Fitnoṅ kā ẓuhūr part 20

al-Ḥadīt̲h̲

  1. عَنْ أَبِي ھُرَيْرَةَ رضي الله عنه قَالَ: قَالَ رَسُوْلُ اللهِ ﷺ : یَأْتِي عَلَی النَّاسِ زَمَانٌ لَا یَسْلَمُ لِذِي دِيْنٍ دِيْنُهٗ إِلَّا مَنْ ھَرَبَ بِدِيْنِهٖ مِنْ شَاھِقٍ إِلٰی شَاھِقٍ وَمِنْ جُحْرٍ إِلٰی جُحْرٍ فَإِذَا کَانَ ذٰلِکَ الزَّمَانُ لَمْ تُنَلِ الْمَعِيْشَةُ إِلَّا بِسَخَطِ اللهِ، فَإِذَا کَانَ ذٰلِکَ کَذٰلِکَ کَانَ ھِـلَاکُ الرَّجُلِ عَلٰی یَدَي زَوْجَتِهٖ وَوَلَدِهٖ، فَإِنْ لَمْ یَکُنْ لَهٗ زَوْجَةٌ وَلَا وَلَدٌ کَانَ ھِلَاکُهٗ عَلٰی یَدَي أَبَوَيْهِ، فَإِنْ لَمْ یَکُنْ لَهٗ أَبَوَانِ کَانَ ھِلَاکُهٗ عَلٰی یَدَي قَرَابَتِهٖ أَوِ الْجِيْرَانِ۔ قَالُوْا: کَيْفَ ذٰلِکَ یَا رَسُوْلَ اللهِ؟ قَالَ: یُعَیِّرُوْنَهٗ بِضِيْقِ الْمَعِيْشَةِ فَعِنْدَ ذٰلِکَ یُوْرِدُ نَفْسَهُ الْمَوَارِدَ الَّتِي تَھْلِکُ فِيْھَا۔

رَوَاهُ الْبَيْھَقِيُّ وَالْمُنْذِرِيُّ۔

21: أخرجہ البیھقي في کتاب الزھد الکبیر، 2/ 183، الرقم/ 439، وذکرہ المنذري في الترغیب والترھیب، 3/ 299، الرقم/ 4152۔

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: لوگوں پر ایک زمانہ ایسا آئے گا کہ دیندار آدمی کا دین سلامت نہیں رہے گا سوائے اُس شخص کے جو اپنا دین بچانے کے لیے کسی پہاڑی کی چوٹی سے دوسری چوٹی پر یا ایک سرنگ سے دوسری سرنگ میں اپنا دین اپنے ساتھ لے کر نہ بھاگتا پھرے۔ جب ایسا زمانہ آ جائے تو اس وقت معیشت صرف اُنہی ذرائع سے حاصل ہو گی جن سے اللہ تعالیٰ ناراض ہو گا۔ جب ایسا زمانہ آ جائے تو اُس وقت آدمی کی ہلاکت کی وجہ اُس کی بیوی یا اُس کی اولاد ہو گی اور اگر کسی کی بیوی اور اولاد نہ ہوئی تو اس کے والدین اس کی ہلاکت کا باعث ہوں گے۔ اگر اس کے والدین نہ ہوئے تو اس کی ہلاکت اس کے قریبی رشتہ داروں یا ہمسایوں کے ہاتھوں ہو گی۔ صحابہ کرام رضی اللہ عنہم نے عرض کیا: یا رسول اللہ! ایسا کیوں کر ہو گا؟ آپ ﷺ نے فرمایا: وہ اُسے تنگی معاش (پیسے کی کمی) کا طعنہ دیں گے جس کی وجہ سے وہ (دولت سمیٹنے کے لیے) اپنے آپ کو ایسے اُمور میں ملوث کر لے گا جو اس کی ہلاکت کا باعث ہوں گے۔

اِس حدیث کو امام بیہقی اور منذری نے روایت کیا ہے۔

  • Ḥaz̤rat Abū Hurayrah raḍiya Allāhu ‘anhu bayān karte haiṅ keh Rasūl Allāh ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihi wa-sallam ne farmāyā: logoṅ par ek zamānah aisā ā’egā keh dunyādār ādamī kā Dīn salāmat nahīṅ rahegā siwā’e us shaḳhṣ ke jo apnā Dīn bachāne ke liye kisī pahār̥ī kī chot̥ī se dūsrī chot̥ī par yā ek suraṅg se dūsrī suraṅg meṅ apnā Dīn apne sāth le kar nah bhāgtā phire. Jab aisā zamānah ā jā’e to us waqt maʻīshat ṣirf unhī z̲arā’eʻ se ḥāṣil hogī jin se Allāh Taʻālá nārāz̤ hogā. Jab aisā zamānah ā jā’e to us waqt ādamī kī halākat kī waj·h us kī bīwī yā us kī aulād hogī aur agar kisī kī bīwī aur aulād nah hu’ī to us ke wāledain us kī halākat kā bāʻis̲ hoṅge. Agar us ke wāledain nah huwe to us kī halākat us ke qarībī rishtah-dār yā hamsāyoṅ ke hāthoṅ hogī. Ṣaḥāba’e kirām riḍwānu Allāhi Ta‘ālá ‘alayhim ajma‘īn ne ʻarz̤ kiyā yā Rasūl Allāh! aisā kyūṅ kar hogā? Āp ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihi wa-sallam ne farmāyā: woh us taṅgiye maʻāsh (paise kī kamī) kā ṭaʻnah deṅge jis kī waj·h se woh (daulat samet̥ne ke liye) apne Āp ko aise umūr meṅ mulawwas̲ kar legā jo us kī halākat kā bāʻis̲ hoṅge.

Is ḥadīs̲ ko Imām Bayhaqī aur Mund̲h̲irī ne riwāyat kiyā hai.

[Ṭāhir al-Qādrī fī al-Qawlu al-Ḥasani fī ʻalāmatī al-sāʻaṫi wa-ẓuhūri al-fitan,/45_46, raqam: 21.]
〰〰

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s