Fitnoo ka zahoor 23

Kamān se nikle tīr kī ṭarḥ Dīn se ḳhārij guroh aur gumrāh līd̥ar ẓāhir hoṅge

al-Qur’ān

(1) اَلَمْ تَرَ اِلَی الَّذِيْنَ اُوْتُوْا نَصِيْبًا مِّنَ الْکِتٰبِ یُدْعَوْنَ اِلٰی کِتٰبِ اللهِ لِیَحْکُمَ بَيْنَھُمْ ثُمَّ یَتَوَلّٰی فَرِيْقٌ مِّنْھُمْ وَھُمْ مُّعْرِضُوْنَo ذٰلِکَ بِاَنَّهُمْ قَالُوْا لَنْ تَمَسَّنَا النَّارُ اِلآَّ اَيَّامًا مَّعْدُوْدٰتٍ ص وَغَرَّهُمْ فِيْ دِيْنِهِمْ مَّا کَانُوْا یَفْتَرُونَo فَکَيْفَ اِذَا جَمَعْنٰهُمْ لِیَوْمٍ لاَّ رَيْبَ فِيْهِ قف وَوُفِّیَتْ کُلُّ نَفْسٍ مَّا کَسَبَتْ وَهُمْ لَا یُظْلَمُوْنَo
(آل عمران، 3/ 23-25)

کیا آپ نے ان لوگوں کو نہیں دیکھا جنہیں (علمِ) کتاب میں سے ایک حصہ دیا گیا وہ کتابِ الٰہی کی طرف بلائے جاتے ہیں تاکہ وہ (کتاب) ان کے درمیان (نزاعات کا) فیصلہ کر دے تو پھر ان میں سے ایک طبقہ منہ پھیر لیتا ہے اور وہ روگردانی کرنے والے ہی ہیںo یہ (روگردانی کی جرأت) اس لیے کہ وہ کہتے ہیں کہ ہمیں گنتی کے چند دنوں کے سوا دوزخ کی آگ مس نہیں کرے گی، اور وہ (اللہ پر) جو بہتان باندھتے رہتے ہیں اس نے ان کو اپنے دین کے بارے میں فریب میں مبتلا کر دیا ہےo سو کیا حال ہوگا جب ہم ان کو اس دن جس (کے بپا ہونے) میں کوئی شک نہیں جمع کریں گے، اور جس جان نے جو کچھ بھی (اعمال میں سے) کمایا ہوگا اسے اس کا پورا پورا بدلہ دیا جائے گا اور ان پر کوئی ظلم نہیں کیا جائے گاo

(1) Kyā Āp ne un logoṅ ko nahīṅ dekhā jinheṅ (ʻilme) Kitāb meṅ se ek ḥiṣṣah diyā gayā woh Kitābe Ilāhī kī ṭaraf bulā’e jāte haiṅ tā-keh woh (Kitāb) un ke darmiyān (nazāʻāt kā) faiṣlah kar de to phir un meṅ se ek ṭabaqah muṅh pher letā hai aur woh rū-gardānī karne wāle hī haiṅ. Yeh (rū-gardānī kī jur’at) is liye keh woh kăhte haīṅ hameṅ gintī ke chand dinoṅ ke siwā dozaḳh kī āg mas nahīṅ karegī, aur woh (Allāh par) jo bŏhtān bāndhte răhte haiṅ us ne un ko apne Dīn ke bāre meṅ fareb meṅ mubtalā kar diyā hai. So kyā ḥāl hogā jab ham un ko us din jis (ke bapā hone) meṅ ko’ī shakk nahīṅ jamʻa kareṅge, aur jis jān ne jo kuc̥h bhī (aʻmāl meṅ se) kamāyā hogā use us kā pūrā pūrā badlah diyā jā’egā aur un par ko’ī ẓulm nahīṅ kiyā jā’egā.

[Āli ʻImrān, 3/23_25.]

Kamān se nikle tīr kī ṭarḥ Dīn se ḳhārij guroh aur gumrāh līd̥ar ẓāhir hoṅge

al-Ḥadīt̲h̲

24۔ عَنْ عَلِيٍّ رضي الله عنه قَالَ: إِنِّي سَمِعْتُ رَسُوْلَ اللهِ ﷺ یَقُوْلُ: سَیَخْرُجُ قَومٌ فِي آخِرِ الزَّمَانِ أَحْدَاثُ الْأَسْنَانِ سُفَھَاءُ الْأَحْـلَامِ یَقُوْلُوْنَ مِنْ خَيْرِ قَوْلِ الْبَرِيَّةِ، لاَ یُجَاوِزُ إِيْمَانُھُمْ حَنَاجِرَھُمْ، یَمْرُقُوْنَ مِنَ الدِّيْنِ کَمَا یَمْرُقُ السَّھْمُ مِنَ الرَّمِيَّةِ، فَأَيْنَمَا لَقِيْتُمُوْھُمْ فَاقْتُلُوْھُمْ، فَإِنَّ فِي قَتْلِھِمْ أَجْرًا لِمَنْ قَتَلَھُمْ یَوْمَ الْقِیَامَةِ۔

مُتَّفَقٌ عَلَيْهِ۔

وأخرجہ أبو عیسی الترمذي عَنْ عَبْدِ اللهِ بْنِ مَسْعُوْدٍ رضي الله عنه فِي السُّنَنِ وَقَالَ: وَفِي الْبَابِ عَنْ عَلِيٍّ وَأَبِي سَعِيْدٍ وَأَبِي ذَرٍّ رضي الله عنهم وَھٰذَا حَدِيْثٌ حَسَنٌ صَحِيْحٌ وَقَدْ رُوِيَ فِي غَيْرِ ھٰذَا الْحَدِيْثِ عَنِ النَّبِيِّ ﷺ حَيْثُ وَصَفَ ھٰؤُلَاءِ الْقَوْمَ الَّذِيْنَ یَقرَءُوْنَ الْقُرْآنَ لَا یُجَاوِزُ تَرَاقِیَھُمْ یَمْرُقُوْنَ مِنَ الدِّيْنِ کَمَا یَمْرُقُ السَّھْمُ مِنَ الرَّمِيَّةِ۔ إِنَّمَا ھُمُ الْخَوَارِجِ الْحُرَوْرِيَّةِ وَغَيْرِھِمْ مِنَ الْخَوَارِجِ۔

24: أخرجہ البخاري في الصحیح، کتاب استتابۃ المرتدین والمعاندین وقتالھم، باب قتل الخوارج والملحدین بعد إقامۃ الحجۃ علیھم، 6/ 2539، الرقم/ 6531، ومسلم في الصحیح، کتاب الزکاۃ، باب التحریض علی قتل الخوارج، 2/ 746، الرقم/ 1066، وأحمد بن حنبل في المسند، 1/ 81، 113، 131، الرقم/ 616، 912، 1086، والترمذي في السنن، کتاب الفتن، باب في صفۃ المارقۃ، 4/ 481، الرقم/ 2188، والنسائي في السنن، کتاب تحریم الدم، باب من شھر سیفہ ثم وضعہ في الناس، 7/ 119، الرقم/ 4102، وابن ماجہ في السنن، المقدمۃ، باب في ذکر الخوارج، 1/ 59، الرقم/ 168۔

وَفِي رِوَایَةِ زَيْدِ بْنِ وَھْبٍ الْجُھْنِيِّ أَنَّهٗ کَانَ فِي الْجَيْشِ الَّذِيْنَ کَانُوْا مَعَ عَلِيٍّ رضي الله عنه الَّذِيْنَ سَارُوْا إِلَی الْخَوَارِجِ، فَقَالَ عَلِيٌّ رضي الله عنه : أَيَّھَا النَّاسُ، إِنِّي سَمِعْتُ رَسُوْلَ اللهِ ﷺ یَقُوْلُ: یَخْرُجُ قَوْمٌ مِنْ أُمَّتِي یَقْرَءُوْنَ الْقُرْآنَ لَيْسَ قِراءَتُکُمْ إِلٰی قِرَاءَ تِھِمْ بِشَيئٍ وَلاَ صَلَاتُکُمْ إِلٰی صَلَاتِھِمْ بِشَيئٍ وَلَا صِیَامُکُمْ إِلٰی صِیَامِھِمْ بِشَيئٍ یَقْرَءُوْنَ الْقُرْآنَ یَحْسِبُوْنَ أَنَّهٗ لَھُمْ، وَھُوَ عَلَيْھِمْ لاَ تُجَاوِزُ صَلَاتُھُمْ تَرَاقِیَھُمْ یَمْرُقُوْنَ مِنَ الإِسْلاَمِ کَمَا یَمْرُقُ السَّھْمُ مِنَ الرَّمِيَّةِ۔ (1)

رَوَاهُ مُسْلِمٌ وَأَحْمَدُ وَأَبُوْ دَاوُدَ وَالنَّسَائِيُّ وَعَبْدُ الرَّزَّاقِ۔

(1) أخرجہ مسلم في الصحیح، کتاب الزکاۃ باب التحریض علی قتل الخوارج، 2/ 748، الرقم/ 1066، وأحمد بن حنبل في المسند، 1/ 91، الرقم/ 706، وأبو داود في السنن، کتاب السنۃ، باب في قتال الخوارج، 4/ 244، الرقم/ 4768، والنسائي في السنن الکبری، 5/ 163، الرقم/ 8571، وعبد الرزاق في المصنف، 10/ 147، والبزار في المسند، 2/ 197، الرقم/ 581۔

حضرت علی رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ میں نے رسول اللہ ﷺ کو یہ فرماتے ہوئے سنا: عنقریب آخری زمانے میں ایسے لوگ ظاہر ہوں گے یا نکلیں گے جو نوعمر اور عقل سے کورے ہوں گے وہ رسول اللہ ﷺ کی احادیث بیان کریں گے لیکن ایمان ان کے اپنے حلق سے نیچے نہیں اترے گا۔ وہ دین سے یوں خارج ہوں گے جیسے تیر شکار سے خارج ہو جاتا ہے، سو تم انہیں جہاں کہیں پائو تو قتل کر دینا کیوں کہ ان کو قتل کرنے والوں کو قیامت کے دن ثواب ملے گا۔

یہ حدیث متفق علیہ ہے۔

امام ابو عیسیٰ ترمذی نے اپنی سنن میں اس حدیث کو بیان کرنے کے بعد فرمایا: یہ روایت حضرت علی، حضرت ابو سعید اور حضرت ابو ذر رضی اللہ عنہم سے بھی مروی ہے اور یہ حدیث حسن صحیح ہے۔ اس حدیث کے علاوہ بھی حضور نبی اکرم ﷺ سے روایت کیا گیا کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: جبکہ ایک ایسی قوم ظاہر ہو گی جس میں یہ اوصاف ہوں گے جو قرآن مجید کی تلاوت کرتے ہوں گے لیکن وہ ان کے حلقوں سے نیچے نہیں اترے گا وہ لوگ دین سے اس طرح خارج ہوںگے جس طرح تیر شکار سے خارج ہو جاتا ہے۔ بیشک وہ خوارج حروریہ ہوں گے اور اس کے علاوہ وہ خوارج کے ہی دیگر گروہوں پر مشتمل لوگ ہوں گے۔

ایک روایت میں زید بن وہب جہنی بیان کرتے ہیں کہ وہ اس لشکر میں تھے جو حضرت علی رضی اللہ عنہ کے ساتھ خوارج سے جنگ کے لیے گیا تھا۔ حضرت علی رضی اللہ عنہ نے فرمایا: اے لوگو! میں نے رسول اللہ ﷺ کو فرماتے ہوئے سنا: میری امت میں سے ایک قوم ظاہر ہو گی وہ ایسا (خوب صورت) قرآن پڑھیں گے کہ ان کے پڑھنے کے سامنے تمہارے قرآن پڑھنے کی کوئی حیثیت نہ ہو گی، نہ ان کی نمازوں کے سامنے تمہاری نمازوں کی کچھ حیثیت ہوگی اور نہ ہی ان کے روزوں کے سامنے تمہارے روزوں کی کوئی حیثیت ہو گی۔ وہ یہ سمجھ کر قرآن پڑھیں گے کہ وہ ان کے لیے مفید ہے لیکن درحقیقت وہ ان کے لیے مضر ہو گا، نماز ان کے گلے سے نیچے نہیں اتر سکے گی اور وہ اسلام سے ایسے نکل جائیں گے جیسے تیر شکار سے نکل جاتا ہے۔

اس حدیث امام مسلم، اَحمد، ابو داود، نسائی اور عبد الرزاق نے روایت کیا ہے۔

  • Ḥaz̤rat ʻAlī raḍiya Allāhu ‘anhu riwāyat karte haiṅ keh maiṅ ne Rasūl Allāh ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihi wa-sallam ko yeh farmāte huwe sunā: ʻanqarīb āḳhirī zamāne meṅ aise log z̲āhir hoṅge yā nikleṅge jo nau ʻumr aur ʻaql se kore hoṅge woh Rasūl Allāh ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihi wa-sallam kī aḥādīs̲ bayān kareṅge lekin īmān un ke apne ḥalaq se nīche nahīṅ utregā. Woh Dīn se yūṅ ḳhārij hoṅge jaise tīr shikār se ḳhārij ho jātā hai, so tum unheṅ jahāṅ kahīṅ pā’o to qatl kar denā kyūṅ-keh un ko qatl karne wāloṅ ko qiyāmat ke din s̲awāb milegā. Yeh ḥadīs̲ muttafaq ʻalayh hai. Imām Abū ʻĪsá Tirmid̲h̲ī ne apnī Sunan meṅ is ḥādīs̲ ko bayān karne ke baʻd farmāyā: yeh riwāyat Ḥaz̤rat ʻAlī, Ḥaz̤rat Abū Saʻīd aur Ḥaz̤rat Abū D̲h̲arr raḍiya Allāhu ‘anhum se bhī marwī hai aur yeh ḥadīs̲ ḥaṣan ṣaḥīḥ hai. Is ḥadīs̲ ke ʻilāwah bhī Ḥuz̤ūr Nabīye Akram ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihi wa-sallam se riwāyat kiyā gayā keh Rasūl Allāh ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihi wa-sallam ne farmāyā: jab-keh ek aisī qaum ẓāhir hogī jis meṅ yeh awṣāf hoṅge jo Qur’ān Majīd kī tilāwat karte hoṅge lekin woh un ke ḥalqoṅ se nīche nahīṅ utregā woh log Dīn se is ṭarḥ ḳhārij hoṅge jis ṭarḥ tīr shikār se ḳhārij ho jātā hai. Be-shak woh Ḳhawārij Ḥarūrīyah hoṅge aur is ke ʻilāwāh woh Ḳhawārij ke hī dīgar gurohoṅ par mushtamil log hoṅge. Ek riwāyat meṅ Zayd bin Wahb Juhnī bayān karte haiṅ keh woh us lashkar meṅ the jo Ḥaz̤rat ʻAlī raḍiya Allāhu ‘anhu ke sāth ḳhawārij se jaṅg ke liye gayā thā. Ḥaz̤rat ʻAlī raḍiya Allāhu ‘anhu ne farmāyā: ae logo! Maiṅ ne Rasūl Allāh ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihi wa-sallam ko farmāte huwe usnā: merī ummat meṅ se ek qaum ẓāhir hogī woh aisā (ḳhūb-ṣūrat) Qur’ān par̥heṅge keh un ke par̥hne ke sāmne tumhāre Qur’ān par̥hne kī ko’ī ḥais̲īyat nah hogī aur nah hī un ke rozoṅ ke sāmne tumhāre rozoṅ kī ko’ī ḥais̲īyat hogī. Woh yeh samajh kar Qur’ān par̥heṅge keh woh un ke liye mufīd hai lekin dar-ḥaqīqat woh un ke liye muz̤irr hogā, namāz un ke gale se nīche nahīṅ utar sakegī aur woh Islām se aise nikal jā’eṅge jaise tīr shikār se nikal jātā hai. Is ḥadīs̲ ko Imām Muslim, Aḥmad, Abū Dāwūd, Nasā’ī aur ʻAbd al-Razzāq ne riwāyat kiyā hai.

    [Ṭāhir al-Qādrī fī al-Qawlu al-Ḥasani fī ʻalāmatī al-sāʻaṫi wa-ẓuhūri al-fitan,/58_61, raqam: 24.]

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s