Fitnoo ka zahoor 29

Ḥukūmat nā-ăhl logoṅ ke supurd kī jā’egī aur ḥukmarān aur muqtadir log munāfiq hoṅge

al-Qur’ān

(3) وَکَاَیِّنْ مِّنْ قَرْیَةٍ هِیَ اَشَدُّ قُوَّةً مِّنْ قَرْیَتِکَ الَّتِيْٓ اَخْرَجَتْکَ ج اَهْلَکْنٰهُمْ فَـلَا نَاصِرَ لَهُمْo
(محمد، 47/ 13)

اور (اے حبیب!) کتنی ہی بستیاں تھیں جن کے باشندے (وسائل و اقتدار میں) آپ کے اس شہر (مکّہ کے باشندوں) سے زیادہ طاقتور تھے جس (کے مقتدر وڈیروں) نے آپ کو (بصورتِ ہجرت) نکال دیا ہے، ہم نے انہیں (بھی) ہلاک کر ڈالا پھر ان کا کوئی مددگار نہ ہوا (جو انہیں بچا سکتا)o

(3) Aur (ae Ḥabīb!) Kitnī hī bastiyāṅ thīṅ jin ke bāshinde (wasā’il-o iqtedār meṅ) Āp ke is shăhr (Makkah ke bāshindoṅ) se ziyādah ṭāqat-war the jis (ke muqtadir wad̥eroṅ) ne Āp ko (ba-ṣūrate hijrat) nikāl diyā hai, ham ne unheṅ (bhī) halāk kar d̥ālā phir un kā ko’ī madagār nah huwa (jo unheṅ bachā saktā).

[Muḥammad, 47/13.]

al-Ḥadīt̲h̲

33۔ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ رضي الله عنه قَالَ: قَالَ رَسُوْلُ اللهِ ﷺ : سَیَأْتِي عَلَی النَّاسِ سَنَوَاتٌ خَدَّاعَاتُ یُصَدَّقُ فِيْهَا الْکَاذِبُ وَیُکَذَّبُ فِيْهَا الصَّادِقُ وَیُؤْتَمَنُ فِيْهَا الْخَائِنُ وَیُخَوَّنُ فِيْهَا الْأَمِيْنُ وَیَنْطِقُ فِيْهَا الرُّوَيْبِضَةُ قِيْلَ: وَمَا الرُّوَيْبِضَةُ؟ قَالَ: الرَّجُلُ التَّافِهُ فِي أَمْرِ الْعَامَّةِ۔
رَوَاهُ ابْنُ مَاجَہ وَأَبُوْ یَعْلٰی وَالْحَاکِمُ، وَقَالَ: هٰذَا حَدِيْثٌ صَحِيْحُ الإِسْنَادِ۔

33: أخرجہ ابن ماجہ في السنن، کتاب الفتن، باب شدۃ الزمان، 2/ 1339، الرقم/ 4036، وأبو یعلی في المسند، 6/ 378، الرقم/ 3715، والحاکم في المستدرک، 4/ 512، الرقم/ 8439، والبزار في المسند، 7/ 174، الرقم/ 2740،۔

وَفِي رِوَایَةٍ عَنْهُ: قِيْلَ: وَمَا الرُّوَيْبِضَةُ؟ قَالَ: اَلسَّفِيْهُ یَتَکَلَّمُ فِي أَمْرِ الْعَامَّةِ۔ (1)
رَوَاهُ أَحْمَدُ وَالْحَاکِمُ، وَقَالَ: هٰذَا حَدِيْثٌ صَحِيْحُ الإِسْنَادِ۔

(1) أخرجہ أحمد بن حنبل في المسند، 2/ 291، الرقم/ 7899، والحاکم في المستدرک، 4/ 557، الرقم/ 8564، والطبراني في المعجم الأوسط، 3/ 313، الرقم/ 3258، وأیضًا في المعجم الکبیر، ولفظہ: السفیہ ینطق في أمر العامۃ، 18/ 67، الرقم/ 123۔

وَفِي رِوَایَةِ أَنَسِ بْنِ مَالِکٍ رضي الله عنه قَالَ: اَلْفُوَيْسِقُ یَتَکَلَّمُ فِي أَمْرِ الْعَامَّةِ۔ (1)
رَوَاهُ أَحْمَدُ وَأَبوْ یَعْلٰی۔

(1) أخرجہ أحمد بن حنبل في المسند، 3/ 220، الرقم/ 13322، وأبو یعلی في المسند، 6/ 378، الرقم/ 3715۔

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: لوگوں پر بہت سے سال ایسے آئیں گے جن میں دھوکہ ہی دھوکہ ہو گا۔ اس وقت جھوٹے کو سچا سمجھا جائے گا اور سچے کو جھوٹا۔ بددیانت کو امانت دار تصور کیا جائے گا اور امانت دار کو بددیانت اور ’’رویبضہ‘‘ یعنی نااہل اور فاسق و فاجر لوگ قوم کی نمائندگی کریں گے۔ عرض کیا گیا: ’رویبضہ‘ سے کیا مراد ہے؟ آپ ﷺ نے فرمایا: وہ نااہل اور فاسق شخص جو اہم معاملات میں عوام کی نمائندگی اور رہنمائی کا ذمہ دار بن جائے۔

اِس حدیث کو امام ابن ماجہ، ابو یعلی اور حاکم نے روایت کیا ہے۔ امام حاکم نے فرمایا: اس حدیث کی اسناد صحیح ہے۔

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے ہی مروی ہے کہ عرض کیا گیا: ’رویبضہ‘ سے کیا مراد ہے؟ آپ ﷺ نے فرمایا: وہ (نااہل اور) کم فہم شخص جو عوام کے اہم معاملات میں ان کی رہنمائی کا ذمہ دار بن جائے۔

اِس حدیث کو امام احمد اور حاکم نے روایت کیا ہے۔ اور امام حاکم نے فرمایا: اس حدیث کی اسناد صحیح ہے۔

ایک روایت میں حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ آپ ﷺ نے فرمایا: (رویبضہ سے مراد) وہ فاسق شخص ہے جو عوام کے اہم معاملات میں ان کی رہنمائی کا ذمہ دار بن جائے۔

اِس حدیث کو امام اَحمد اور ابو یعلی نے روایت کیا ہے۔

  • Ḥaz̤rat Abū Hurayrah raḍiya Allāhu ‘anhu bayān karte haiṅ keh Rasūl Allāh ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihī wa-sallam ne farmāyā: logoṅ par bŏhat se sāl aise ā’eṅge jin meṅ dhokah hī dhokah hogā. Us waqt jhūt̥e ko sachchā samjhā jā’egā aur sachche ko jhūt̥ā. Bad-diyānat ko amānat-dār taṣawwur kiyā jā’egā aur amānat-dār ko bad-diyānat aur “ruwaybiḍah” yaʻnī nā-ăhl aur fāsiq-o fājir log qaum kī numā’indagī kareṅge. ʻArz̤ kiyā gayā: ʻruwaybiḍah’ se kyā murād hai? Āp ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihī wa-sallam ne farmāyā: woh nā-ăhl aur fāsiq shaḳhṣ jo ahamm muʻāmalāt men ʻawām kī numā’indagī aur răhnumā’ī kā z̲immah-dār ban jā’e. Is ḥadīs̲ ko Imām Ibn Mājah, Abū Yaʻlá aur Ḥākim ne riwāyat kiyā hai. Imām Ḥākim ne farmāyā: Is ḥadīs̲ kī isnād ṣaḥīḥ hai. Ḥaz̤rat Abū Hurayrah raḍiya Allāhu ‘anhu se hī marwī hai keh ʻarz̤ kiyā gayā: ʻruwaybiḍah’ se kyā murād hai? Āp ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihī wa-sallam ne farmāyā: woh (nā-ăhl aur) kam făhm shaḳhṣ jo ʻawām ke aham muʻāmalāt meṅ un kī răhnumā’ī kā z̲immah-dār ban jā’e. Is ḥadīs̲ ko Imām Aḥmad aur Ḥākim ne riwāyat kiyā hai. Aur Ḥākim ne farmāyā: is ḥadīs̲ kī isnād ṣaḥīḥ hai. Ek riwāyat meṅ Ḥaz̤rat Anas bin Mālik raḍiya Allāhu ‘anhu bayān karte haiṅ keh Āp ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihī wa-sallam ne farmāyā: (ruwaybiḍah se murād) woh fāsiq shaḳhṣ hai jo ʻawām ke ahamm muʻāmalāt meṅ un kī răhnumā’ī kā z̲immah-dār ban jā’e. Is ḥadīs̲ ko Imām Aḥmad aur Abū Yaʻlá ne riwāyat kiyā hai.

    [Ṭāhir al-Qādrī fī al-Qawlu al-Ḥasani fī ʻalāmatī al-sāʻaṫi wa-ẓuhūri al-fitan,/84_87, raqam: 33.]
    〰〰

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s