Madine ke moti 143

Hadith on Imam Mahdi AlaihisSalam 2

امام مہدی علیہ السلام کا ظہور اورفضائل
Imam Mahdi ‘Alayh-is-Salam Ka Zahoor Aur Faza’il

فصل یازدہم
امام آخرالزمانں، مہدی الارض والسماء ہوں گے اور ان کے لئے آسمانی و زمینی علامات کا ظہور ہوگا

Gyarhwi’n Fasl
Imame Aakhir-uz-Zamaan ‘Alayh-is-Salam, Mahdi Al-Ardi Wa-Al-Sama’ Honge Aur Un Ke Li’e Aasmaani Wa Zameeni Alaamaat Ka Zahoor Hoga

  1. عن شريک رضي الله عنه قال : بلغني أنه قبل خروج المهدي ينکسف القمر في شهر رمضان مرتين.

حضرت شریک رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ آپ نے فرمایا مجھ تک یہ بات پہنچی ہے کہ (امام) مھدی کے خروج (ظہور) سے پہلے رمضان المبارک کے مہینے میں دو مرتبہ چاند گرھن ہوگا۔

  • Hazrat Sharik RadiyAllahu ‘Anhu Se Marwi Hai Ki Aap Ne Farmaya Mujh Tak Yeh Baat Pahonchi Hai Ki (Imam) Mahdi Ke Khurooj (Zahoor) Se Pehle Ramadan-ul-Mubarak Ke Mahine Me Do Martaba Chaand Grahn Hoga.

    [Suyooti, Al-Hawi Lil-Fatawi, 02 : 82,

Nu’aym Bin Hammad, Al-Fitan, 01 : 229, Raqm : 642,

Tahir-ul-Qadri, Al-Qawl-ul-Mu‘tabar Fi Al-Imam-il-Muntazar, : 61.]
〰〰
Join Karen

Hadith on The Awaited Imām Mahdī (علیہ السلام) 1

The Awaited Imām Mahdī (علیہ السلام)

Section 11: Circumstances Surrounding Imām Mahdī’s Arrival

  • عن سليمان بن عيسى قال: بلغني أنه على يدي المهدي يظهر تابوت السكينة من بحيرة الطبرية حتى يحمل، فيوضع بين يديه بيت المقدس فإذا نظرت إليه اليهود أسلمت إلا قليلا منهم.
  • “Related by Sulaymān ibn ‘Īsā (رضي الله عنهما): I was informed that the Ark of the Covenant will emerge from Tabariyyah Sea through the efforts of Imām Mahdī. It will be placed before him at the Sacred House. When the Jews will see this (Ark), all of them except a few will embrace Islam.”

    Ibn Hammad transmitted it in al-Fitan (1:360#1050); and
    Suyūtī copied it in al-Hāwī lil-fatāwā (2:83).
    〰〰
    Join Karen

Taleemat e Ameer 64

** تعلیمات امیر (Taleemat e Ameer r.a)
** چوسٹھواں حصہ (part-64)

  • حصول علم معرفت (روحانی تربیت) و بیعت خلافت و تفویض غوثیت۔

حضرت سرکار غوث العالمین محبوب ربّانی میر سید قطب الدین محمد مدنی رحمت اللہ علیہ کو آپ کے ماموں حضرت سرکار غوث الاعظم محبوب سبحانی میر موحئ الدین عبدال قادر جیلانی رحمت اللہ علیہ نے بچپن میں ہی کہ جب آپ ۹ سال کے تھیں خرقہ حسنیہ قادریہ اور تاجِ غوثیت سے سرفراز فرمایا۔ پھر آپ کے والد محترم حضرت سرکار میر سید رشید الدین الغزنوی رحمت اللہ علیہ نے آپ کو تمام علوم و فنون سے آراستہ و پیراستہ کیا اور خرقہ حسنیہ قطبیہ کبیریہ سے سرفراز فرمایا۔ پس صاحب “بحر زخار” آپکی شان کمالات میں یوں رقم طراز ہیں کہ۔

“تصرفات قطبیت کے اس معدن، معاملات فردیت کے اس مخزن، تفضیلات نبوی کے مورد و فرزند یعنی قطب وقت میر سید قطب الدین محمد ال کڑویؒ کے حالات جو سید عبدالقادر گیلانیؒ کے نسب سے تھیں
انھوں نے خرقہ خلافت دست بدست اپنے بزرگ آباۓ کرام سے پایا تھا۔ وہ ظاہری کرامتوں اور روشن خوارق کے مالک، خاص و عام کے ممدوح، بےشک و شبہ اپنے زمانے کے صاحب کمال، راہ دین اسلام کے مجاہد، انوار ربّ العالمین کے مشاہد، آل غوث الصمدانی کے تسبیح کے دانوں کے امام اور عاشقانے ربانی کے پیشوا تھیں”

📚 ماخذ از کتاب چراغ خضر۔