Fitnoṅ kā ẓuhūr part 21

al-Ḥadīt̲h̲

22۔ عَنْ عَبْدِ اللهِ بْنِ عَمْرِو بْنِ الْعَاصِ رضي الله عنهما یُحَدِّثُ عَنْ رَسُوْلِ اللهِ ﷺ أَنَّهٗ قَالَ: مِنْ اِقْتِرَابِ السَّاعَةِ أَنْ تُرْفَعَ الْأَشْرَارُ وَتُوْضَعَ الأَخْیَارُ وَیُفْتَحَ الْقَوْلُ وَیُخْزَنَ الْعَمَلُ وَیُقْرَأَ بِالْقَوْمِ، اَلْمَثْنَاةُ لَيْسَ فِيْھِمْ أَحَدٌ یُنْکِرُھَا۔ قِيْلَ: وَمَا الْمَثْنَاةُ؟ قَالَ: مَا اکْتُتِبَتْ سِوٰی کِتَابِ اللهِ۔
رَوَاهُ الْحَاکِمُ۔

22: أخرجہ الحاکم في المستدرک، 4/ 597، الرقم/ 8660، وذکرہ الھیثمي في مجمع الزوائد، 7/ 326۔

حضرت عبد اللہ بن عمرو بن العاص رضی اللہ عنہما رسول اللہ ﷺ سے حدیث بیان کرتے ہیں کہ آپ ﷺ نے فرمایا: قربِ قیامت (کی نشانیوں) میں سے یہ بھی ہے کہ (سوسائٹی میں) اشرار (یعنی برے لوگوں) کا رتبہ بلند اور اَخیار (نیکو کاروں) کا رتبہ گرا دیا جائے گا اور قیل و قال (یعنی بحث و مناظرہ) عام ہو جائے گا اور عمل پر تالے پڑ جائیں گے۔ لوگوں میں مثناۃ پڑھی جائے گی اور ان میں سے کوئی ایک بھی اس کا انکار (یعنی اس کے خلاف آواز بلند) نہیں کرے گا۔ عرض کیا گیا: مَثْنَاۃ کیا ہے؟ آپ ﷺ نے فرمایا: اللہ تعالیٰ کی کتاب (اور اُس کی تعلیمات) کے خلاف جو کچھ لکھا گیا ہو گا وہ مثناۃ ہے (اور اس کے خلاف کوئی آواز بلند نہیں کی جائے گی گویا قرآنی تعلیمات کی کھلی مخالفت پر کوئی پابندی نہیں ہوگی)۔
اِس حدیث کو امام حاکم نے روایت کیا ہے۔

  • Ḥaz̤rat ʻAbd Allāh bin ʻAmr bin al-ʻĀṣ raḍiya Allāhu ‘anhu Rasūl Allāh ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihī wa-sallam se ḥadīs̲ bayān karte haiṅ keh Āp ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihī wa-sallam ne farmāyā: qurbe qiyāmat (kī nishāniyoṅ) meṅ se yeh bhī hai keh (sosā’it̥ī meṅ) ashrār (yaʻnī bure logoṅ) kā rutbah baland aur aḳhyār (nekū-kāroṅ) kā rutbah girā diyā jā’egā aur qīl-o qāl (yaʻnī băḥs̲-o munāẓarah) ʻām ho jā’egā aur ʻamal par tāle par̥ jā’eṅge. Logoṅ meṅ Mat̲h̲nāṫ par̥hī jā’egī aur un meṅ se ko’ī ek bhī us kā inkār (yaʻnī us ke ḳhilāf āwāz buland) nahīṅ karegā. ʻArz̤ kiyā gayā: Mat̲h̲nāṫ kyā hai? Āp ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihī wa-sallam ne farmāyā: Allāh Taʻālá kī Kitāb (aur us kī taʻlīmāt) ke ḳhilāf jo kuc̥h likhā gayā hogā woh Mat̲h̲nāṫ hai (aur us ke ḳhilāf ko’ī āwāz buland nahīṅ kī jā’egī goyā Qur’ānī taʻlīmāt kī khulī muḳhālefat par ko’ī pābandī nahīṅ hogī).

Is ḥadīs̲ ko Imām Ḥākim ne riwāyat kiyā hai.

[Ṭāhir al-Qādrī fī al-Qawlu al-Ḥasani fī ʻalāmatī al-sāʻaṫi wa-ẓuhūri al-fitan,/46_47, raqam: 22.]
〰〰

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s