Milad-un-Nabi ﷺ Ahaadithe Mubaaraka Kee Raushni Me

*Milad-un-Nabi ﷺ Ahaadithe Mubaaraka Kee Raushni Me*
*میلاد النبی ﷺ: اَحادیثِ مبارکہ کی روشنی میں*

*TALIF:* _Shaykh-ul-Islam Doctor Muhammad Tahir-ul-Qadri_


مَوْلَایَ صَلِّ وَسَلِّمْ دَآئِمًا اَبَدًا
عَلٰی حَبِیْبِکَ خَیْرِ الْخَلْقِ کُلِّھِمِ
مُحَمَّدٌ سَیِّدُ الْکَوْنَیْنِ وَالثَّقَلَیْنِ
وَالْفَرِیْقَیْنِ مِنْ عُرْبٍ وَّمِنْ عَجَمِ
{صَلَّی اﷲُ تَعَالٰی عَلَیْهِ وَعَلٰی آلِهِ وَصَحْبِهِ وَ بَارَکَ وَسَلَّم}


*Harfe Aaghaaz*

“Jashne Milad-un-Nabi صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Manaana Huzoor Nabiyye Akram صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Kee Wilaadate Baa Sa’adat Kee Taarikhi Khushi Me Masarrat-o Shaadmaani Ka Izhaar Hai Aur Sahih Bukhari Kee Riwaayat Se Yeh Baat Waazeh Hai Ki Yeh Aisa Mubaarak Amal Hai Jis Se Aboo Lahab Jaise Kaafir Ko Bhi Faa’eda Pahonchta Hai Hala’n Ki Us Kee Mazammat Me Poori Soorat Naazil Hu’i Hai. Agar Aboo Lahab Jaise Kaafir Ko Milad-un-Nabi صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Kee Khushi Me Har Peer(Monday) Ko Azaab Me Takhfeef Naseeb Ho Sakti Hai To Us Momin Musalman Kee Sa’aadat Ka Kya Thikaana Hoga Jis Kee Zindagi Milad-un-Nabi صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Kee Khushiya’n Manaane Me Basar Hoti Ho.

Huzoor Sarware Ka’enatصَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Khud Bhi Apne Yawme Wilaadat Kee Khushi Manaate Aur Is Kaa’enaat Me Apne Zahoor-o Wujood Par Bargahe Rabb-ul-Izzat Me Sipaas Guzaar Hote Hu’e Peer Ke Din Roza Rakhte. Aap صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Ka Apne Yawme Wilaadat Kee Ta’zeem-o Takreem Farmaate Hu’e Tehdithe Ne’mat Ka Shukr Baja Laana Hukme Khudawandi Tha Kyun Ki Huzoor Nabiyye Akram صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Hee Ke Wujoode Mas’ood Ke Tasadduq Aur Waseela Se Har Wujood Ko Sa’aadat Mili Hai.

Jashne Milad-un-Nabi صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Ka ‘Amal Musalmano’n Ko Huzoor Nabiyye Akram صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Par Durood-o Salam Jaise Ahm Faraa’iz Kee Taraf Raghbat Dilaata Hai Aur Qalb-o Nazar Me Dhauq-o Shauq Kee Faza’ Hamwaar Karta Hai. Salat-o Salam Bazaat Khud Shari’at Me Be Panaah Nawaazishaat-o Barakaat Ka Baa’ith Hai. Is Liye Zamhoore Ummat Ne Milad-un-Nabi صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Ka In’eqaad Mustehsan Samjha.

Sirate Tayyibah Kee Ahamiyyat Ujaagar Kar Ne Aur Jazba-e Mahabbate Rasool صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Ke Farogh Ke Liye Mehfile Milad Kalidi Kirdaar Ada Karti Hai.Isi Liye Jashne Milad-un-Nabi صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Me Faza’il, Shamaa’il, Khasaa’il Aur Mu’jizaate Sayyid-il-Mursalin صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Ka Tadhkira Aur Uswa-e Hasana Bayaan Hota Hai.



Jashne Milad-un-Nabi صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Ka Ek Ahm Maqsad Mahabbat-o Qurbe RasoolAllah صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Ka Husool-o Farogh Aur Aap صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Kee Zaate Giraami Se Musalmano’n Ke Ta’alluq Ka Ihya’ Hai Aur Yeh Ihya’ Manshaa-e Shari’at Hai. Choo’n Ki Huzoor Nabiyye Akram صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Kee Zaate Aqdas Ummate Muslima Ke Imaan Ka Markaz-o Mehwar Aur Haqiqi Aasaas Hai. Ummate Muslima Kee Baqa-o Salaamati Aur Taraqqi Ka Raaz Hee Is Amr Par Munhasir Hai Ki Woh Faqat Zaate Mustafa صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Ko Apni Jumla Aqidato’n, Mahabbato’n Aur Tamannao’n Ka Markaz-o Mehwar Gardaane Aur Yeh Baat Qat’iy Taur Par Jaan Le Ki Aap صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Kee Nisbat Ke Istehkaam Aur Waasta Ke Baghair Dunya-o Aakhirat Me Koi Izzat-o Sarfaraazi Naseeb Nahin Ho Sakti Hai.

Huzoor Nabiyye Akram صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Ke Faza’il-o Kamaalaat Kee Ma’refat Imaan Billah Aur Iman Bi-Al-Risaalat Me Izaafa Ka Moharrik Banti Hai. Aap صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Kee Ta’zeem-o Tauqeer Imaan Ka Pehla Bunyaadi Taqaaza Hai Aur Milade Mustafa صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Ke Silsile Me Masarrat-o Shaadmaani Ka Izhaar Karna, Mahaafile Zikr-o Na’t Ka In’eqaad Karna Aur Khaane Ka Ehtemaam Karna Allah Ta’ala Ke Huzoor Shukr Guzaari Ke Sab Se Numaaya Muzaahir Me Se Hai. Allah Ta’ala Ne Huzoor Nabiyye Akram صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Ko Hamaare Liye Mab’ooth Farma Kar Hame’n Apne Be Paaya’n Ehsaanaat-o Inaayaat Aur Nawazishaat Ka Mustahiq Thehraaya Hai. Is Liye Allah Ta’ala Ne Is Ehsaane Azeem Ko Jatlaaya Hai.

Jis Tarah Maahe Ramadaan-ul-Mubaarak Ko Allah Rabb-ul-Izzat Ne Qur’an Hakeem Kee Azmat-o Shaan Ke Tufayl Deegar Tamaam Mahino’n Par Imtiyaaz ‘Ata Farmaaya Hai Usi Tarah Maahe Rabi’-ul-Awwal Ke Imtiyaaz Aur Inferaadiyyat Kee Waj’h Bhi Is Me Saahibe Qur’an Kee Tashreef Aawri Hai. Yeh Maahe Mubaarak Bhi Huzoor Nabiyye Akram صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Kee Wilaadat Baa Sa’aadat Ke Sadqe Jumla Mahino’n Par Numaaya Fazilat Aur Imtiyaaz Ka Haamil Hai.Shabe Milaade Rasool صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Laylat-ul-Qadr Se Bhi Afzal Hai. Laylat-ul-Qadr Me Nuzoole Qur’an Huwa To Shabe Milad Me Saahibe Qur’an Kee Aamad Hu’i. Laylat-ul-Qaadr Kee Fazeelat Is Liye Hai Ki Woh Nuzoole Qur’an Aur Nuzoole Malaa’iqa Kee Raat Hai Aur Nuzoole Qur’an Qalbe Mustafa صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Par Huwa Hai. Agar Huzoor Nabiyye Akram صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Na Hote To Na Qur’an Hota, Na Shabe Qadr Hoti, Na Koi Aur Raat Hoti. Yeh Saari Fazeelatein Aur Azmatein Milaade Mustafa صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Ka Sadaqa Hain.

Is Kaa’enaate Insaani Par Allah Ta’ala Ne Be Hadd-o Hisaab Ehsaanaat-o In’aamaat Farmaa’e Aur Us Ne Hame’n Laa Ta’daad Ne’mato’n Se Nawaaza Jin Me Se Har Ne’mat Dusri Se Badh Kar Hai Lekin Us Ne Kabhi Kisi Ne’mat Par Ehsaan Nahin Jatlaaya.

Allah Ta’ala Ne Hame’n Lazzat-o Tawanaa’i Se Bharpoor Tarah Tarah Ke Khaane ‘Ata Ki’e, Peene Ke Liye Khush Dhaa’eqa Mukhtalif Mashroobaat Diye, Din Raat Ka Ek Aisa Nizaam-ul-Awqaat Diya Jo Sukoon-o Aaraam Faraaham Kar Ne Ke Saath Saath Hamaari Zarooriyyaate Zindagi Kee Kafaalat Karta Hai, Samundaro’n, Pahaado’n Aur Khala-e Baseet Ko Hamaare Liye Musakkhar Kar Diya, Hame’n Ashraf-ul-Makhlooqaat Banaaya Aur Hamaare Sar Par Buzurgi Wa Azamat Ka Taaj Rakkha, Waaldayn, Bahan, Bhaai Aur Aulaad Jaisi Ne’mato’n Kee Arzaani Farmaa’i Al-Gharaz Apni Aisi Aisi Ataao’n Aur Nawaazisho’n Se Faiz Yaab Kiya Ki Hum Un Ka Idraak Kar Ne Se Bhi Qaasir Hain Lekin Un Sab Ke Baa Wujood Us Ne Ba-Taur Khaas Ek Bhi Ne’mat Ka Ehsaan Nahin Jatlaaya. Lekin Ek Ne’mat Aisi Thi Ki Khuda-e Buzurg-o Bartar Ne Jab Use Apne Hareeme Kibriyaa’i Se Nau-e Insaani Ke Taraf Bheja To Poori Kaa’enaate Ne’mat Me Sirf Us Par Apna Ehsaan Jatlaaya Aur Us Ka Izhaar Bhi Aam Pairaae Me Nahin Kiya Balki Ahle Imaan Ko Us Ka Ehsaas Dilaaya. Momineen Se Roo’e Khitaab Kar Ke Irshaad Farmaya :

لَقَدْ مَنَّ اللّهُ عَلَى الْمُؤمِنِينَ إِذْ بَعَثَ فِيهِمْ رَسُولاً مِّنْ أَنفُسِهِمْ.

“Be Shak Allah Ne Musalmaano’n Par Bada Ehsaan Farmaya Ki Un Me Unhi Me Se (Azamat Waala) Rasool (صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم) Bheja.” [Aali Imran, 03 : 164.]



Islam Me Allah سُبْحَانَهُ وَتَعَالىٰ Kee Ne’mato’n Aur Us Ke Fazl-o Karam Par Shukr Baja Laana Taqaaza-e Uboodiyyat-o Bandagi Hai, Lekin Qur’an Ne Ek Maqaam Par Us Kee Jo Hikmat Bayaan Farmaa’i Hai Woh Khaasi Maa’na Khez Hai. Irshaad Farmaya :

لَئِنْ شَكَرْتُمْ لَأَزِيدَنَّكُمْ وَلَئِنْ كَفَرْتُمْ إِنَّ عَذَابِي لَشَدِيدٌ۝

“Agar Tum Shukr Ada Karoge To Mein Tum Par (Ne’mato’n Me) Zaroor Izaafa Karunga Aur Agar Tum Naashukri Karoge To Mera Azaab Yaqinan Sakht Hai۝” [Ibrahim, 14 : 07.]

Is Aaya-e Karima Kee Roo Se Ne’mato’n Aur Shukr Baja Laana Mazeed Ne’mato’n Ke Husool Ka Peshe Khaima Ban Jaata Hai. Phir Ne’mato’n Par Shukraana Sirf Ummate Muhammadiyyah Par Hee Waajib Nahin Balki Umame Saabiqa Ko Bhi Is Ka Hukm Diya Jaata Raha. Soorat-ul-Baqarah Kee Aayat Number 47 Me Bani Isra’il Ko Woh Ne’mat Yaad Dilaa’i Ga’i Jis Kee Ba-Daulat Unhe’n ‘Aalam Par Fazeelat Haasil Ho Ga’i Aur Phir Us Qaum Ko Fir’auni Daur Me Un Par Tootne Waale Hol-Naak Azaab Kee Taraf Mutawajje Kiya Gaya Jis Se Rihaa’i Un Ke Liye Ek Azeem Ne’mat Kee Soorat Me Saamne Aa’i. Is Ke Baa’d Farmaya :

وَإِذْ نَجَّيْنَاكُمْ مِنْ آلِ فِرْعَوْنَ يَسُومُونَكُمْ سُوءَ الْعَذَابِ.

“Aur (Ae Aale Ya’qoob! Apni Qaumi Taarikh Ka Woh Waaqe’a Bhi Yaad Karo) Jab Hum Ne Tumhe’n Qaume Fir’awn Se Najaat Bakhshi Jo Tumhe’n Intehaa’i Sakht Azaab Dete They.” [Al-Baqarah, 02 : 49.]

Is Qur’ani Irshaad Kee Raushni Me Ghulami Wa Mehkoomi Kee Zindagi Se Aazaadi Bohat Badi Ne’mat Hai Jis Par Shukr Baja Laana Aane Waali Naslo’n Par Waajib Hai. Is Se Istidlaal Karte Hu’e Hum Par Yeh Zimmedaari Aa’id Hoti Hai Ki Qaumi Aazaadi Ko Allah Ta’ala Kee Taraf Se ‘Ata Kee Hu’i Ne’mate Ghair Mutaraqqiba Samjhe’n Aur Us Par Shukraana Ada Kare’n. Mazkoora Baala Aayate Karima Is Amr Par Shaahid Hai Ki Ne’mat Ke Shukraane Ke Taur Par Baa Qaa’idagi Ke Saath Bil-Ehtemaam Khushi-o Masarrat Ka Izhaar Is Liye Bhi Zaroori Hai Ki Aa’inda Naslo’n Ko Is Ne’mat Kee Qadr-o Qeemat Aur Ahamiyyat Se Aagaahi Hoti Rahe.

Yoo’n To Insaan Saara Saal Ne’mate Ilaahi Par Khuda Kee Zaate Kareema Ka Shukr Ada Karta Rehta Hai Lekin Jab Gardishe Ayyaam Se Woh Din Do Baara Aata Hai Jis Me Min Hayth-ul-Qawm Is Par Allah Ta’ala Ka Karam Huwa Aur Mazkoora Ne’mat Is Ke Shareeke Haal Hoti To Khushi Kee Kaifiyyaat Khud Bakhud Jashn Kee Soorat Ikhtiyaar Kar Leti Hain. Qur’an Majeed Me Ja Baja Is Ka Tadhkira Hai Ki Jab Bani Isra’il Ko Fir’auni Zulm-o Sitam Aur Us Kee Cheera Dastiyo’n Se Aadaadi Mili Aur Woh Neel Ke Toofaani Maujo’n Se Mahfooz Ho Kar Waadi-e Seena Me Pahonche To Waha’n Un Ka Saamna Shadeed Garmi Aur Tez Chilchilaati Dhoop Se Huwa To Un Par Baadalo’n Ka Saa’ebaan Khada Kar Diya Gaya. Yeh Ek Ne’mat Thi Jis Ka Zikr Is Aaya-e Kareemah Me Kiya Gaya Hai :

وَظَلَّلْنَا عَلَيْكُمُ الْغَمَامَ وَأَنْزَلْنَا عَلَيْكُمُ الْمَنَّ وَالسَّلْوَى.

“Aur (Yaad Karo) Jab (Tum Fir’awn Ke Gharq Hone Ke Baa’d Shaam Ko Rawana Hu’e Aur Waadi-e Teeh Me Sargarda’n Phir Rahe They To) Hum Ne Tum Par Badal Ka Saaya Ki’e Rakkha Aur Hum Ne Tum Par Manna Wa Salwa Utaara.” [Al-Baqarah, 02 : 57.]

Qur’an Majeed Ne Deegar Maqaamat Par Khaas Khaas Ne’mat Ka Zikr Kar Ke Un Ayyaam Ke Hawaale Se Unhe’n Yaad Rakhne Ka Hukm Diya Hai. Phir Ne’mato’n Par Khushi Wa Masarrat Ka Izhaar Karna Sunnate Ambiya’ عَلَيْهِمُ السَلَام Bhi Hai. Hazrat ‘Isa عَلَيْهِ السَّلَام Ne Jab Apni Qaum Ke Liye Ne’mate Maa’idah Talab Kee To Apne Rabb Ke Huzoor Yoo’n ‘Arz Guzaar Hu’e :

رَبَّنَا أَنْزِلْ عَلَيْنَا مَائِدَةً مِنَ السَّمَاءِ تَكُونُ لَنَا عِيدًا لِأَوَّلِنَا وَآخِرِنَا وَآيَةً مِنْكَ.

“Ae Hamaare Rabb! Hum Par Aasmaan Se Khaane (Ne’mat) Naazil Farma De Ki (Us Ke Utarne Ka Din) Hamaare Liye Eid (Ya’ni Khushi Ka Din) Ho Jaae Hamaare Aglo’n Ke Liye (Bhi) Aur Hamaare Pichhlo’n Ke Liye (Bhi) Aur (Woh Khaan) Teri Taraf Se (Teri Qudrate Kaamila Kee) Nishaani Ho.” [Al-Ma’idah, 05 : 114.]

Qur’an Majeed Ne Is Aaya-e Karimah Ke Zari’e Apne Nabi Ke Hawaale Se Ummate Muslima Ko Yeh Tasawwur Diya Hai Ki Jis Din Ne’mate Ilaahi Ka Nuzool Ho Us Din Jashne Manaana Shukraana-e Ne’mat Kee Mustehsan Soorat Hai. Is Aayat Se Yeh Mafhoom Bhi Mutarashshih Hai Ki Kisi Ne’mat Ke Husool Par Khushi Wohi Manaate Hain Jin Ke Dil Me Apne Nabi Kee Mahabbat Jaaguzi’n Hoti Hai Aur Woh Is Ke Izhaar Me Nabi Ke Saath Shareek Hote Hain.

Allah Ta’ala Kee Kisi Ne’mat Par Shukr Baja Laane Ka Ek Ma’roof Tareeqa Yeh Bhi Hai Ki Insaan Husoole Ne’mat Par Khushi Ka Izhaar Kar Ne Ke Saath Us Ka Dusro’n Ke Saamne Zikr Bhi Karta Rahe Ki Yeh Bhi Shukraana-e Ne’mat Kee Ek Soorat Hai Aur Aisa Karna Qur’an Hakeem Ke Is Irshaad Se Saabit Hai :

وَأَمَّا بِنِعْمَةِ رَبِّكَ فَحَدِّثْ۝

“Aur Apne Rabb Kee Ne’mato’n Ka (Khoob) Tadhkira Kare’n۝” [Ad-Duha, 93 : 11.]

Is Me Pehle Zikre Ne’mat Ka Hukm Hai Ki Allah Ta’ala Kee ‘Ata Karda Ne’mat Ko Dil-o Jaan Se Yaad Rakkha Jaae Aur Zabaan Se Us Ka Zikr Kiya Jaae Lekin Yeh Zikr Kisi Aur Ke Liye Nahin Faqat Allah Ta’ala Ke Liye Ho. Is Ke Baa’d Tehdithe Ne’mat Ka Hukm Diya Ki Khule Bando’n Makhlooqe Khuda Ke Saamne Is Ko Yoo’n Bayaan Kiya Jaae Ki Ne’mat Kee Ahamiyyat Logo’n Par Aya’n Ho Jaae. Yaha’n Yeh Waazeh Rahe Ki Zikr Ka Ta’alluq Allah Ta’ala Se Aur Tehdithe Ne’mat Ka Ta’alluq Makhlooq Se Hai Kyoo’n Ki Is Ka Ziyaada Se Ziyaada Logo’n Me Charcha Kiya Jaa’e Jaisa Ki Qur’an Majeed Me Irshaad Huwa :

فَاذْكُرُونِي أَذْكُرْكُمْ وَاشْكُرُوا لِي وَلَا تَكْفُرُونِ ۝
“So Tum Mujhe Yaad Karo Mein Tumhe’n Yaad Rakkhunga Aur Mera Shukr Ada Kiya Karo Aur (Meri Ne’mato’n Ka) Inkaar Na Kiya Karo۝” [Al-Baqarah, 02 : 152.]

Is Aaya-e Karimah Me Talqeen Kee Ga’i Hai Ki Khaali Zikr Hee Na Karte Raho Balki Allah Ta’ala Kee Ne’mato’n Ka Zikr Shukraane Ke Saath Is Andaaz Me Karo Ki Makhlooqe Khuda Me Us Ka Khoob Charcha Ho. Is Par Mustazaad Izhaare Tashakkur Ka Ek Tareeqa Yeh Bhi Hai Ki Ne’mat Par Khushi Ka Izhaar Jashn Aur Eid Kee Soorat Me Kiya Jaae. Umume Saabiqa Bhi Jis Din Koi Ne’mat Unhe’n Mayassar Aati Us Din Ko Ba-Taure Eid Manaati Thi’n. Qur’an Majeed Me Hazrat ‘Isa عَلَيْهِ السَّلَام Kee Us Du’aa Ka Zikr Hai Jis Me Woh Bargahe Ilaahi Me Yoo’n Multaji Hote Hain :

رَبَّنَا أَنْزِلْ عَلَيْنَا مَائِدَةً مِنَ السَّمَاءِ تَكُونُ لَنَا عِيدًا لِأَوَّلِنَا وَآخِرِنَا.

“Ae Hamaare Rabb! Hum Par Aasmaan Se Khaane (Ne’mat) Naazil Farma De Ki (Us Ke Utarne Ka Din) Hamaare Liye Eid (Ya’ni Khushi Ka Din) Ho Jaae Hamaare Aglo’n Ke Liye (Bhi) Aur Hamaare Pichhlo’n Ke Liye (Bhi).” [Al-Ma’idah, 05 : 114.]

Yaha’n Ma’idah Jaisi Aarizi Ne’mat Par Eid Manaane Ka Zikr Hai. Isaa’i Log Aaj Tak Itwaar Ke Din Us Ne’mat Ke Husool Par Ba-Taur Shukraana Eid Manaate Hain. Yeh Hamaare Liye Lamha-e Fikriyya Hai Ki Kya Nuzool Maa’idah Jaisi Ne’mat Kee Wilaadato-o Be’thate Mustafa صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Se Koi Nisbat Ho Sakti Hai? Is Ne’mate Uzma Par To Maa’idah Jaisi Karodo’n Ne’matein Nithaar Kee Jaa Sakti Hain.

‘Sahih Bukhari’ Aur ‘Sahih Muslim’ Me Hazrat Umar رَضِىَ اللهُ تَعَالىٰ عَنْهُ Kee Yeh Muttafaqun ‘Alayh Riwaayat Maujood Hai Ki Jab Ek Yahoodi Ne Un Se Puchha Ki Kya Aap Jis Din Aayat – الْيَوْمَ أَكْمَلْتُ لَكُمْ دِينَكُمْ – Naazil Hu’i Us Din Ko Bature Eid Manaate Hain? Agar Hamaari Tawraat Me Aisi Aayat Utarti To Hum Use Zaroor Yawme Eid Bana Lete. Is Ke Jawaab Me Hazrat Umar رَضِىَ اللهُ تَعَالىٰ عَنْهُ Ne Farmaya : Hum Us Din Aur Jagah Ko Jaha’n Yeh Aayat Utri Thi Khoob Pehchaante Hain. Yeh Aayat Yawme Hajj Aur Yawme Jumu’at-ul-Mubarak Ko Maidaane Arafaat Me Utri Thi Aur Hamaare Liye Yeh Dono’n Din Eid Ke Din Hain.





Is Par Sawaal Kiya Jaa Sakta Hai Ki Agar Takmeele Din Kee Aayat Ke Nuzool Ka Din Ba-Taure Eid Mana Ne Ka Jawaaz Hai To Jis Din Khud Mohsine Insaaniyyat صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Is Dunya Me Tashreef Laa’e Ise Ba-Taure Eide Milaad Kyoo’n Nahin Manaaya Ja Sakta? Yehi Sawaal Fazeelate Yawme Jumu’ah Ke Baab Me Arbaabe Fikr-o Nazar Ko Ghaur Kar Ne Kee Da’wat Deta Hai.

Riwaayat Me Yeh Bhi Mazkoor Hai Ki Huzoor Nabiyye Akram صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Ne Apne Milad Kee Khushi Me Bakre Dhab’h Kar Ke Ziyaafat Ka Ehtemaam Farmaya. Hazrat Anasرَضِىَ اللهُ تَعَالىٰ عَنْهُ Kee Riwaayat Ke Mutaabiq Huzoor Nabiyye Akram صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Ne Baa’d Az Be’that Apna Aqiqa Kiya. Is Par Imam Suyooti (849_911 Hijri) Ka Istidlaal Hai Ki Huzoor Nabiyye Akram صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Ka Aqiqa Aap صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّمKe Daada Hazrat Abd-ul-Muttalib Aap Kee Wilaadat Ke Saat Din Baa’d Kar Chuke They Aur Aqiqa Zindagi Me Sirf Ek Baar Kiya Jata Hai. Is Liye Aap صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Ne Yeh Ziyaafat Apne Milaad Ke Liye Dee Thi, Aqiqa Ke Liye Nahin.

Kaa’enaat Me Huzoor صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Se Badi Ne’mate Ilahiyyah Ka Tasawwur Bhi Muhaal Hai. Is Par Jo Ghair Ma’mooli Khushi Aur Sarwar-o Imbisaat Ka Izhaar Kiya Gaya Is Ka Kuchh Andaaza Kutube Siyar-o Tarikh Ke Mutaala’a Se Hota Hai. In Kitabo’n Me Faza’il-o Shama’il Aur Khasa’is Ke Hawaale Se Bohat See Riwaayat Milti Hain Jin Se Yeh Waazeh Hota Hai Ki Khud Allah Tabarak Wa Ta’ala Ne Apne Habib Muhammad Mustafaصَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Kee Wilaadat Mubaaraka Par Khushi Manaa’i.

Riwaayat Shaahid Hain Ki Wilaadate Mustafa صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Ka Poora Saal Nadir-ul-Wuqoo’ Mazaahir Aur Muhayyir-ul-Uqool Waaqe’aat Ka Saal Tha. Us Me Allah Ta’ala Kee Khusoosi Rahmato’n Ka Nuzool Jaari Raha Yaha’n Tak Ki Woh Sa’iyd Saa’atein Jin Ka Sadiyo’n Se Intezaar Tha Gardishe Maah-o Saal Kee Karwate’n Badalte Badalte Us Lamha-e Muntazar Me Simat Aa’ein Jis Me Khaaliqe Kaa’enaat Ke Behtareen Shaahkaar Ko Manassa-e Shuhood Par Bil-Aakhir Apne Sarmadi Husn-o Jamaal Ke Saath Jalwa Gar Hona Tha. Allah Ta’ala Ne Apne Habib صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Kee Dunya Me Aamad Ke Mauqa Par Is Qadr Charaaghaa’n Kiya Ki Sharq Taa Gharb Saare Aafaaq Raushan Ho Ga’e. Muta’addad Kutube Ahadith Me Hazrat Uthman Bin Abi Al-Aas رَضِىَ اللهُ تَعَالىٰ عَنْهُ Riwaayat Karte Hain Ki Un Kee Waalida Ne Un Se Bayaan Kiya : “Jab Wilaadate Nabawi صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Ka Waqt Aaya To Mein Sayyidah Aaminah رَضِىَ اللهُ تَعَالىٰ عَنْهَا Ke Paas Thi. Mein Dekh Rahi Thi Ki Sitaare Aasmaan Se Neeche Dhalak Kar Qareeb Ho Rahe Hain Yaha’n Tak Ki Mein Ne Mahsoos Kiya Ki Woh Mere Oopar Gir Padenge. Phir Jab Aap صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Kee Wilaadat Baa Sa’aadat Hu’i To Sayyidah Aaminah Se Aisa Noor Nikla Jis Se Poora Ghar Jis Me Hum They Aur Haweli Jagmag Kar Ne Lagi Aur Mujhe Har Ek Shai Me Noor Hee Noor Nazar Aaya.”
Hazrat Aboo Umamah رَضِىَ اللهُ تَعَالىٰ عَنْهُ Bayaan Karte Hain Ki Unhone Bargahe Risalat Ma’aab صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Me ‘Arz Kiya : Ya RasoolAllah! Aap Kee Nubuwwate Mubaraka Kee Shuroo’at Kaisi Hu’i? Huzoor Nabiyye Akram صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Ne Farmaya : “Mein Apne Baap Ibrahim Kee Du’aa Aur ‘Isa Kee Bashaarat Hoo’n. Aur (Meri Wilaadat Ke Waqt) Meri Waalida Maajida Ne Dekha Ki Un Ke Jisme At’har Se Ek Noor Nikla Jis Se Shaam Ke Mahallaat Raushan Ho Ga’e.” (Musnad Ahmad)

Hazrat Aaminah Apne Azeem Nau-Nihaal Ke Waaqe’aate Wilaadat Bayaan Karte Hu’e Farmati Hain : “Jab Sarware Ka’enatصَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Ka Zahoor Huwa To Saath Hee Aisa Noor Nikla Jis Se Sharq Ta Gharb Sab Aafaaq Raushan Ho Ga’e.” (Tabaqat Ibn Sa’d)
Ek Riwayat Me Sayyidah Aaminah رَضِىَ اللهُ تَعَالىٰ عَنْهَا Se Marwi Hai Ki Waqte Wilaadat Un Se Aisa Noor Namoodaar Huwa Jis Se Un Kee Nigaaho’n Par Shaam Ke Mahallaat Aur Baazaar Raushan Ho Ga’e Yaha’n Tak Unhone Busra Me Chalne Waale Oonto’n Kee Gardanein Bhi Dekh Le’n. (Tabaqat Ibn Sa’d)

Ahadith Me Yawme Aashoora Ke Hawaale Hai Jashne Milaad Ko Eid Masarrat Ke Taur Par Manaane Par Muhaddithin Ne Istidlaal Kiya Hai. Yawme Aashoora Ko Yahoodi Manaate Hain Aur Yeh Woh Din Hai Jab Hazrat Moosa عَلَيْهِ السَّلَام Kee Qaum Bani Isra’il Ko Fir’awn Ke Jabar-o Istibraad Se Najaat Mili. Is Tarah Yeh Din Un Liye Yawme Fat’h Aur Aazaadi Ka Din Hai Jis Me Woh Ba-Taur Shukraana Roza Rakhte Hain Aur Khushi Manaate Hain. Muttafaqun ‘Alayh Riwaayat Me Hai Ki Hijrat Ke Baa’d Jab Huzoor صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Me Yahoode Madinah Ka Yeh Amala Dekha To Farmaya : Moosa Par Mera Haqq Nabi Hone Ke Naate In Se Ziyaada Hai. Chunanche Aapصَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Ne Aashoora Ke Din Izhaare Tashakkur Ke Taur Par Khud Bhi Roza Rakkha Aur Apne Sahaba-e Kiramرِضْوَانُ اللهِ تَعَالىٰ عَلَيْهِمْ اَجْمَعِيْنَ Ko Bhi Roza Rakhne Ka Hukm Farmaya. Is Par Bhi Bohat See Riwaayat Hain Jis Se Yeh Istidlaal Kiya Jaata Hai Ki Agar Yahood Apne Paighambar Kee Fat’h Aur Apni Aazaadi Ka Din Jashn Eid Ke Taur Par Mana Sakte Hain To Hum Musalmano’n Ko Badarja Aula Is Ka Haqq Pahonchta Hai Ki Hum Huzoor Nabiyye Rahmat صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Kee Wilaadat Ka Jashn Mithaali Josh-o Kharosh Se Manaaein Jo Allah Ka Fazl Aur Rahmat Ban Kar Poori Nasl Insaaniyyat Ko Har Qism Ke Mazaalim Aur Naa-Insaafiyo’n Se Najaat Dilaane Ke Liye Is Dunya Me Tashreef Laa’e.

وَيَضَعُ عَنْهُمْ إِصْرَهُمْ وَالْأَغْلَالَ الَّتِي كَانَتْ عَلَيْهِمْ.
“Aur Un Se Un Ke Baare Gara’n Aur Tauqe(Quyood) – Jo Un Par (Nafarmaniyo’n Ke Baa’ith Musallat) They – Saaqit Farmaate (Aur Unhe’n Ne’mate Aazaadi Se Bahra Yaab Karte) Hain.” [Al-A’raf, 07 : 157.]

Aakhiri Baat Yeh Ki Is Kaa’enaate Arzi Mein Ek Momin Ke Liye Sab Se Badi Khushi Is Ke Siwa Aur Kya Ho Sakti Hai Ki Jab Huzoor Nabiyye Akram صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Ka Maahe Wilaadat Aae To Use Yoo’n Mahisoos Hone Lage Ki Kaa’enaat Kee Saari Khushiya’n Hech Hain Aur Us Ke Liye Milade Mustafa صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Kee Khushi Hee Haqiqi Khushi Hai. Jis Tarah Ummame Saabiqa Par Is Se Badarjaha Kam Tar Ehsaan Aur Ne’mat ‘Ata Hone Kee Soorat Me Waajib Kiya Gaya Tha Jab Ki Un Ummato’n Par Jo Ne’mat Hu’i Woh Aarizi Aur Waqti Thi Us Ke Muqabale Me Jo Daa’imi Aur Abadi Ne’mate Uzma Huzoor Nabiyye Akram صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Ke Zahoore Qudsi Kee Soorat Me Ummate Muslima Par Hu’i Hai Is Ka Taqaaza Hai Ki Woh Ba-Darja-e Atam Saraapa Tashkkur-o Imtenaan Ban Jaae Aur Izhaare Khushi-o Masarrat Me Koi Kasar Na Utha Rakkhe.

Qur’an Majeed Ne Bade Baligh Andaaz Se Jumla Nau’e Insaani Ko Us Ne’mat Aur Fazl-o Rahmat Ko Yaad Rakhne Ka Hukm Diya Hai Jo Mohsine Insaniyyat Paighambare Rahmat Huzoor Nabiyye Akram صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Kee Soorat Me Unhe’n ‘Ata Hu’i Aur Jis Ne Un Andhero’n Ko Chaak Kar Diya Jo Sadiyo’n Se Shabe Taarik Kee Tarh Un Par Musallat They Aur Nafrat-o Bughz Kee Woh Deewaarein Jo Unhe’n Qabilo’n Aur Giroho’n Me Munqasim Ki’e Hu’e Thi’n. Irshaade Baari Ta’ala Hai :

وَاذْكُرُوا نِعْمَةَ اللَّهِ عَلَيْكُمْ إِذْ كُنْتُمْ أَعْدَاءً فَأَلَّفَ بَيْنَ قُلُوبِكُمْ فَأَصْبَحْتُمْ بِنِعْمَتِهِ إِخْوَانًا.

“Aur Apne Oopar (Kee Ga’i) Allah Kee Us Ne’mat Ko Yaad Karo Ki Jab Tum (Ek Dusre Ke) Dushman They To Us Ne Tumhare Dilo’n Me Ulfat Paida Kar Dee Aur Tum Us Kee Ne’mat Ke Baa’ith Aapas Me Bhaa’i Bhaa’i Ho Ga’e.” [Aali Imra, 03 : 103.]

Un Toote Hu’e Dilo’n Ko Phir Se Jodna Aur Giroho’n Me Bati Hu’i Insaaniyyat Ko Rishta Ukhuwwat-o Mahabbat Me Paro Dena Itna Bada Waaqe’a Hai Jis Kee Koi Nazeer Taarikhe ‘Aalam Pesh Kar Ne Se Qaasir Hai. Lehaaza Milaade Mustafa صَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Par Khushi Manaana Aur Shukre Ilaahi Baja Laana Ummate Muslima Par Sab Khushiyo’n Se Badh Kar Waajib Ka Darja Rakhta Hai.



Shaykh-ul-Islam Doctor Muhammad Tahir-ul-Qadri Ke Is Majmoo’a-e Hadith Me Taajdare Kaa’enaatصَلَّى اللهُ تَعَالىٰ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّم Kee Wilaadat Baa Sa’aadat Mubaaraka Ma’a Tarjuma-o Takhrij Aur Zaroori Sharh Darj Kee Ga’i Hain. Du’aa Hai Ki Yeh Majmoo’a-e Ahadith Ahle Imaan Ke Dilo’n Me Mahabbat-o Ishqe Rasool Kee Ziya’ Baariyo’n Me Mazeed Izaafa Kare. (Aameen Bijaahi Syyid-il-Mursaleen SallAllahu Ta’ala ‘Alayhi Wa-Aalihi Wa-Sallam)



(Hafiz Zahir Ahmad Al-Isnadi)

Research Scholar, Fareede Millat Research Institute



*حرف آغاز*

جشنِ میلاد النبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم منانا حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی ولادت باسعات کی تاریخی خوشی میں مسرت و شادمانی کا اظہار ہے اور صحیح بخاری کی روایت سے یہ بات واضح ہے کہ یہ ایسا مبارک عمل ہے جس سے ابو لہب جیسے کافر کو بھی فائدہ پہنچتا ہے حالانکہ اُس کی مذمت میں پوری سورت نازل ہوئی ہے۔ اگر ابو لہب جیسے کافر کو میلاد النبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی خوشی میں ہر پیر کو عذاب میں تخفیف نصیب ہوسکتی ہے تو اُس مومن مسلمان کی سعادت کا کیا ٹھکانا ہوگا جس کی زندگی میلاد النبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی خوشیاں منانے میں بسر ہوتی ہو۔

حضور سرورِ کائنات صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم خود بھی اپنے یومِ ولادت کی خوشی مناتے اور اِس کائنات میں اپنے ظہور وجود پر باگاہِ ربّ العزت میں سپاس گزار ہوتے ہوئے پیر کے دن روزہ رکھتے۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا اپنے یوم ولادت کی تعظیم و تکریم فرماتے ہوئے تحدیثِ نعمت کا شکر بجا لانا حکم خداوندی تھا کیوں کہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ہی کے وجودِ مسعود کے تصدق اور وسیلہ سے ہر وجود کو سعادت ملی ہے۔

جشنِ میلاد النبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا عمل مسلمانوں کو حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر درود و سلام جیسے اَہم فرائض کی طرف رغبت دلاتا ہے اور قلب و نظر میں ذوق و شوق کی فضاء ہموار کرتا ہے۔ صلوٰۃ و سلام بذات خود شریعت میں بے پناہ نوازشات و برکات کا باعث ہے۔ اس لیے جمہور اُمت نے میلاد النبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا اِنعقاد مستحسن سمجھا۔

سیرتِ طیبہ کی اَہمیت اُجاگر کرنے اور جذبۂ محبتِ رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے فروغ کے لیے محفلِ میلاد کلیدی کردار ادا کرتی ہے۔ اِسی لیے جشنِ میلاد النبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم میں فضائل، شمائل، خصائل اور معجزاتِ سید المرسلین صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا تذکرہ اور اُسوۂ حسنہ کا بیان ہوتا ہے۔

جشنِ میلاد النبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا ایک اَہم مقصد محبت و قربِ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا حصول و فروغ اور آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی ذاتِ گرامی سے مسلمانوں کے تعلق کا اِحیاء ہے اور یہ اِحیاء منشاءِ شریعت ہے۔ چونکہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی ذاتِ اَقدس اُمتِ مسلمہ کے ایمان کا مرکز و محور اور حقیقی اَساس ہے۔ اُمتِ مسلمہ کی بقا و سلامتی اور ترقی کا راز ہی اِس اَمر پر منحصر ہے کہ وہ فقط ذاتِ مصطفی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو اپنی جملہ عقیدتوں، محبتوں اور تمناؤں کا مرکز و محور گردانے اور یہ بات قطعی طور پر جان لے کہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی نسبت کے اِستحکام اور واسطہ کے بغیر دنیا و آخرت میں کوئی عزت و سرفرازی نصیب نہیں ہو سکتی ہے۔

حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے فضائل و کمالات کی معرفت ایمان باللہ اور ایمان بالرسالت میں اِضافہ کا محرک بنتی ہے۔ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی تعظیم و توقیر ایمان کا پہلا بنیادی تقاضا ہے اور میلادِ مصطفی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے سلسلہ میں مسرت و شادمانی کا اظہار کرنا، محافلِ ذکر و نعت کا انعقاد کرنا اور کھانے کا اہتمام کرنا اللہ تعالیٰ کے حضور شکر گزاری کے سب سے نمایاں مظاہر میں سے ہے۔ اللہ تعالیٰ نے حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو ہمارے لیے مبعوث فرما کر ہمیں اپنے بے پایاں احسانات و عنایات اور نوازشات کا مستحق ٹھہرایا ہے۔ اس لیے اللہ تعالیٰ نے اس احسانِ عظیم کو جتلایا ہے۔

جس طرح ماہِ رمضان المبارک کو اللہ ربّ العزت نے قرآن حکیم کی عظمت و شان کے طفیل دیگر تمام مہینوں پر امتیاز عطا فرمایا ہے اُسی طرح ماہ ربیع الاوّل کے اِمتیاز اور اِنفرادیت کی وجہ بھی اس میں صاحبِ قرآن کی تشریف آوری ہے۔ یہ ماہِ مبارک حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی ولادت با سعادت کے صدقے جملہ مہینوں پر نمایاں فضیلت اور امتیاز کا حامل ہے۔ شبِ میلادِ رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم لیلۃ القدر سے بھی افضل ہے۔ لیلۃ القدر میں نزولِ قرآن ہوا تو شبِ میلاد میں صاحبِ قرآن کی آمد ہوئی۔ لیلۃ القدر کی فضیلت اس لیے ہے کہ وہ نزولِ قرآن اور نزولِ ملائکہ کی رات ہے اور نزولِ قرآن قلبِ مصطفی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر ہوا ہے۔ اگر حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نہ ہوتے تو نہ قرآن ہوتا، نہ شبِ قدر ہوتی، نہ کوئی اور رات ہوتی۔ یہ ساری فضیلتیں اور عظمتیں میلادِ مصطفی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا صدقہ ہیں۔

اس کائناتِ انسانی پر اﷲ تعالیٰ نے بے حد و حساب احسانات و انعامات فرمائے اور اس نے ہمیں لاتعداد نعمتوں سے نوازا جن میں سے ہر نعمت دوسری سے بڑھ کر ہے لیکن اس نے کبھی کسی نعمت پر احسان نہیں جتلایا۔

اﷲ تعالیٰ نے ہمیں لذت و توانائی سے بھرپور طرح طرح کے کھانے عطا کیے، پینے کے لیے خوش ذائقہ مختلف مشروبات دیے، دن رات کا ایک ایسا نظام الاوقات دیا جو سکون و آرام فراہم کرنے کے ساتھ ساتھ ہماری ضروریاتِ زندگی کی کفالت کرتا ہے، سمندروں، پہاڑوں اور خلائے بسیط کو ہمارے لیے مسخر کر دیا، ہمیں اشرف المخلوقات بنایا اور ہمارے سر پر بزرگی و عظمت کا تاج رکھا؛ والدین، بہن، بھائی اور اولاد جیسی نعمتوں کی اَرزانی فرمائی الغرض اپنی ایسی ایسی عطاؤں اور نوازشوں سے فیض یاب کیا کہ ہم ان کا ادراک کرنے سے بھی قاصر ہیں لیکن ان سب کے باوجود اس نے بطور خاص ایک بھی نعمت کا احسان نہیں جتلایا۔ لیکن ایک نعمت ایسی تھی کہ خدائے بزرگ و برتر نے جب اسے اپنے حریمِ کبریائی سے نوعِ اِنسانی کی طرف بھیجا تو پوری کائناتِ نعمت میں صرف اس پر اپنا اِحسان جتلایا اور اس کا اظہار بھی عام پیرائے میں نہیں کیا بلکہ اہلِ ایمان کو اس کا احساس دلایا۔ مومنین سے روئے خطاب کر کے ارشاد فرمایا:

لَقَدْ مَنَّ ﷲُ عَلَی الْمُؤْمِنِیْنَ اِذْ بَعَثَ فِیْهِمْ رَسُوْلًا مِّنْ اَنْفُسِهِمْ.

’’بے شک اﷲ تعالیٰ نے مسلمانوں پر بڑا احسان فرمایا کہ اُن میں اُنہی میں سے عظمت والا رسول ( صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ) بھیجا۔‘‘

(آل عمران، 3: 164)

اِسلام میں اﷲ کی نعمتوں اور اُس کے فضل و کرم پر شکر بجا لانا تقاضائے عبودیت و بندگی ہے، لیکن قرآن نے ایک مقام پر اس کی جو حکمت بیان فرمائی ہے وہ خاصی معنی خیز ہے۔ ارشاد فرمایا:

لَئِنْ شَکَرْتُمْ لَاَزِیْدَنَّکُمْ وَلَئِنْ کَفَرْتُمْ اِنَّ عَذَابِیْ لَشَدِیْدٌo

(إبراهیم، 14: 7)

’’اگر تم شکر ادا کرو گے تو میں تم پر (نعمتوں میں) ضرور اِضافہ کروں گا اور اگر تم ناشکری کرو گے تو میرا عذاب یقینا سخت ہے۔‘‘

اِس آیہ کریمہ کی رُو سے نعمتوں پر شکر بجا لانا مزید نعمتوں کے حصول کا پیش خیمہ بن جاتا ہے۔ پھر نعمتوں پر شکرانہ صرف اُمتِ محمدیہ پر ہی واجب نہیں بلکہ اُمم سابقہ کو بھی اس کا حکم دیا جاتا رہا۔ سورۃ البقرہ کی آیت نمبر 47 میں بنی اسرائیل کو وہ نعمت یاد دلائی گئی جس کی بدولت انہیں عالم پر فضیلت حاصل ہوگئی اور پھر اس قوم کو فرعونی دور میں ان پر ٹوٹنے والے ہول ناک عذاب کی طرف متوجہ کیا گیا جس سے رہائی ان کے لیے ایک عظیم نعمت کی صورت میں سامنے آئی۔ اِس کے بعد فرمایا:

وَاِذْ نَجَّیْنٰـکُمْ مِّنْ اٰلِ فِرْعَوْنَ یَسُوْمُونَکُمْ سُوْٓءَ الْعَذَابِ.

(البقرة، 2: 49)

’’اور (اے آلِ یعقوب! اپنی قومی تاریخ کا وہ واقعہ بھی یاد کرو) جب ہم نے تمہیں قومِ فرعون سے نجات بخشی جو تمہیں اِنتہائی سخت عذاب دیتے تھے۔‘‘

اِس قرآنی اِرشاد کی روشنی میں غلامی و محکومی کی زندگی سے آزادی بہت بڑی نعمت ہے جس پر شکر بجا لانا آنے والی نسلوں پر واجب ہے۔ اِس سے اِستدلال کرتے ہوئے ہم پر یہ ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ قومی آزادی کو اﷲ تعالیٰ کی طرف سے عطا کی ہوئی نعمتِ غیر مترقبہ سمجھیں اور اس پر شکرانہ ادا کریں۔ مذکورہ بالا آیت کریمہ اِس اَمر پر شاہدہے کہ نعمت کے شکرانے کے طور پر باقاعدگی کے ساتھ بالاہتمام خوشی و مسرت کا اظہار اس لیے بھی ضروری ہے کہ آئندہ نسلوں کو اِس نعمت کی قدر و قیمت اور اَہمیت سے آگاہی ہوتی رہے۔

یوں تو اِنسان سارا سال نعمتِ اِلٰہی پر خدا کی ذات کریمہ کا شکر ادا کرتا رہتا ہے لیکن جب گردشِ اَیام سے وہ دن دوبارہ آتا ہے جس میں من حیث القوم اس پر اﷲ تعالیٰ کا کرم ہوا اور مذکورہ نعمت اس کے شریک حال ہوئی تو خوشی کی کیفیات خود بخود جشن کی صورت اختیار کر لیتی ہیں۔ قرآن مجید میں جا بجا اس کا تذکرہ ہے کہ جب بنی اسرائیل کو فرعونی ظلم و ستم اور اس کی چیرہ دستیوں سے آزادی ملی اور وہ نیل کی طوفانی موجوں سے محفوظ ہو کر وادیٔ سینا میں پہنچے تو وہاں ان کا سامنا شدید گرمی اور تیز چلچلاتی دھوپ سے ہوا تو ان پر بادلوں کا سائبان کھڑا کر دیا گیا۔ یہ ایک ایسی نعمت تھی جس کا ذکر اس آیہ کریمہ میں کیا گیا ہے:

وَظَلَّلْنَا عَلَیْکُمُ الْغَمَامَ وَاَنْزَلْنَا عَلَیْکُمُ الْمَنَّ وَالسَّلْوٰی.

(البقرة، 2: 57)

’’اور (یاد کرو) جب (تم فرعون کے غرق ہونے کے بعد شام کو روانہ ہوئے اور وادیٔ تِیہ میں سرگرداں پھر رہے تھے تو) ہم نے تم پر بادل کا سایہ کیے رکھا اور ہم نے تم پر مَنّ و سلوٰی اتارا۔‘‘

قرآن مجید نے دیگر مقامات پر خاص خاص نعمتوں کا ذکر کرکے ان ایام کے حوالے سے انہیں یاد رکھنے کا حکم دیا ہے۔ پھر نعمتوں پر خوشی و مسرت کا اظہار کرنا سنت انبیاء علیھم السلام بھی ہے۔ حضرت عیسیٰ ں نے جب اپنی قوم کے لیے نعمتِ مائدہ طلب کی تو اپنے ربّ کے حضور یوں عرض گزار ہوئے:

رَبَّنَـآ اَنْزِلْ عَلَیْنَا مَـآئِدَةً مِّنَ السَّمَآءِ تَکُوْنُ لَنَا عِیْدًا لِّـاَوَّلِنَا وَاٰخِرِنَا وَاٰیَةً مِّنْکَ.
’’اے ہمارے ربّ! ہم پر آسمان سے خوانِ (نعمت) نازل فرما دے کہ (اس کے اترنے کا دن) ہمارے لیے عید (یعنی خوشی کا دن) ہوجائے ہمار ے اگلوں کے لیے (بھی) اور ہمارے پچھلوں کے لیے (بھی) اور (وہ خوان) تیری طرف سے (تیری قدرتِ کاملہ کی) نشانی ہو۔‘‘

(المائدة، 5: 114)

قرآن مجید نے اس آیہ کریمہ کے ذریعے اپنے نبی کے حوالے سے اُمتِ مسلمہ کو یہ تصور دیاہے کہ جس دن نعمتِ اِلٰہی کا نزول ہو اس دن جشن منانا شکرانۂ نعمت کی مستحسن صورت ہے۔ اِس آیت سے یہ مفہوم بھی مترشح ہے کہ کسی نعمت کے حصول پر خوشی وہی مناتے ہیں جن کے دل میں اپنے نبی کی محبت جاگزیں ہوتی ہے اور وہ اِس کے اِظہار میں نبی کے ساتھ شریک ہوتے ہیں۔

اﷲ تعالیٰ کی کسی نعمت پر شکربجالانے کا ایک معروف طریقہ یہ بھی ہے کہ انسان حصولِ نعمت پر خوشی کا اظہار کرنے کے ساتھ اس کا دوسروں کے سامنے ذکر بھی کرتا رہے کہ یہ بھی شکرانۂ نعمت کی ایک صورت ہے اور ایسا کرنا قرآن حکیم کے اس ارشاد سے ثابت ہے:

وَاَمَّا بِنِعْمَةِ رَبِّکَ فَحَدِّثْo

’’اور اپنے رب کی نعمتوں کا (خوب) تذکرہ کریں۔‘‘

(الضحی، 93: 11)

اِس میں پہلے ذکرِ نعمت کا حکم ہے کہ اﷲ تعالیٰ کی عطا کردہ نعمت کو دل وجان سے یاد رکھا جائے اور زبان سے اس کا ذکر کیا جائے لیکن یہ ذکر کسی اور کے لیے نہیںفقط اﷲ تعالیٰ کے لیے ہو۔ اس کے بعد تحدیثِ نعمت کا حکم دیا کہ کھلے بندوں مخلوقِ خدا کے سامنے اس کو یوں بیان کیا جائے کہ نعمت کی اَہمیت لوگوں پر عیاں ہوجائے۔ یہاں یہ واضح رہے کہ ذکر کا تعلق اﷲ تعالیٰ سے اور تحدیثِ نعمت کا تعلق مخلوق سے ہے کیوں کہ اس کا زیادہ سے زیادہ لوگوں میں چرچا کیا جائے جیسا کہ قرآن مجید میں ارشاد ہوا:

فَاذْکُرُوْنِیْٓ اَذْکُرْکُمْ وَاشْکُرُوْا لِیْ وَ لَا تَکْفُرُوْنِo

(البقرة، 2: 152)

’’سو تم مجھے یاد کیا کرو میں تمہیں یاد رکھوں گا اور میرا شکر ادا کیا کرو اور (میری نعمتوں کا) اِنکار نہ کیا کرو۔‘‘

اس آیۂ کریمہ میں تلقین کی گئی ہے کہ خالی ذکر ہی نہ کرتے رہو بلکہ اﷲ تعالیٰ کی نعمتوں کا ذکر شکرانے کے ساتھ اس انداز میں کرو کہ مخلوقِ خدا میں اس کا خوب چرچا ہو۔ اس پر مستزاد اظہارِ تشکر کا ایک طریقہ یہ بھی ہے کہ نعمت پر خوشی کا اظہار جشن اور عید کی صورت میں کیا جائے۔ اُممِ سابقہ بھی جس دن کوئی نعمت انہیں میسر آتی اس دن کو بطورِ عید مناتی تھیں۔ قرآن مجید میں حضرت عیسیٰ ں کی اس دعا کا ذکر ہے جس میں وہ بارگاہِ اِلٰہی میں یوں ملتجی ہوتے ہیں:

رَبَّنَـآ اَنْزِلْ عَلَیْنَا مَـآئِدَةً مِّنَ السَّمَآءِ تَکُوْنُ لَنَا عِیْدًا لِّـاَوَّلِنَا وَاٰخِرِنَا.

(المائدة، 5: 114)

’’اے ہمارے ربّ! ہم پر آسمان سے خوانِ (نعمت) نازل فرما دے کہ (اس کے اترنے کا دن) ہمارے لیے عید (یعنی خوشی کا دن) ہوجائے ہمار ے اگلوں کے لیے (بھی) اور ہمارے پچھلوں کے لیے (بھی)۔‘‘

یہاں مائدہ جیسی عارضی نعمت پر عیدمنانے کا ذکرہے۔ عیسائی لوگ آج تک اتوار کے دن اس نعمت کے حصول پر بطورشکرانہ عید مناتے ہیں۔ یہ ہمارے لیے لمحۂ فکریہ ہے کہ کیا نزولِ مائدہ جیسی نعمت کی ولادت و بعثتِ مصطفی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے کوئی نسبت ہو سکتی ہے؟ اس نعمتِ عظمیٰ پر تو مائدہ جیسی کروڑوں نعمتیں نثار کی جاسکتی ہیں۔

’صحیح بخاری‘ اور ’صحیح مسلم‘ میں حضرت عمر رضی اللہ عنہ کی یہ متفق علیہ روایت موجود ہے کہ جب ایک یہودی نے ان سے پوچھا کہ کیا آپ جس دن آیت – اَلْیَومَ اَکْمَلْتُ لَکُمْ دِیْنَکُمْ – نازل ہوئی اس دن کو بطور عید مناتے ہیں؟ اگرہماری تورات میں ایسی آیت اترتی تو ہم اسے ضرور یومِ عید بنا لیتے۔ اس کے جواب میں حضرت عمر ص نے فرمایا: ہم اس دن اور جگہ کو جہاں یہ آیت اتری تھی خوب پہچانتے ہیں۔ یہ آیت یومِ حج اور یومِ جمعۃ المبارک کو میدانِ عرفات میں اتری تھی اور ہمارے لیے یہ دونوں دن عید کے دن ہیں۔

اس پر سوال کیا جاسکتا ہے کہ اگر تکمیلِ دین کی آیت کے نزول کا دن بطورِ عید منانے کا جواز ہے تو جس دن خود محسنِ انسانیت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم اس دنیامیں تشریف لائے اسے بطور عید میلاد کیوں نہیں منایا جاسکتا؟ یہی سوال فضیلتِ یومِ جمعہ کے باب میں اَربابِ فکر و نظر کو غور کرنے کی دعوت دیتا ہے۔

رِوایات میں یہ بھی مذکور ہے کہ حضورنبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اپنے میلاد کی خوشی میں بکرے ذبح کرکے ضیافت کا اہتمام فرمایا۔ حضرت انس ص کی روایت کے مطابق حضورنبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے بعد اَز بعثت اپنا عقیقہ کیا۔ اس پر امام سیوطی (849-911ھ) کا اِستدلال ہے کہ حضورنبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا عقیقہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے دادا حضرت عبد المطلب آپ کی ولادت کے سات دن بعد کرچکے تھے اور عقیقہ زندگی میں صرف ایک بار کیاجاتاہے۔ اس لیے آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے یہ ضیافت اپنے میلاد کے لیے دی تھی، عقیقہ کے لیے نہیں۔

کائنات میں حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے بڑی نعمتِ اِلٰہیہ کا تصور بھی محال ہے۔ اس پر جو غیر معمولی خوشی اور سرور و اِنبساط کا اظہار کیا گیا اس کا کچھ اندازہ کتبِ سیر و تاریخ کے مطالعہ سے ہوتا ہے۔ ان کتابوں میں فضائل و شمائل اور خصائص کے حوالے سے بہت سی روایات ملتی ہیں جن سے یہ واضح ہوتا ہے کہ خود اﷲ تبارک و تعالیٰ نے اپنے حبیب محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی ولادت مبارکہ پر خوشی منائی۔

روایات شاہد ہیں کہ ولادتِ مصطفی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا پورا سال نادر الوقوع مظاہر اور محیر العقول واقعات کا سال تھا۔ اس میں اﷲ تعالیٰ کی خصوصی رحمتوں کا نزول جاری رہا یہاں تک کہ وہ سعید ساعتیں جن کا صدیوں سے انتظار تھا گردشِ ماہ و سال کی کروٹیں بدلتے بدلتے اس لمحۂ منتظر میں سمٹ آئیں جس میں خالق کائنات کے بہترین شاہکار کو منصہ شہود پر بالآخر اپنے سرمدی حسن و جمال کے ساتھ جلوہ گر ہونا تھا۔ اﷲ تعالیٰ نے اپنے حبیب صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی دنیا میں آمد کے موقع پر اِس قدر چراغاں کیا کہ شرق تا غرب سارے آفاق روشن ہو گئے۔ متعدد کتب احادیث میں حضرت عثمان بن ابی العاص رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ اُن کی والدہ نے اُن سے بیان کیا: ’’جب ولادتِ نبوی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا وقت آیا تو میں سیدہ آمنہ رضی اللہ عنہا کے پاس تھی۔ میں دیکھ رہی تھی کہ ستارے آسمان سے نیچے ڈھلک کر قریب ہو رہے ہیں یہاں تک کہ میں نے محسوس کیا کہ وہ میرے اوپر گرپڑیں گے۔ پھر جب آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی ولادت باسعادت ہوئی تو سیدہ آمنہ سے ایسا نور نکلا جس سے پورا گھر جس میں ہم تھے اور حویلی جگمگ کرنے لگی اور مجھے ہر ایک شے میں نور ہی نور نظر آیا۔‘‘

حضرت ابوامامہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ اُنہوں نے بارگاہِ رِسالت مآب صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم میں عرض کیا: یا رسول اﷲ! آپ کی نبوتِ مبارکہ کی شروعات کیسے ہوئی؟ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا: ’’میں اپنے باپ ابراہیم کی دعا اور عیسیٰ کی بشارت ہوں۔ اور (میری ولادت کے وقت) میری والدہ ماجدہ نے دیکھا کہ اُن کے جسم اَطہر سے ایک نور نکلا جس سے شام کے محلات روشن ہوگئے۔‘‘ (مسند احمد)

حضرت آمنہ اپنے عظیم نونہال کے واقعاتِ ولادت بیان کرتے ہوئے فرماتی ہیں: ’’جب سرورِ کائنات صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا ظہور ہوا تو ساتھ ہی ایسا نور نکلا جس سے شرق تا غرب سب آفاق روشن ہوگئے۔‘‘ (طبقات ابن سعد)

ایک روایت میں سیدہ آمنہ رضی اللہ عنہا سے مروی ہے کہ وقتِ ولادت اُن سے ایسا نور خارِج ہوا جس کی ضوء پاشیوں سے اُن کی نگاہوں پر شام میں بصریٰ کے محلات اور بازار روشن ہوگئے یہاں تک اُنہوں نے بصریٰ میں چلنے والے اونٹوں کی گردنیں بھی دیکھ لیں۔ (طبقات ابن سعد)

احادیث میں یوم عاشورہ کے حوالے سے جشنِ میلاد کو عید مسرت کے طور پر منانے پر محدثین نے استدلال کیا ہے۔ یوم عاشورہ کو یہودی مناتے ہیں اور یہ وہ دن ہے جب حضرت موسیٰ e کی قوم بنی اسرائیل کو فرعون کے جبر و استبداد سے نجات ملی۔ اس طرح یہ دن ان کے لیے یوم فتح اور آزادی کا دن ہے جس میں وہ بطور شکرانہ روزہ رکھتے ہیں اور خوشی مناتے ہیں۔ متفق علیہ روایات میں ہے کہ ہجرت کے بعد جب حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے یہود مدینہ کا یہ عمل دیکھا تو فرمایا: موسیٰ پر میرا حق نبی ہونے کے ناتے ان سے زیادہ ہے۔ چنانچہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے عاشورا کے دن اِظہارِ تشکر کے طور پر خود بھی روزہ رکھا اور اپنے صحابہ کرام l کو بھی روزہ رکھنے کا حکم فرمایا۔ اس پر بھی بہت سی روایات ہیں جس سے یہ استدلال کیا جاتا ہے کہ اگر یہود اپنے پیغمبر کی فتح اور اپنی آزادی کا دن جشن عید کے طور پر منا سکتے ہیں تو ہم مسلمانوں کو بدرجہ اولیٰ اس کا حق پہنچتا ہے کہ ہم حضور نبی رحمت صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی ولادت کا جشن مثالی جوش و خروش سے منائیں جو اﷲ کا فضل اور رحمت بن کر پوری نسل انسانیت کو ہر قسم کے مظالم اور ناانصافیوں سے نجات دلانے کے لیے اس دنیا میں تشریف لائے۔

وَیَضَعُ عَنْهُمْ اِصْرَهُمْ وَالْاَغْلٰـلَ الَّتِیْ کَانَتْ عَلَیْهِمْ.

(الأعراف، 7: 157)

’’اور اُن سے اُن کے بارِ گراں اور طوقِ (قیود) – جو اُن پر (نافرمانیوں کے باعث مسلط) تھے – ساقط فرماتے (اور اُنہیں نعمتِ آزادی سے بہرہ یاب کرتے) ہیں۔‘‘

آخری بات یہ کہ ِاس کائناتِ اَرضی میں ایک مومن کے لیے سب سے بڑی خوشی اِس کے سوا اور کیا ہو سکتی ہے کہ جب حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا ماہِ ولادت آئے تو اسے یوں محسوس ہونے لگے کہ کائنات کی ساری خوشیاں ہیچ ہیں اور اس کے لیے میلادِ مصطفی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی خوشی ہی حقیقی خوشی ہے۔ جس طرح اُمم سابقہ پر اس سے بدرجہ ہا کم تر احسان اور نعمت عطا ہونے کی صورت میں واجب کیا گیا تھا جب کہ ان امتوں پر جو نعمت ہوئی وہ عارضی اور وقتی تھی اس کے مقابلے میں جو دائمی اور اَبدی نعمتِ عظمیٰ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ظہورِ قدسی کی صورت میں اُمتِ مسلمہ پر ہوئی ہے اس کا تقاضا ہے کہ وہ بدرجہ اَتم سراپا تشکر و امتنان بن جائے اور اظہارِ خوشی و مسرت میں کوئی کسر نہ اٹھا رکھے۔

قرآن مجید نے بڑے بلیغ انداز سے جملہ نوع انسانی کو اس نعمت اور فضل و رحمت کو یاد رکھنے کا حکم دیا ہے جو محسنِ انسانیت پیغمبر رحمت حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی صورت میں انہیں عطا ہوئی اور جس نے ان اندھیروں کو چاک کر دیا جو صدیوں سے شبِ تاریک کی طرح ان پر مسلط تھے اور نفرت و بغض کی وہ دیواریں گرا دیں جو انہیں قبیلوں اور گروہوں میں منقسم کیے ہوئے تھیں۔ ارشادِ باری تعالیٰ ہے:

وَاذْکُرُوْا نِعْمَتَ اﷲِ عَلَیْکُمْ اِذْ کُنْتُمْ اَعْدَآءً فَاَلَفَّ بَیْنَ قُلُوْبِکُمْ فَاَصْبَحْتُمْ بِنِعْمَتِهٖ اِخْوَانًا.

’’اور اپنے اوپر (کی گئی) اللہ کی اس نعمت کو یاد کرو کہ جب تم (ایک دوسرے کے) دشمن تھے تو اُس نے تمہارے دلوں میں اُلفت پیدا کر دی اور تم اس کی نعمت کے باعث آپس میں بھائی بھائی ہو گئے۔‘‘

(آل عمران، 3: 103)

ان ٹوٹے ہوئے دلوں کو پھر سے جوڑنا اور گروہوں میں بٹی ہوئی انسانیت کو رشتہ اُخوت و محبت میں پرو دینا اتنا بڑا واقعہ ہے جس کی کوئی نظیر تاریخ عالم پیش کرنے سے قاصر ہے۔ لہٰذا میلادِ مصطفی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم پر خوشی منانا اور شکرِ اِلٰہی بجا لانا اُمتِ مسلمہ پر سب خوشیوں سے بڑھ کر واجب کا درجہ رکھتا ہے۔

شیخ الاسلام ڈاکٹر محمد طاہر القادری کے اِس مجموعہ حدیث میں تاجدارِ کائنات صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی ولادت باسعادت کے واقعات اور اس پر اِظہارِ مسرت کے حوالے سے احادیث مبارکہ مع ترجمہ و تخریج اور ضروری شرح درج کی گئی ہیں۔ دعا ہے کہ یہ مجموعہ احادیث اَہل اِیمان کے دلوں میں محبت و عشق رسول کی ضیاء باریوں میں مزید اِضافہ کرے۔ (آمین بجاہِ سید المرسلین صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم)

(حافظ ظہیر اَحمد الاِسنادی)
رِیسرچ اسکالر، فریدِ ملت ریسرچ انسٹی ٹیوٹ

[Farhat-ul-Quloob Fi Mawlid-in-Nabiyy-il-Mahboob SallAllahu Ta’ala ‘Alayhi Wa-Aalihi Wa-Sallam,/05_18.]

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s