Hazrat Shah Abul Maali Chisti رحمۃ اللہ تعالیٰ علیہ

780

His good name was Syed Khair uDin, and surname Abu alMaali. His father was related to Syed family of Kirman, Iran. Kirman is a Province of Iran. His ancestor Syed Faiz ullah along with his son Syed Mubbarak migrated from Kirman to Hindustan during seven-hundreds and ninety-six Hijri. They settled in area Uch Sharif in Bahawalpur state.

6

Hazrat Sheikh Abul Maali (RA) shrine is situated at dil Muhammad road Lahore, Punjab Pakistan. His good name was Syed Khair ud Din, and sir name Abul Maali.  His father was related to Syed family of Kirman Iran, kirman was a fluoresce of Iran at that time. His ancestor Syed Faiz ullah along with his son Syed Mubbarak migrated from Kirman to Hindustan during seven-hundreds and ninety-six Hijri. They settled in area Uch Sharif in Bahawalpur.

Then, this family shifted to a town Daud Cha near Multan. During 1630 AD part of this family move to Shergarh and settled there. On, 10 Zilhaj, 960 Hijri Sunday this great saint of Islam Shah Abul Maali (RA) was born at Shergarh. The name of his father was Syed Rahamut ullah and name of his Grandfather was Syed Fateh ullah. Syed Rahamut Ullah was brother of Syed Muhammad Ibrahim Daud Bandagi Kirmani (RA).  Shrine of Syed Muhammad Ibrahim Daud Bandagi Kirmani (RA) is present at Shergarh. Another brother of Syed Rahamut ullah (RA) was Syed Jalaluddin (RA), whose shrine is at Kotha Syed Jalal Sindh Pakistan.

Hazrat paternal linage joins to Hazrat Abdul Qadir Jillani (RA) after 14 steps.

Hazrat Shah Abul Maali (RA) got maturity in literal knowledge and then was dominated by the spirit of Allah’s love. Dominate with that spirit he spent some times in seclusion in jungles and deserts. The life seclusion give perfection in love of Allah and it was connected with Hazrat Muhammad (PBUH) cave era.

Hazrat went to Delhi in order to find his spiritual guide, where he met a mystic, who told him to return back to Shergarh. When he returned back he followed his Uncle Syed Muhammad Ibrahim Daud Bandagi Sheikh in Qadri spiritual path. He served his spiritual mentor Syed Muhammad Ibrahim Daud Bandagi for years and than his mentor commissioned him to Lahore. During his journey from Shergarh to Lahore, he constructed water ponds, wells and flower beds on multiple places, few of them are still present. As he settled in Lahore, he impressed and became favorite of masses. His love to Hazrat Abdul Qadir Jillani (RA) was at its climax. He was used to admit a person in his discipline and very next night the disciple blessed with sight of Hazrat Abdul Qadir Jillani (RA). He wrote a book to pay his tribute to Hazrat Abdul Qadir Jillani named ‘Tofa tul Qadaria’. He has written another book on Prophet Muhammad (PBUH). He was writer, a poet and his poetry was in Persian language. He written multiple books few names are Dewan Urabati, Ifat ul qadri, Risala guldasta, Risala nooria and Risala munsaja,

He served the cause of Islam at Lahore for decades Let us recalls some of his prominent miracle

Mughal Prince Dara Shukoh wrote in his book Seena ul UliaI, in the company of Niamet Ali submitted to Shah Abul Maali presence; meanwhile a devotee submitted a beautiful Tasbeeh to Hazrat Saheb. I thought in my mind, it would be very fortunate for me if Shah sb bestowed this Tasbeeh to me. When, we intended to depart the session, Shah Sb called me and said you can take this Tasbeeh. He also advises me to read Doord on it 100 times a daily that would reward you, me and original donator of Tasbeeh.

Hazrat Shah Abul Maali (RA) first matrimony done with daughter of Hazrat Syed Muhammad Ibrahim Daud Bandagi Kirmani (RA). That pious woman died soon after marriage. Hazrat sahib second matrimony was with maternal granddaughter of King Jahangir, she elapsed in Lahore and buried in Mohala Abul Maali women graveyard. This women got eleven spaces in kinship to king. That was lot of land extended from civil court from Lahore to Mohala Shah Mali. His descended allow constructing of Diyal Singh college in this land.

Shah Sahib got eight sons one of his got Shaheed fighting against Sikh army and his shrine is at Hussaingarh.

Hazrat Shah Abu al Mali died in 1025 Hijri at Lahore. His mausoleum was constructed in his life. Near his mausoleum a mosque was also present there Shah Sahib used to preached in the times he spent in Lahore.

حضرت شاہ ابوالمعالی چشتی انبیٹھوی رحمۃ اللہ تعالیٰ علیہ

 آپ ہندوستان کے سادات خاندان سے تعلق رکھتے تھے اور شیخ داؤد چشتی رحمۃ اللہ علیہ کے خلیفہ تھے اگرچہ آپ کو شیخ محمد صادق گنگوہی رحمۃ اللہ علیہ سے تربیت ملی تھی مگر آپ نے شیخ داؤد سے تکمیل پائی اور اُن سے خرقۂ خلافت حاصل کیا آپ کے والد سید محمد اشرف سہانپور کے قریب قصبہ امٹہ میں رہتے تھے جب اُن کی وفات ہوئی تو شاہ ابو المعالی ابھی چھوٹے تھے آپ کی والدہ آپ کو شیخ محمد صادق گنگوہی رحمۃ اللہ علیہ کی خدمت میں لے گئیں اور التجاء کی کہ آپ اس کی تربیت کریں آپ نے انہیں اپنے پاس رکھ لیا اور ظاہری علوم مکمل کروائے وفات کے وقت اُنہیں شیخ داؤد رحمۃ اللہ علیہ کے حوالے کردیا حضرت شیخ داؤد نے آپ کی تربیت بھی کی اور خرقۂ خلافت بھی دی۔ شاہ ابو المعالی رحمۃ اللہ علیہ کا ایک ہمسایہ بھی تھا جو بڑا بدطنیت اور بد خُو تھا آپ سے حسد کرتا اور ہر وقت آپ کے خلاف ہی سوچتا رہتا آپ کا نام حقارت سے لیتا اور طرح طرح کے دل آزار ا قدام کرتا حضرت شاہ ابو المعالی رحمۃ اللہ علیہ کے مریدوں نے کئی بار آپ سے اجازت لی کہ اسے درست کریں مگر آپ نے کبھی اجازت نہ دی اور اُس سے بدلا لینے کی کبھی خواہش نہ کی اتفاقاً وہ ہمسایہ مرگیا آپ کو خود بڑا صدمہ ہوا کئی روز آپ ماتم اور گریہ کرتے رہے کھانا بھی نہ کھاتے آپ کے خادم اور مریدوں نے اِس غم کی وجہ پوچھی تو آپ نے فرمایا کہ عالم ناسوت میں  اولیاء کے اکثر دامن دنیا کے غبار سے ملوث ہوں گے اور یہ غبار بدگو اور بد خوانسانوں کی گالیوں کی وجہ سے دُور ہوگا اب وہ شخص فوت ہوگیا ہے میرے دامن کے غبار کو رب تو دُور کرے گا مجھے اسی بات کا غم اور صدمہ ہے۔ حضرت شاہ ابو المعالی رحمۃ اللہ علیہ جوانی میں اکثر یاد الٰہی میں غرق اور محور رہتے تھے آپ کو دنیا اور مافیا کی خبر نہ تھی ایک بار تو ایسا ہوا کہ تین ماہ تک آپ نے کچھ نہ کھایا  پیا نماز کا وقت ہوتا تو آپ کے خادم آپ کو بڑی مشکل سے آگاہ کرتے وضو کرواتے اور مصلےٰ پر کھڑا کردیتے یہ کیفیت آپ پر تین سال تک رہی پھر جاکر دینی اور دنیاوی امور سے واقف ہوئے مریدوں نے پوچھا تو آپ نے فرمایا اب فرض اور سُنتیں خود مثالی مشکل میں میرے سامنے آکر مجھے آگاہ تربیت میں ادائیگی پر مجبور کردیتی ہیں اب مجھے تمہاری طرف سے کسی آگاہی کی ضرورت نہیں۔ حضرت شاہ ابو المعلی رحمۃ اللہ علیہ کے گھر میں اس قدر تنگ دستی اور بے سرو سامانی کا دور دورہ تھا کہ کئی کئی دن فقرو فاقہ میں گزاردیتے بعض خاص لوگوں میں آپ کے خلیفہ سیّد میران بہیکہ تک پہنچائی انہوں نے یہ بات سن کر شاہ صاحب کے گھر گئے اور آپ کے غلہ دان میں ہاتھ ڈالا تو دیکھا کہ اس میں غلہ موجود ہے آپ نے فرمایا یہ غلّہ قیامت تک کم نہیں ہوگا اِسے نکالتے جاؤ اور پکاتے جاؤ حضرت شاہ ابو المعالی نے اپنے گھر والوں سے پوچھا کہ دو مہینے گزر گئے گھر میں غلّے کی کمی کی شکایت آئی اس کی کیا وجہ ہے گھر والوں نے صورتِ حال سنائی تو آپ نے غلہ دان منگوا کر اُسے اُلٹا کردیا فرمایا کہ سید میران بہیکہ ہمارے توکل میں خلل ڈال دیتے ہیں۔ ایک دن قصبہ تھانیسر میں مشائخ کی ایک مجلس منعقد ہوئی اس میں حضرت شاہ ابوالمعالیٰ میران سید بہیکہ شیخ ابو الفتح شیخ ثوندھا بوہری شیخ بلاکی  شیخ محمد شاہ محمد شاہ۔ محمد یوسف شیخ عبدالقدر سنوری شاہ نصیر الدین کھڑی والا اور سید غریب کیرانوی جیسے بزرگ موجود تھے اس مجلس میں کلمۂ طیبہ لا اِلا الہ الااللہ کا ذکر ہورہا تھا حضرت شاہ ابو المعالی نے فرمایا کہ جن لوگوں نے اِس کلمے کو دل کی گہرائیوں سے پڑھا ہے اگر وہ لفظ لا پڑھ کر کسی جاندار کے کان میں پھونک دیں تو وہ مر جائے گا اور اگر اِلا اللہ پڑھ کر پھونک ماریں تو وہ پھر زندہ ہوجائے گا۔ حاضرین مجلس میں اِس بات کا امتحان لینے کے لیے حضرت شاہ کی خدمت میں التماس کی کہ ہمیں آپ ایسا کر دکھائیے آپ اٹھے تو اپنے گھر کے صحن میں جو گائے کھڑی تھی اس کے کان میں لاء کا لفظ کہا وہ اُسی وقت گر پڑی اور تڑپ کر مرگئی جب سب لوگوں نے دیکھا کہ وہ ٹھنڈی ہوگئی ہے تو آپ نے اُس کے دوسرے کان میں اِلاللہ کہا تو وہ زندہ ہوکر اٹھی اور سب کے سامنے گھاس چرنا شروع کردیا۔ شاہ ابو المعالی کی وفات ۱۱۸۶ھ میں ہوئی صاحبِ شجرۂ چشتیہ نے آپ کا سالِ وفات شہنشاہ مجتبےٰ سے نکالا ہے۔ رفت از دنیا چو در خلد بریں پیر رہبر ابو المعالی اہل فیض سال وصل اوست تاج التارکین ۱۱۱۶ھ بار دیگر بو المعالی اہل فیض ۱۱۱۶ھ
No photo description available.