Dargah Sharif Pir Jhando

WhatsApp Image 2021-08-21 at 12.50.27 AM

Dargah Sharif Pir Jhando) Pir Sain Syed Ehsanullah Shah Rashdi (may Allah have mercy on him) alias Pir Sain  Sunnat migrated and laid the foundation of this village. Taluka New Saeedabad in Sindh Province of Pakistan. The village is historically known for its Islamic movement, which used to be a well-established Islamic institute in the region for Islamic religious and educational services. Rashdi family of Dargah Sharif Pir Jhando is descendant of Pirsain Syed Muhammad Rashid Shah (known as Pirsain Roze dhani)

Current Spritual Leader and Head of Dargah Sharif Pir Jhando Clan Pir Sain JhandyWaro is Pir Sain Sayed Muhammad Yaseen Shah Rashdi (7th) Sevent Known as Sahib-Ul-Alam-Asbe) S/O Pir Sain Sayed Mohibullah Shah Rashdi The family has contributed in upbringing Islamic learning and spirituality with the support of various Islamic scholars known as Sayed Badiudin Shah Rashdi.

After the death of Syed Rushdullah  Shah Rashdi (may Allah have mercy on him), his Son Syed Fazullah Shah alias Pir Syed Ehsanullah Shah Rashdi was appointed as the (5th) Fifth Pir of Jhando of his family. Widely known as (Pir Sain Sunnat Dhani)

was born in the Village Pir Jhando which is situated near New Saeedabad Sindh. He was brought up in a spiritually pure environment of his home. He received his initial education form Madaris Dar ul Rashad , which was established by his father, at Pir Jhando.

( Genealogy Of Pir Sain Sayed Ahsanullah Shah Rashdi (5th Pif of Jhando)

نسب نامہ
سید احسان اللہ شاہ راشدی بن سید رشد اللہ شاہ راشدی بن سید رشید الدین شاہ راشدی بن سید محمد یاسین شاہ راشدی بن سید محمد راشد شاہ بن سید محمد بقا شاہ رحمۃ اللہ علیھم اور پھر سیدنا حسین ابن علی رضی اللہ عنھما تک۔ آپ کے ناناسید فضل اللہ شاہ راشدی رحمۃ اللہ علیہ تھے جن کا سلسلہ نسب سید محمد یاسین شاہ بن سید محمد راشد شاہ تک جاملتا ہے۔ اس طرح آپ دودھیالی و ننھیالی “راشدی حسینی سید” ہیں۔

He developed a tremendous potential as a teacher and preacher. He, accordingly, took these two tasks with a great sense of responsibility and enthusiasm. One of the key objectives of his life was to practice and promote the shariah that was brought to us by our beloved Master Muhammad PBUH. He enjoyed a special attachment with the library and Madrisah Dar-ur-Rahad.

The library which enjoyed heights of progress in the times of Pir Syed Rushdullah Shah Rashdi faced hardships in subsequent periods. But, Pir Syed Ahsanullah Shah looked after the library with a great care and responsibility. He uplifted its status and prestigue by adding a number of useful titles on the subjects of Tasfeer, Hadith, Asma-ur-Rijal, History and other fields of Knowledge. Since he inherited the love of Hadith from his father and developed it further under the guidance of noble Imams, he collected and spent a huge amount of funds to gather relevant manuscripts from Makkah, Madinah, Iraq, Egypt, Syria, India and many other countries. Due to this love and attachment with the Sunnah of Rasool Allah PBUH. He was known as the Man of Sunnah. Practicing the Sunnah was an integral ingredient of his body and soul as if it was infused in his blood.  In a very short timeframe, he was able to make significant educational, spiritual and theological achievements, (Someone did black magic on him He departed from this world at the young age of 45.)

Pir Syed Mohibullah Shah Rashdi Pir of Jhando VI (6th) Known as Sahib al-Aalim)

Syed Ehsanullah Shah Rashdi, Allah Almighty had given him three sons. After his death, his eldest son Pir Syed Mohibullah Shah Rashdi was promoted to the position of family Sajjada Naseen as Pir  of Jhanda VI. He was born in Goth P. Jhando, New Saeedabad, Matiari District, Sindh on October 2, 1921, on 29 Muharram 1325 AH. He received his early education at Dar-ul-Rashad Madrassa in his village under the supervision of his father Syed Ahsanullah Shah Rashdi, He also graduated from Sindh University, Jamshoro, Hyderabad did MA in Arabic and Department of Islamic Culture and Interfaith. After that he engaged in teaching and preaching. Along with Madrasa Dar-ul-Rashad, he established Intel College which was run under Sindh University for eight years. You, like your family’s forefathers, loved to collect books. Participated in the expansion and development of his family library. He spent a lot of money on rare and rare books and added thousands of manuscripts and printed books of various sciences and arts to his ancestral library. He traveled to Amritsar and Delhi to get books. He spent much of his time searching for books on various occasions during his travels and pilgrimages to Istanbul, Turkey. Therefore, your library Al-Maktab Al-Alamiya is still recognized as a treasure trove of thousands of publications and manuscripts. In addition to collecting books, he was also engaged in regular reading and research. Water is the science of commentary, hadith, jurisprudence, the art of men, philosophy, history He had a keen eye for Arabic, literature and other sciences. Along with the art of oratory and teaching, Allah Almighty had given you a special queen of writing and
composing. There was a heartfelt attachment to the science of hadith. He has authored more than 60 books in Arabic, Urdu and Sindhi. Apart from these, he has written many research and scholarly articles, articles and fatwas.

He is Mohibullah Ibn Ehsanullah Ibn Rushdullah. His name was chosen by his Grandfather Sayed Rushdullah Shah. His kunyah is Pir Sayed Muhammad Yaseen Shah Rashdi, his kunyah used to be Abu Rooh after the name of his older son Rooh however he died in a car accident when he was 13 or 14 and thereafter the Pir sain changed his kunyah to Pir Sain Sayed Muhammad Yaseen Shah Rashdi (7th Pir of Jhando)after the name of his second eldest son.

Syed Mohibullah Shah Rashdi was given  four sons by Allah Almighty . After his death, his eldest son

Syed Muhammad Yasin Shah Rashdi become Sajjada Nasheen of Dargah Sharif Pir Jhando,

(7th)Pir Sain Syed Mohammad Yaseen Shah Rashdi Hafizullah Pir of Jhando VII:
Known as Pir Sain Dada Sain

After the death of Pir Sain Syed Mohibullah Shah Rashdi Pir of Jhando VI, his eldest son Pir Sain Syed Muhammad Yaseen Shah Rashdi become Sajjada Nasheen of Pir Jhando branch of Rashdi family according to family customs and traditions on 22 Shaban 1415 AH by Allama Syed Badiuddin Shah Rashdi and other dignitaries, The family dignitaries and devotees have unanimously appointed Pir of Jhanda as the seventh Sajjada Nasheen and the present Sajjada Nasheen of the Pir Jhanda family.

(Genealogy of Pir Sayed Muhammad Yaseen Shah Rashdi (7th Pir of Jhando )
نسب نامہ
سيد محمد ياسين شاه رشدي بن سيد محب الله شاه رشدي بن سيد احسان الله شاه رشدي بن سید رشد اللہ شاہ راشدی بن سید رشید الدین شاہ راشدی بن سید محمد یاسین شاہ راشدی بن سید محمد راشد شاہ بن سید محمد بقا شاہ رحمۃ اللہ علیھم اور پھر سیدنا حسین ابن علی رضی اللہ عنھ  تک۔.. آپ کے ناناسيد غوس محمد شاه رشدي تھے جن کا سلسلہ نسب سید محمد یاسین شاہ بن سید محمد راشد شاہ تک جاملتا ہے۔ اس طرح آپ دودھیالی و ننھیالی
“راشدی حسینی سید” ہیں۔

WhatsApp Image 2021-08-21 at 12.50.28 AM

(Pirs of Dargah Sharif Pir Jhando)

(7th)Pir Sain Sayyid Muhammad Yaseen Shah Rashdi
(6th)Pir Sain Sayyed Mohibullah Shah Rashdi
(5th)Pir Sain Sayyed Ahsanullah Shah Rashdi
(4th)Pir Sain Sayyed Rushdullah Shah Rashdi
(3rd)Pir Sain Sayyed Rasheedudin shah Rashdi
(2nd)Sheheed Pir Sain Sayed Fazullah Shah Rashdi
(1st)Pir Sain Sayyed Muhammad Yaseen Shah Rashdi)
………….

WhatsApp Image 2021-08-21 at 1.14.52 AM

Sayed Rushdullah Shah Rashdi, the Pir of Jhando, died in 1922, there was a dispute between two of his sons over the gadi and its property. The litigation climbed the legal ladder until it eventually reached the Privy Council in London. With no alternatives left, the unsuccessful litigant was forced to accept the failure of his attempt to become sajjada nasheen however the two halves of the family remained estranged for years. The ability to appeal to a higher authority provided a ‘safety-net’ in the event of initial failure as it was often possible to reach a more favourable judgement in a different court room. The appeals procedure was an expensive one but, pirs with the backing of their murids were well equipped to make the most of it. Their overall acceptance of the processes of British law was also highlighted by their willingness to involve themselves in other aspects of the legal system such as by becoming honorary magistrates. Although this formed part of the overall structure of British patronage, it underlined the fact that pirs had developed a sufficiently healthy respect for the process of law for their appointments not to be regarded as impractical or even farcical, and by the 1940s, many leading pirs.

The British in Sind constructed a system of political control which hinged on the cooperation of landed elites, of whom pirs made up a sizeable proportion. These elites looked after local affairs and represented local interests: they were ‘the interpreters between Government and the general body of the population’. Just as the authorities relied on collaboration, local powerholders needed the economic security and social status which the system gave them. In operating and taking advantage of the system, both sides were prepared to be pragmatic: officials used their discretion when applying the rules, while pirs rarely hesitated to take advantage of new ways of increasing their power and prestige. The very section of the elite which in theory, had most to lose from being too closely associated with the administration, found that there was much to gain from maintaining a good ‘working relationship’ with their new ‘infidel’ rulers. Many of them managed to retain an aura of spiritual aloofness at the same time as making the most of the benefits of cooperation. In the long run, their willingness to participate in the British system of political control helped endow pir families with the resilience needed to cope with colonial rule.

(Pir Sain Sayed Ahsanullah Shah Rashdi Pir JhandeWaro) had majority support of his murids followers/Family because he was Real and both his father and mother were Sayyid Rashdi) Then Pir Sayed Sain Ahsanullah Shah Rashdi bin Pir Rushdullah Shah Rashdi, he established his own village nearby to Pir Jhando which called dargah sharif Pir Jhando. Because in gadis of pir pagara and pir Jhandewara (descendant of pir Rashid shah Rozey dhani) and Pir Ahsanullah Shah rashdi was only one son of pir Rushdullah Shah Rashdi which was from daddi potti real Sayed and Rashdi. Another his sons wasn’t from daddi poti, so murids chose Pir Ahsanullah Shah Rashdi well known as Pir sain sunnat dhani.

(Note Pir Sain ahsanullah Shah rashdi he won case in british court*
then his munchi (secretary-clerk) stole attorney power and sold to his other brother * (because in old times munchies (secretry-Clerk) had attorney power)
After that Pir Sain ahsanullah Shah rashdi known as sunnat dhani migrated and laid foundation of Dargah Sharif Pir Jhando

img-20210716-wa00037080274896080112848.jpg

SILSILA of PIR JHANDEWARAS (MYSTICAL SEQUENCE) Direct Descendant 

PIR SAIN SYED MUHAMMAD YASEEN SHAH RASHDI

(PRESENT PIR JHANDEWARO)

S/O

PIR SAIN SAYED MOHIBULLAH SHAH RASHDI

(R.U.H) (LAQUB SHAMSUL ULAMA)

S/O

PIR SAIN  SAYED EHSANULLAH SHAH RASHDI (R.U.H)  (LAQUB SUNNAT DHANI)

S/O

PIR SAIN SAYED RUSHDULLAH SHAH RASHDI (R.U.H) (URF KHILAFAT WARA)

S/O

PIR SAIN SAYED RASHEEDUDIN SHAH RASHDI (R.U.H) (URF BAYET WARA)

S/O

PIR SAYED SAIN MUHAMMAD YASEEN SHAH RASHDI I (R.U.H) (LAQUB JAYN WARA, JHANDE DHANI)

S/O

IMAM-UL-ARIFEEN MUJADID AL-ASAR HAZRAT SYED MUHAMMAD RASHID SHAH (URF ROZE DHANI)

S/O

SHAMS-UL-ARIFEEN HAZART SYED MUHAMMAD BAQA SHAH (R.U.H)

S/O

HAZRAT PIR SYED IMAM SHAH (R.U.H)

S/O

HAZRAT PIR FATEH MUHAMMAD SHAH (R.U.H)

S/O

HAZRAT PIR SYED SHAKRULLAH SHAH (R.H.U)

S/O

HAZRAT PIR SYED USMAN SHAH (R.U.H)

S/O

HAZRAT PIR SYED KHUDA BUX URF KHTAN SHAH (R.U.H)

S/O

HAZRAT PIR SYED SANJAR SHAH (R.U.H)

S/O

HAZRAT PIR SYED MOHAMMAD YOUSUF SHAH URF BOLAN SHAH (R.U.H)

S/O

HAZRAT PIR SYED HUSSAIN SHAH (R.U.H)

S/O

HAZRAT PIR SYED MEER ALI SHAH (R.U.H)

S/O

HAZRAT PIR SYED NASIR-U-DIN SHAH (R.U.H)

S/O

HAZRAT PIR SYED ABBAS SHAH (R.U.H)

S/O

HAZRAT PIR SYED FAZALULLAH SHAH (R.U.H)

S/O

HAZRAT SYED SHAHAB-U-DIN SHAH (R.U.H)

S/O

HAZRAT SYED BAHA-U-DIN SHAH (R.U.H)

S/O

HAZRAT SYED MAHMOOD SHAH (R.U.H)

S/O

HAZRAT MUHAMMAD SHAH (R.U.H)

S/O

HAZRAT SYED HUSSAIN SHAH (R.U.H)

S/O

HAZRAT SYED ABBAS SHAH URF CHAKHAN SHAH (R.U.H)

S/O

HAZRAT ALI MAKKI SHAH “LAKIYARI” (R.U.H)

S/O

HAZRAT SYED ABBAS SHAH (R.U.H)

S/O

HAZRAT SYED ZAID SHAH (R.U.H)

S/O

HAZRAT SYED HAMZA SHAH (R.U.H)

S/O

HAZRAT SYED ASADULLAH SHAH (R.U.H)

S/O

HAZRAT SYED UMAR SHAH (R.U.H)

S/O

HAZRAT SYED HAROON SHAH (R.U.H)

S/O

HAZRAT SYED ABDULLAH SHAH (R.U.H)

S/O

HAZRAT SYED HUSSAIN ALI SHAH (R.U.H)

S/O

HAZRAT SYED IMAM ALI RAZA (R.U.H)

S/O

HAZRAT IMAM MOOSA KAZIM (R.U.H)

S/O

HAZRAT IMAM JAFAR SADIQ (R.U.H)

S/O

HAZRAT IMAM BAQAR (R.U.H)

S/O

HAZRAT IMAM ZAIN-UL-ABIDEEN (R.U.H) 

S/O

HAZRAT SYED-UL-SHUHDA IMAM HUSSAIN (R.U.H)

S/O

AMEER-UL-MONINEEN BAB-E-MADINNAHT-UL-ILLAM SYEDNA 

HAZRAT ALI SHEER-E-KHUDA (K.A.W
………………………………………………………

through the example of two brothers from the Pir Jhando and the Pir Pagaro families in Sindh

The ancestors of the Al-Rashdi brothers, Sayed Laki Shah Sadar migrated from a place known as Kazmain to Dadu, in Sindh. Syed Muhammad Rashid Shah Rashdi from this family was a well-known Alim of his time. He is considered the progenitor of the Pir Jhando and the Pir Pagaro family. The Rashidi family divided in two parts on the question of succession after the death of Pir Rashid. The title of Pir Jhando was given to the elder brother, Syed Muhammad Yaseen Shah, who inherited the flag. The turban and succession, meanwhile, were passed on to younger brother Syed Sabghatullah Shah, who was called Pir Pagaro. Thereafter, Pir Yassen Shah migrated from Pir Jo Goth in Khairpur Mirs and settled in the Dargah Sharif Pir Jhando village.,

WhatsApp Image 2021-08-21 at 1.14.52 AM (1)

درگاہ شریف پیر جھنڈو
( درگاہ شریف پیر جھنڈو)  سید احسان اللہ شاہ راشدی رحمہ اللہ المعروف پیر سائیں سنت دھانی والے نے ہجرت کرکے اس گاؤں کی بنیاد رکھی تھی۔
پاکستان کے صوبہ سندھ میں تعلقہ نیو سعید آباد۔  یہ گاؤں تاریخی طور پر اپنی اسلامی تحریک کے لئے جانا جاتا ہے ، جو اس خطے میں اسلامی مذہبی اور تعلیمی خدمات کے لئے ایک قائم اسلامی انسٹی ٹیوٹ ہوا کرتا تھا۔  درگاہ شریف پیر جھنڈو کا راشدی خاندان پیر سائیں سید محمد راشد شاہ پیرسائیں روزے دانی کے نام سے طرف منسوب ہے۔ ان کا نسب چھتیس پشتوں کے بعد امیر المؤمنین سیدنا علی ابن ابی طالب رضی اللہ عنہ سے جا ملتا ہے،
موجودہ روحانی پیشوا اور درگاہ شریف پیر جھنڈو خاندان کے سربراہ پیر سائیں جھنڈی وڑو سید محمد یاسین شاہ راشدی ہیں (7 ویں) صاحب ال علم – ایس بی کے نام سے جانے جاتے ہیں) سید محب اللہ شاہ راشدی نے اس کی پرورش میں حصہ لیا ہے  اسلامی تعلیم اور روحانیت کو مختلف اسلامی اسکالرز کی تائید کے ساتھ جو سید بدیع الدین شاہ راشدی کے نام سے جانا جاتا ہے
سندھ کا بہت مشہور راشدی خاندان جو سید محمد راشد روضے دھنی رحمہ اللہ کی طرف منسوب ہے۔ ان کا نسب چھتیس پشتوں کے بعد امیر المؤمنین سیدنا علی ابن ابی طالب رضی اللہ عنہ سے جا ملتا ہے، ان کے جد اعلی سید علی مکی خلافت بنو عباس کے زمانے میں اشاعت اسلام اور تبلیغ دین کی غرض سے سندھ میں وارد ہوئے تھے۔ پیر جھنڈو کی وجہ تسمیہ سید محمد یاسین شاہ راشدی رحمہ اللہ صاحب العَلَمُ الأول کی طرف منسوب ہے۔ یہ سید محمد راشد روضے دھنی کے دوسرے نمبر  کے فرزند تھے، حضرت روضے دھنی رحمہ اللہ نے ان کو اعلاء کلمۃ اللہ، جہاد فی سبیل اللہ اور اسلام کی سربلندی کے لیے ایک عَلَم عطا فرمایا تھا، اس وجہ سے ان کو پیر جھنڈو (صاحب العَلَم الأول ) کہا جاتا تھا۔ یہ چھوٹا گاؤں بھی اسی نسبت سے مشہور ہے۔ یہ جھنڈا، ان کے خاندان میں محفوظ ہے۔ یہ خاندان علمی ہے اس وجہ سے کتابیں اہل علم کا ورثہ ہیں۔
حضرت سید محمد یاسین صاحب العلم الاوّل کے حصے میں بھی کچھ کتابیں آئی تھیں، جس کی حفاظت ان کے جانشین سید رشید الدین راشدی صاحب نے کی، لیکن ترقی اور عروج سید رشد اللہ شاہ راشدی صاحب رح نے بخشا، انہوں نے 1319 میں مدرسہ دار الارشاد کی بنیاد رکھی اور ساتھ میں عظیم لائبریری کی بھی داغ بیل ڈالی۔ مدرسہ دار الارشاد کی بنیاد عظیم مقاصد کے خاطر رکھی گئی تھی، پیر رشد اللہ صاحب نے امام انقلاب مولانا عبيد اللہ سندھی کے مشورے سے اس مدرسہ کا آغاز فرمایا اور مولانا سندھی صاحب امروٹ شریف کو الوداع کہہ کر سید رشد اللہ راشدی صاحب کی دعوت پر پیر جھنڈو تشریف لائے، اور عظیم مقاصد کے حصول کے لیے کام شروع کیا، یہ ادارہ محض رسمی ادارہ نہیں تھا بلکہ اپنے وجود میں ایک تحریک اور انجمن تھا۔ ان کے مقاصد میں اہم مقصد یہ تھا کہ حالات حاضرہ کے ہم آہنگ ایسے افراد پیدا کرنا جو معاشرے کی ہر ضرورت پوری کرسکیں اور ادارے میں اپنا کردار ادا کرسکیں، لیکن “ہوتا وہی ہے جو منظور خدا ہو”۔
پیر جھنڈو کے سجادہ نشین۔
1. سید محمد یاسین شاہ راشدی
2 سید فضل اللہ شاہ راشدی
3 سید رشید الدین شاہ راشدی
4 سید رشداللہ شاہ راشدی
5 سید احسان اللہ شاہ راشدی
6 سید محب اللہ شاہ راشدی
7 سید محمد یاسین شاہ راشدی,
…..
پیر جھنڈو کی لائبریری۔
دوسری جانب ان کی لائبریری کا چرچا بھی دنیا بھر میں تھا، ایشیاء کی دوسری بڑی لائبریری تھی۔ حیدرآباد دکن، لکھنؤ عرب دنیا سمیت بڑے جبال العلم حضرات یہاں استفادے کی غرض سے تشریف لاتے رہتے تھے۔
پیر رشداللہ شاہ راشدی صاحب کا کتب بینی اور کتابیں جمع کرنے کا شوق لائق تقلید اور قابل رشک تھا۔ ان کو جیسے ہی کسی کتاب کے بارے میں پتہ چلتا تھا تو یہ پہلے کتاب حاصل کرنے کی کوشش کرتے، اگر کتاب نہیں ملتی تو بہترین کاتب سے یہ کتاب نقل کرواکے اپنے مکتبے کی زینت بناتے، اس طرح پیر صاحب نے اپنے مکتبے میں ہزاروں نادر کتابیں اور مخطوطات جمع فرمائے۔
ایک مرتبہ سعودی عرب تشریف لے گئے تو امام شوکانی کی کتاب “ارشاد الفحول” خریدنا  چاہی ،تو مالک نے دوسو ریال قیمت لگائی۔ حالانکہ یہ کتاب چھپنے کے بعد دو روپے میں فروخت ہوتی تھی، پیر صاحب نے بغیر کسی چوں وچراں کے بھاری  قیمت ادا کرکے کتاب حاصل کی، پھر وہاں اسماء الرجال پر ایک کتاب پسند آئی تو قیمت معلوم کی تو مالک نے کہا کہ فی صفحہ ایک روپیہ لوں گا، جب اوراق گنے گئے تو سو صفحات پر مشتمل تھی تو فورا ً سو روپیہ ادا کرکے کتاب حاصل کی۔
اس عظیم لائبریری اور مدرسہ کے بارے میں محقق عالم دین مولانا غلام مصطفی قاسمی صاحب رقم طراز ہیں کہ “
پیر رشد اللہ صاحب اپنے وقت کے بہت بڑے مفسر اور محدث تھے۔ آپ نے رجال طحاوی پر عربی میں ایک عالمانہ کتاب لکھی ہے، جس کو علماء دیوبند نے دیوبند سے شائع کیا، اور بڑے پائے کی کتاب مانی جاتی تھی۔ آپ نے 1319 میں ایک مدرسہ اور لائبریری کی بنیاد رکھی، یہ مدرسہ آگے چل کر سندھ میں دینی علوم کی عظیم درسگاہ ثابت ہوا، جہاں برصغیر کے نامور علماء کرام، شیخ الہند مولانا محمود حسن دیوبندی، مولانا سید محمد انور شاہ کشمیری، مولانا اشرف تھانوی رحمھم اللہ اور دوسرے اکابر تشریف لاتے رہتے تھے۔ کتب خانہ کے لیے کتابیں جمع ہونا شروع ہوگئیں، دنیا کے عظیم عالم مخدوم محمد ہاشم ٹھٹوی کی کتابیں بھی لاکر اس میں جمع کی گئیں۔ اس مکتبے کی دوسری بڑی خصوصیت یہ ہے کہ علماء سندھ کی عربی، فارسی اور سندھی تصانیف کا یہاں بڑا ذخیرہ جمع ہے۔ مرکز دائرۃ المعارف حیدرآباد اور دیوبند کے بزرگ یہاں سے کتابیں نقل کرواتے تھے۔
جاری ہے۔
“ یہ کتب خانہ پیر جھنڈو شریف واقع ضلع مٹیاری میں ہے پیر صاحب نے یہ کتب خانہ چودھویں صدی ہجری کی ابتداء میں قائم کیا تھا ۔ انہوں نے اس کتب خانہ پر بے پناہ روپیہ خرچ کیا لندن کی لائبریری انڈیا آفس سے کتابوں کی فوٹو کاپیاں منگوائیں ۔ ترکی اور مصر کے کتب خانوں سے نایاب کتابوں کی نقلیں اپنے اخراجات پر کاتب بھیج کر کرائیں ۔ قدیم کتب خانے گرانما یہ سر مایہ سے خرید کر شامل کیے اور اس طرح اس کتب خانہ میں نوادرات کا ایک ذخیرہ جمع کیا ۔” (سہ ماہی “ الزبیر “( بہاول پور ) 1967ء: 202) سید رشد اللہ کی وفات کے بعد ان کا بیش قیمت کتب خانہ جو تقریباً 25 ہزار کتب پر مشتمل تھا ان کے دو نوں صاحبزادوں سید ضیاء الدین شاہ اور سید احسان اللہ شاہ میں برابر تقسیم ہو گیا ۔پیر ضیاء الدین شاہ کے صاحبزادے پیر وہب اللہ شاہ نے اپنے حصے میں آنے والی کتابیں 1990ء میں کراچی نیشنل میوزیم کو فروخت کر دی تھیں ۔
اس کے بر عکس سید احسان اللہ شاہ کا کتب خانہ روز افزوں ترقی پذیر رہا ۔انہیں کتابوں کی تلاش و جستجو کا شوق وراثت میں منتقل ہو ا تھا ۔ان کے بعد ان کا کتب خانہ ان کے دونوں صاحبزادوں سید محب اللہ شاہ راشدی اور سید بدیع الدین شاہ راشدی میں تقسیم ہوا ۔ یہ دونوں ہی حامل علم و فضیلت تھے۔ کتابوں سے ان کے بے پناہ شغف نے دونوں حصوں کو عظیم الشان کتب خانے میں بدل دیا ۔گو اب دونوں ہی اپنے خالق کے جوار رحمت میں جا چکے ہیں تاہم ان کا کتب خانہ آج بھی شائقین علم کے لیے استفادے کا اہم مر کز ہے ۔ان کے اخلاف نے شائقین کتب کے لیے اپنے گراں قدر کتب خانے کے فیض کو عام کر رکھا ہے ۔جز اھم اللہ تعالیٰ کتب خا نہ راشدی کے متعلق حافظ محمد نعیم صاحب (کراچی) کا ایک تفصیلی مضمون  ہفت روزہ الاعتصام ( لاہور)میں طباعت پذیر ہو چکا ہے ، یہ مضمون تین اقساط پر محتوی ہے اور نہایت قیمتی معلومات پر مشتمل ہے
سید ابو تراب رشد اللہ شاہ کے دو صاحبزادے تھے ، بڑے صاحبزادے سید ضیاء الدین شاہ 1304ھ میں پیدا ہو ئے انہوں نے علم کی تکمیل “ مدرسہ دار الرشاد “ میں کی، ان کے جلسہ فراغت میں کبار علماء شریک ہو ئے محدث یمن شیخ حسین بن محسن یمانی نے جلسے کی صدارت کی ۔
سید ابو تراب رشد اللہ کے چھوٹے صاحبزادے سید احسان اللہ شاہ المعروف بہ پیر صاحب سنت والے 27 رجب 1313ھ میں پیدا ہو ئے۔ علم کی تکمیل مدرسہ دارالرشاد میں کی ۔کتابوں کے شائق ہی نہیں بلکہ حریص تھے ۔ نادر قلمی کتابوں کے حصول میں ہر دم کوشاں رہتے ۔ محدث خطیب بغدای کی “تاریخ بغداد” خدیومصر کے  کتب خانہ سے بذریعہ فوٹو نقل کروائی تھی ، جس پر ایک سو پائونڈ خرچ ہو اتھا ۔(ملاحظہ ہو :  ہفت روزہ “اہل حدیث “ (امرتسر)  :16 مارچ 1928ء)
علوم دینیہ کے جامع اور احیائے سنن میں بہت زیادہ ساعی تھے ۔علم رجا ل پر خاص نظر تھی ۔ بر صغیر سے باہر کے اہل علم سے بھی کتابوں کے سلسلے میں خط و کتابت رہتی تھی ، سلطان ابن سعود سے بھی خاص تعلق تھا ۔ سید احسان اللہ نے صرف 45 بر س کی عمر میں 15 شعبان 1358ھ / 13 اکتوبر 1938ء کو وفات پائی ۔علامہ سید سلیمان ندوی موصوف سے متعلق اپنے تاثراتی مضمون میں لکھتے ہیں :
“ علمی حلقوں میں یہ خبر غم و افسوس کے ساتھ سنی جائے گی کہ پیر جھنڈا گوٹھ ضلع مٹیاری سندھ کے مشہور عالم پیر احسان اللہ شاہ جو قلمی کتابوں کے بڑے عاشق تھے ۔ چوالیس 44 برس کی عمر میں 13 اکتوبر 1938ء کو اس دنیا سے چل بسے۔ مرحوم حدیث و رجال کے بڑے عالم تھے۔ ان کے شوق کا یہ عالم تھا کہ مشرق و مغرب ،مصر و شام ، عرب و قسطنطنیہ کے کتب خانوں ان کے کاتب و ناسخ نئی نئی قلمی کتابوں نقل پر مامور رہتے تھے ۔مرحوم ایک خانقاہ کے سجادہ نشیں اورطریق سلف کے متبع اور علم وعمل دو نوں میں ممتاز تھے ۔اللہ تعالیٰ مرحوم پر اپنے انوار رحمت کی بارش فر مائے ۔” (یاد رفتگاں : 186)
………
Rashdi Family
Sindh ‘s Rashdi family are more services over politics and academics. While this family gave birth to influential personalities like Syed Pir Rushdullah Shah Rashdi Known as Pir Of Khilafat sindh, Pir Syed Ahsanullah Shah Rashdi, Syed Hussamuddin Shah Rashdi and Pir Ali Muhammad Rashdi whose knowledge and literature enlightened the world, there were freedom fighters like Syed Pir Sibghatullah Shah Rashdi who fought against the British rule. Armed war for what is known as Hur guerrilla warfare.
In the subcontinent, the “Rashdi Sadat family”, which is famous in the fields of wisdom, spirituality, politics, history, literature and other aspects of life, does not really need any introduction. In three centuries,
سندھ کے راشدی خاندان کی سیاست اور علم و ادب کے حوالے بہت زیادہ خدمات ہیں۔ جہاں اس خانوادے میں حسام الدین شاہ راشدی اور پیر علی محمد راشدی جیسی بابغۂ روزگار شخصیات پیدا ہوئیں جن کے علم و ادب کے چراغ سے ایک دنیا منور ہے وہیں صبغت اللہ شاہ راشدی جیسے تحریک آزادی کے مجاہد پیدا ہوئے جنہوں نے انگریز حکومت کے خلاف آزادی کے لیے مسلح جنگ کی جسے حُر گوریلا جنگ کے نام سے یاد کیا جاتا ہے۔
برصغیر میں علم حکمت روحانیت سیاست تاریخ ادب و زندگی کےدیگر شعبوں میں شہرت رکھنے والا “راشدی سادات خاندان ” حقیقت میں کسی تعارف کا محتاج نہیں اس خاندان نے تین صدیوں میں دنیا کو روحانیت کے علمبردار،حکیم،عالم،محقق،تاریخدان،محدث ،مصنف،شاعر و سیاستدانوں کا اک مکمل باب دیا ہے اس خاندان کے جد اعلیٰ حضرت امام العصر پیر شہید سید محمد بقا شاہ لکیاری قدس سرہ ہیں جبکہ اس خاندان کے مؤرث اعلیٰ تیرہویں صدی ہجری کے مجدد امام العارفین پیر سائیں سید محمد راشد شاہ لکیاری المعروف حضرت روزے دہنی قدس سرہ ہیں آپ ہی کے نام نامی اسم گرامی “راشد” کی نسبت سے سادات کے اس گھرانے کو “راشدی سادات”کہا جاتا ہے، ~راشدی لکیاری خاندان: سندھ میں لکیاری سادات کا گھرانہ قدیم وقت سے مقیم ہے اس خاندان کے مؤرث اعلیٰ حضرت سید شاہ علی مکی اول لکیاری ہیں جوکہ عراق سے ہجرت کرکے سندھ میں تیسری صدی ہجری میں وارد ہوئے آپ نے سندھ کے شہر سیوستان موجودہ سیہون شریف کے قریب اک پہاڑ کے دامن میں رہائش اختیار کی وہاں سے لوگوں کی گزرگاہ تھی جس کو سندھی زبان میں ‘لک’ کہا جاتا ہے،وہ جگہ آپ کی نسبت سے ‘لک علوی’ کے نام سے موصوف ہوئی اور بعد میں آپکی اولاد کو “لکیاری سید”کہا جانے لگا حضرت شاہ علی مکی رحمت اللہ علیہ کو اولاد میں چار فرزند تولد ہوئے
1سید محمد شاہ
2سید برخیہ شاہ
3سید مراد شاہ
4سید چھکن شاہ
آپکے چاروں فرزندان کی اولاد کو لکیاری کہا جاتا ہے سندھ و ہند کے مشہور بزرگ حضرت محمداحمد شاہ صدر الدین لکیاری المعروف لکی شاہ صدر آپ ہی کے بڑے فرزند حضرت سید محمد شاہ لکیاری کی اولاد میں سے ہیں (حضرت شاھ صدر قدس سرہ کی بارگاھ میں سلطان الہند خواجہ غریب نواز اپنے مرشد حضرت خواجہ عثمان ہرونی کی معیت میں حاضرہوئےتھے انکے علاوہ حضرت لال شھباز قلندر حضرت غوث العالمین غوث بھاؤالحق ملتانی حضرت بابا فریدالدین گنج شکر اور حضرت جلال الدین بخاری سرخ پوش اچوی رحمہم اللہ اجمعین بھی شاھ صدر قدس سرہ کی بارگاھ میں مؤدبانہ حاضریاں لگاتے رہے ہیں) جبکہ آپکے آخری فرزند حضرت سید شاہ چھکن کی اولاد میں سے حضرت پیر شہید سید محمد بقا شاہ لکیاری رحمت اللہ علیہ ہیں جوکہ راشدی سادات گھرانے کے جد اعلیٰ ہیں،اس سے ثابت ہواکہ راشدی سادات اصل میں لکیاری سادات گھرانے کی اک شاخ ہیں
حضرت شہید پیر سید محمد بقا شاہ لکیاری:آپ حضرت محمد امام شاہ لکیاری رحمت اللہ علیہ کے فرزند تھے،آپکی ولادت 1135ہجری میں ہوئی،جبکہ آپکی شہادت 1198ہجری میں واقع ہوئی آپ کو اولاد میں چار فرزندان پیدا ہوئے 1_حضرت پیر سید عبد الرسول شاہ لکیاری
2_حضرت پیر سید محمد سلیم شاہ لکیاری
3_حضرت پیر سید محمد راشد شاہ لکیاری روزے دہنی
4حضرت پیر سید علی مرتضیٰ شاہ لکیاری رحمہم اللہ اجمعین
آپکے چاروں فرزندان وقت کے جیئد عالم اور روحانیت کے اعلیٰ مقام پر فائز تھے جبکہ آپکے تیسرے فرزند حضرت امام العارفین پیر سائیں سید محمد راشد روزے دہنی رحمت اللہ علیہ کو آپکے تمام فرزندان سے زیادہ شہرت حاصل ہوئی حضرت پیر سید عبد الرسول شاہ:آپ کو اولاد میں اک فرزند پیدا ہوا آپکی اولاد کو حویلیوں والے راشدی پیر کہا جاتا ہے،آپکی اولاد لاڑکانہ کے قریب ریلن گاؤں و دیگر شہروں میں مقیم ہے،حضرت سید عبد الرسول شاہ رحمت اللہ علیہ کی مزار مقدس اپنے والد گرامی کے قریب مقام شیخ طیب ضلع خیرپور میرس میں واقع ہے حضرت پیر سید محمد سلیم شاہ:آپ کو اولاد میں دو فرزند پیدا ہوئے،آپکی اولاد کو کوٹائی راشدی پیر کہا جاتا ہے،آپکی اولاد سب سے پہلے نوڈیرو شہر کے قریب اپنا کوٹ یعنی قلعہ بناکر مقیم ہوئی جسے ‘شاہ جو کوٹ’کہا جاتا تھا 1942ع کے سیلاب کے بعد وہ کوٹ زمین بوس ہوگیا اور تمام پیر صاحبان ہجرت کرکے مختلف شہروں و دیہات جیسے کہ گاؤں پیر موھل،پیر جو گوٹھ، لاڑکانہ وغیرہ میں مقیم ہوگئے،آپ کا مزار مقدس بھی اپنے والد گرامی کے قریب مقام شیخ طیب ضلع خیرپور میرس میں واقع ہے، حضرت پیر سید محمد راشد شاہ روزے دہنی: آپکی ولادت 1170ہجری میں ہوئی جبکہ وصال 63سال کی عمر 1233ہجری میں ہوا آپ ولادت کے وقت رمضان شریف کے احترام میں اپنی والدہ کا دودھ نہ پیتے جب مغرب کی آذان ہوتی تب دودھ پیتے اسلئے آپ کو روزے دہنی یعنی روزہ رکھنے والا کے خطاب سے یاد کیا جاتا ہے آپ شریعت و سنت کے پابند اور تیرہویں صدی ہجری کے مجدد تھے آپ ہی کے نام مبارک “راشد”کی نسبت سے آپ کی اور آپکے تینوں بھائیوں کی اولاد کو “راشدی سادات”کہا جاتا ہے آپ کو اولاد میں 18 فرزندان پیدا ہوئے آپکی اولاد کو راشدی پیر کہا جاتا ہے جوکہ سندھ کے مختلف شہروں و دیہات میں مقیم ہیں آپکے وصال کے بعد آپکے بڑے فرزند پیر سید صبغت اللہ شاہ اول راشدی رحمت اللہ علیہ آپکی خانقاہ کے سجادہ نشین ہوئے جن کو ‘پیر پاگارا’ کہا گیا اس طرح آج تک جو بھی آپکی خانقاہ کا سجادہ نشین ہوتا ہے اس کو پیر پاگارا کے خطاب سے یاد کیا جاتا ہے اس وقت پیر سید صبغت اللہ شاہ راشدی آپکی خانقاہ کے آٹھویں پیر پاگارا ہیں حضرت روزے دہنی رحمت اللہ علیہ کی مزار مقدس درگاہ عالیہ پیران پاگارہ پیر جو گوٹھ میں مرجع خلائق ہے حضرت پیر سید علی مرتضیٰ شاہ:آپ حضرت پیر سید شہید محمد بقا شاہ لکیاری قدس سرہ کے چوتھے آخری فرزند تھے،آپکی والدہ ماجدہ نو مسلم تھیں آپ کا نام علی مرتضی اور مرتضیٰ علی شاہ بھی لکھا جاتا ہے،آپکو ‘پکھے والے شاہ’کے خطاب سے بھی یاد کیا جاتا ہے آپ کو اولاد میں 6 فرزندان پیدا ہوئے، آپ کی اولاد کو شاہانی راشدی پیر کہا جاتا ہے،
آپ نے والد گرامی کی شہادت کے بعد اپنے آبائی گاؤں رحیمڈنہ کلھوڑہ تعلقہ کنگری ضلع خیرپور میرس سے ہجرت کی اور ضلع لاڑکانہ کے شہر نوڈیرو کے قریب رہائش اختیار کی یہ علاقہ آپکی نسبت سے ُ’شاہ جو گوٹھ’ کے طور مشہور ہوا جوکہ اب پیر جو گوٹھ کے نام سے مشہور و معروف ہے
اسی پیر جو گوٹھ میں آپکی مزار مقدس ہے جبکہ یہاں پر ہی آپکی اولاد بھی مقیم ہے, درگاہ شریف پیر جھنڈو میں آپکی اولاد مقیم ہے
راشدی خاندان کا خاندانی پس منظر
راشدی خاندان اصل میں سیدعلی مکی رحمہ اللہ کی اولاد میں سے ہے۔ چوتھی صدی ہجری میں سیدنا شاہ صدر کے دادا سید علی مکی کاظمین سے ہجرت کرکے تبلیغ اور اشاعت اسلام کے لیے سندھ میں تشریف لائے، سیوستان(موجودہ ضلع دادو) میں بھگے ٹھوڑھے نامی پہاڑی کے دامن میں دریا کے کنارے ایک پر فضا اور خاموشی بستی میں سکونت پزیر ہوئے۔ یہ گاؤں آگے چل کر سید علی مکی کے نام سے ’’ مک علوی‘‘ کے نام سے مشہور ہوا اور ان کی اولاد کو لکیاری سادات کہا گیا۔[2] سادات کا یہ پہلا خانوادہ تھا جو سندھ کے لیے باعث شرف وزینت بنا۔ لکیاری سادات کا خاندان اپنے علم وفضل اور شرافت کے اعتبار سے پورے سندھ میں ممتاز سمجھا جاتاہے۔
• لکیاری سادات خاندان میں سے لکی شاہ صدر در گاہ شریف پیرگوٹھ(ضلع خیرپور) اور ” گوٹھ پیر جھنڈہ” (ضلع حیدرآباد) علمی وروحانی لحاظ سے بہت اہمیت کے حامل رہے ہیں ۔
• راشدی خاندان سید خدا بخش شاہ عرف کھٹن شاہ کی پشت میں سے ہے اس بزرگ کی پانچویں نسل میں سید محمد بقا شاہ شہید رحمہ اللہ انتہائی اعلیٰ درجہ کے صالح اور نیک سیرت انسان تھے۔ آپ کے سب سے چھوٹے بیٹے سید محمد راشد شاہ تھے جو راشدی خاندان کے مورثِ اعلیٰ کہلائے۔[3]
نسب رشدی
راشدی خاندان کاسلسلہ نسب سید محمد راشد شاہ بن سید محمد بقا شاہ اور ان سے سیدنا حسین ابن علی رضی اللہ عنہ تک پہنچتاہے۔ اس طرح آپ حسینی سیدہیں۔

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s