکل ویسی ہے جیسی ہم نے اپنے یہودی پڑوسی کی انگوٹھی امانت رکھی تھی۔ وہ مسلمان جلدی سے اس جگہ گیا جہاں اس نے یہودی کی انگوٹھی رکھی تھی۔ انگوٹھی وہاں موجود نہیں تھی۔ وہ مچھلی کے پیٹ والی انگوٹھی یہودی کے پاس لے آیا اور آتے ہی کہا: حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم پر درود شریف بھیجنے سے ہر دعاء قبول ہوتی ہے اور ہر حاجت پوری ہوتی ہے۔
پھر اس نے وہ انگوٹھی یہودی کے ہاتھ پر رکھ دی۔ یہودی کی آنکھیں حیرت سے باہر، رنگ کالا پیلا اور ہونٹ کانپنے لگے۔ اس نے کہا یہ انگوٹھی کہاں سے ملی؟۔ مسلمان نے کہا۔ جہاں ہم نے رکھی تھی وہاں ابھی دیکھی وہاں تو نہیں ملی۔ مگر جو مچھلی آج شکار کی اس کے پیٹ سے مل گئی ہے۔ معاملہ مجھے بھی سمجھ نہیں آ رہا مگر الحمد للہ آپ کی امانت آپ کو پہنچی اور اللہ تعالیٰ نے مجھے پریشانی سے بچا لیا۔ بے شک حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم پر درود بھیجنے سے ہر دعاء قبول ہوتی ہے اور ہر حاجت و مراد پوری ہوتی ہے۔ یہودی تھوڑی دیر کانپتا رہا پھر بلک بلک کر رونے لگا۔ مسلمان اسے حیرانی سے دیکھ رہا تھا۔
یہودی نے کہا مجھے غسل کی جگہ دے دیں۔ غسل کر کے آیا اور فوراً کلمہ طیبہ اور کلمہ شہادت پڑھنے لگا اشھد ان لا الہ الا اللّٰہ وحدہ لاشریک لہ واشھد ان محمد عبدہ ورسولہ وہ بھی رو رہا تھا اور اس کا مسلمان دوست بھی۔ اور مسلمان اسے کلمہ پڑھا رہا تھا اور یہودی یہ عظیم کلمہ پڑھ رہا تھا۔ جب اس کی حالت سنبھلی تو مسلمان نے اس سے ’’وجہ‘‘ پوچھی تب اس نومسلم نے سارا قصہ سنا دیا۔ مسلمان کے آنسو بہنے لگے اور وہ بے ساختہ کہنے لگا حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم پر درودشریف بھیجنے سے ہر دعاء قبول ہوتی ہے ۔ اور ہر حاجت و مراد پوری ہوتی ہے۔
ایک آخری بات عرض کرتا چلوں کے اگر کبھی کوئی ویڈیو، قول، واقعہ،سچی کہانی یا تحریر وغیرہ اچھی لگا کرئے تو مطالعہ کے بعد مزید تھوڑی سے زحمت فرما کر اپنے دوستوں سے بھی شئیر کر لیا کیجئے، یقین کیجئے کہ اس میں آپ کا بمشکل ایک لمحہ صرف ہو گا لیکن ہو سکتا ہے کہ، اس ایک لمحہ کی اٹھائی ہوئی تکلیف سے آپ کی شیئر کردا تحریر ہزاروں لوگوں کے لیے سبق آموز ثابت ہوسکتی ہیں شکریہ.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s