Fitnoo ka zahoor 27

Ḥukūmat nā-ăhl logoṅ ke supurd kī jā’egī aur ḥukmarān aur muqtadir log munāfiq hoṅge

al-Qur’ān

(1) اِنَّ اللهَ یَاْمُرُکُمْ اَنْ تُؤَدُّوا الْاَمٰـنٰـتِ اِلٰٓی اَهْلِهَا وَاِذَا حَکَمْتُمْ بَيْنَ النَّاسِ اَنْ تَحْکُمُوْا بِالْعَدْلِ اِنَّ اللهَ نِعِمَّا یَعِظُکُمْ بِهٖ ط اِنَّ اللهَ کَانَ سَمِيْعًام بَصِيْرًاo یٰٓـاَیُّھَا الَّذِيْنَ اٰمَنُوْٓا اَطِيْعُوا اللهَ وَاَطِيْعُوا الرَّسُوْلَ وَاُولِی الْاَمْرِ مِنْکُمْ ج فَاِنْ تَنَازَعْتُمْ فِيْ شَيْئٍ فَرُدُّوْهُ اِلَی اللهِ وَالرَّسُوْلِ اِنْ کُنْتُمْ تُؤْمِنُوْنَ بِاللهِ وَالْیَوْمِ الْاٰخِرِ ط ذٰلِکَ خَيْرٌ وَّاَحْسَنُ تَاْوِيْلًاo اَلَم تَرَاِلَی الَّذِيْنَ یَزْعُمْوْنَ اَنَّھُمْ اٰمَنُوْا بِمَآ اُنْزِلَ اِلَيْکَ وَمَآ اُنْزِلَ مِنْ قَبْلِکَ یُرِيْدُوْنَ اَنْ يَّتَحَاکَمُوْٓا اِلَی الطَّاغُوْتِ وَقَدْ اُمِرُوْٓا اَنْ يَّکْفُرُوْ بِهٖ ط وَیُرِيْدُ الشَّيْطٰنُ اَنْ یُّضِلَّھُمْ ضَلٰــلًام بَعِيْدًاo وَاِذَا قِيْلَ لَهُمْ تَعَالَوْا اِلٰی مَآ اَنْزَلَ اللهُ وَاِلَی الرَّسُوْلِ رَاَيْتَ الْمُنٰـفِقِيْنَ یَصُدُّوْنَ عَنْکَ صُدُوْدًاo (النساء، 4/ 58-61)

بے شک اللہ تمہیں حکم دیتا ہے کہ امانتیں انہی لوگوں کے سپرد کرو جو ان کے اہل ہیں، اور جب تم لوگوں کے درمیان فیصلہ کرو تو عدل کے ساتھ فیصلہ کیا کرو، بے شک اللہ تمہیں کیا ہی اچھی نصیحت فرماتا ہے، بے شک اللہ خوب سننے والا خوب دیکھنے والا ہےo اے ایمان والو! اللہ کی اطاعت کرو اور رسول ( ﷺ ) کی اطاعت کرو اوراپنے میں سے (اہلِ حق) صاحبانِ اَمر کی، پھر اگر کسی مسئلہ میں تم باہم اختلاف کرو تو اسے (حتمی فیصلہ کے لیے) اللہ اور رسول ( ﷺ ) کی طرف لوٹا دو اگر تم اللہ پر اور یومِ آخرت پر ایمان رکھتے ہو، (تو) یہی (تمہارے حق میں) بہتر اور انجام کے لحاظ سے بہت اچھا ہےo کیا آپ نے اِن (منافقوں) کو نہیں دیکھا جو (زبان سے) دعویٰ کرتے ہیں کہ وہ اس (کتاب یعنی قرآن) پر ایمان لائے جوآپ کی طرف اتارا گیا اور ان (آسمانی کتابوں) پر بھی جو آپ سے پہلے اتاری گئیں (مگر) چاہتے یہ ہیں کہ اپنے مقدمات (فیصلے کے لیے) شیطان (یعنی احکامِ الٰہی سے سرکشی پر مبنی قانون) کی طرف لے جائیں حالاں کہ انہیں حکم دیا جا چکا ہے کہ اس کا (کھلا) انکار کر دیں، اور شیطان تویہی چاہتا ہے کہ انہیں دور دراز گمراہی میں بھٹکاتا رہےo اور جب ان سے کہا جاتا ہے کہ اللہ کے نازل کردہ (قرآن) کی طرف اور رسول( ﷺ ) کی طرف آجاؤ تو آپ منافقوں کو دیکھیں گے کہ وہ آپ (کی طرف رجوع کرنے) سے گریزاں رہتے ہیںo

(1) Be-shak Allāh tumheṅ ḥukm detā hai keh amānateṅ unhī logoṅ ke supurd karo jo un ke ăhl haiṅ, aur jab tum logoṅ ke darmiyān faiṣlah karo to ʻadl ke sāth faiṣlah kiyā karo, Be-shak Allāh tumheṅ kyā hī achc̥hī naṣīḥat farmātā hai, Be-shak Allāh ḳhūb sun·ne wālā ḳhūb dekhne wālā hai. Ae īmān wālo! Allāh kī iṭāʻat karo aur Rasūl (ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihī wa-sallam) kī iṭāʻat karo aur apne meṅ se (ăhle ḥaqq) ṣāḥibāne amr kī, phir agar kisī mas’alah meṅ tum bā-ham iḳhtelāf karo to use (ḥatmī faiṣlah ke liye) Allāh aur Rasūl (ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihī wa-sallam) kī ṭaraf laut̥ā do agar tum Allāh par aur yaume āḳhirat par īmān rakhte ho, (to) yahī (tumhāte ḥaqq meṅ) behtar aur anjām ke leḥāẓ se bŏhat achc̥hā hai. Kyā Āp ne in (munāfiqoṅ) ko nahīṅ dekhā jo (zabān se) daʻwá karte haiṅ keh woh is (Kitāb yaʻnī Qur’ān) par īmān lā’e jo Āp kī ṭaraf utārā gayā aur un (āsmānī Kitāboṅ) par bhī jo Āp se păhle utārī ga’īṅ (magar) chāhte yeh haiṅ keh apne muqaddamāt (faiṣle ke liye) shayṭān (yaʻnī aḥkāme Ilāḥī se sarkashī par mabnī qānūn) kī ṭaraf le jā’eṅ ḥālāṅ-keh unheṅ ḥukm diyā jā chukā hai keh us kā (khulā) inkār kar deṅ, aur shayṭān to yahī chāhtā hai keh unheṅ dūr darāz gumrāhī meṅ bhat̥kātā rahe. Aur jab un se kahā jātā hai keh Allāh ke nāzil kardah (Qur’ān) kī ṭaraf aur Rasūl (ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihī wa-sallam) kī ṭaraf ā jā’o to Āp munāfiqoṅ ko dekheṅge keh woh Āp (kī ṭaraf rujūʻ karne) se gurezāṅ răhte haiṅ.

[al-Nisā’, 4/58_61.]

al-Ḥadīt̲h̲

31۔ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ رضي الله عنه قَالَ: قَالَ رَسُوْلُ اللهِ ﷺ : إِذَا ضُیِّعَتِ الْأَمَانَةُ فَانْتَظِرِ السَّاعَةَ، قَالَ: کَيْفَ إِضَاعَتُهَا یَا رَسُوْلَ اللهِ؟ قَالَ: إِذَا أُسْنِدَ الْأَمْرُ إِلٰی غَيْرِ أَهْلِهٖ فَانْتَظِرِ السَّاعَةَ۔
رَوَاهُ الْبُخَارِيُّ وَأَحْمَدُ وَابْنُ حِبَّانَ۔

31: أخرجہ البخاري في الصحیح، کتاب الرقاق، باب رفع الأمانۃ، 5/ 2382، الرقم/ 6131، وأحمد بن حنبل في المسند، 2/ 361، الرقم/ 8714، وابن حبان في الصحیح، 1/ 307، الرقم/ 104، والبیھقي في السنن الکبریٰ، 10/ 118، الرقم/ 20150، والدیلمي في مسند الفردوس، 1/ 335، الرقم/ 1322، والمقریٔ في السنن الواردۃ في الفتن، 4/ 768، الرقم/ 381۔

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: جب امانتیں ضائع ہونے لگیں تو قیامت کا انتظار کرو۔ پوچھا گیا: یا رسول اللہ! امانتوں کے ضائع ہونے کا مطلب کیا ہے؟ فرمایا: جب اُمور نااہل لوگوں کو سونپے جانے لگیں تو قیامت کا انتظار کرو۔

اِس حدیث کو امام بخاری، احمد اور ابن حبان نے روایت کیا ہے۔

  • Ḥaz̤rat Abū Hurayrah raḍiya Allāhu ‘anhu se riwāyat hai kehra ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihī wa-sallam ne farmāyā: jab amānaten z̤a’eʻ hone lageṅ to qiyāmat kā inteẓār karo. Pūc̥hā gayā: yā Rasūl Allāh! Amānatoṅ ke z̤ā’eʻ hone kā maṭlab kyā hai? Farmāyā: jab umūr nā-ăhl logoṅ ko sauṅpe jāne lageṅ to qiyāmat kā inteẓār karo.

Is ḥadīs̲ ko Imām Buḳhārī, Aḥmad aur Ibn Ḥibbān ne riwāyat kiyā hai.

Ḥāifẓ Ibn Ḥajar ʻAsqalānī Fatḥ al-Bārī meṅ bayān karte haiṅ: ʻamr’ se murād woh tamām umūr haiṅ jin kā taʻalluq (bil-wāsṭah yā bilā wāsṭah kisī nah kisī ṭaur par) Dīn se ho, jaise ḥukūmat-o salṭanat (ṣadārat, wizārate ʻuẓmá, wizārate ʻulyā, gawarnarī aur ʻumūmī wizārateṅ), ʻadalayah aur sharʻī iftā’ waġhairah.

[Ṭāhir al-Qādrī fī al-Qawlu al-Ḥasani fī ʻalāmatī al-sāʻaṫi wa-ẓuhūri al-fitan,/82_83, raqam: 31.]

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s