Fitnoṅ kā ẓuhūr 19

al-Qur’ān

(20) اَوْلٰی لَکَ فَاَوْلٰیo ثُمَّ اَوْلٰی لَکَ فَاَوْلٰیo اَیَحْسَبُ الْاِنْسَانُ اَنْ یُّتْرَکَ سُدًیo اَلَمْ یَکُ نُطْفَةً مِّنْ مَّنِیٍّ یُّمْنٰیo ثُمَّ کَانَ عَلَقَةً فَخَلَقَ فَسَوّٰیo فَجَعَلَ مِنْهُ الزَّوْجَيْنِ الذَّکَرَ وَالْاُنْثٰیo اَلَيْسَ ذٰلِکَ بِقٰدِرٍ عَلٰٓی اَنْ یُّحْیِیَ الْمَوْتٰیo
(القیامۃ، 34 – 40)

تمہارے لیے (مرتے وقت) تباہی ہے، پھر (قبر میں) تباہی ہےo پھر تمہارے لیے (روزِ قیامت) ہلاکت ہے، پھر (دوزخ کی) ہلاکت ہےo کیا اِنسان یہ خیال کرتا ہے کہ اُسے بے کار (بغیر حساب و کتاب کے) چھوڑ دیا جائے گاo کیا وہ (اپنی اِبتداء میں) منی کا ایک قطرہ نہ تھا جو (عورت کے رحم میں) ٹپکا دیا جاتا ہےo پھر وہ (رحم میں جال کی طرح جما ہوا) ایک معلق وجود بن گیا، پھر اُس نے (تمام جسمانی اَعضاء کی اِبتدائی شکل کو اس وجود میں) پیدا فرمایا، پھر اس نے (انہیں) درست کیاo پھر یہ کہ اس نے اسی نطفہ ہی کے ذریعہ دو قسمیں بنائیں: مرد اور عورتo تو کیا وہ اس بات پر قادر نہیں کہ مُردوں کو پھر سے زندہ کر دےo

(20) Tumhāre liye (marte waqt) tabāhī hai, phir (qabr meṅ) tabāhī hai. Phir tumhāre liye (roze qiyāmat) halākat hai, phir (dozaḳh kī) halākat hai. Kyā insān yeh ḳhayāl kartā hai keh use bekār (baġhair ḥisāb-o kitāb ke) c̥hor̥ diyā jā’egā. Kyā woh (apnī ibtedā’ meṅ) manī kā ek qaṭrah nah thā jo (ʻaurat ke raḥim meṅ) t̥apkā diyā jātā hai. Phir woh (raḥim meṅ jāl kī ṭarḥ jamā huwā) ek muʻallaq wujūd ban gayā, phir us ne (tamām jismānī aʻz̤a’ kī ibtedā’ī shakl ko us wujūd meṅ) paidā farmāyā, phir us ne (unheṅ) durust kiyā. Phir yeh keh us ne usī nuṭfah hī ke z̲arīʻah do qismeṅ banā’īṅ: mard aur ʻaurat. To kyā woh is bāt par qādir nahīṅ keh murdoṅ ko phir se zindah kar de.

[al-Qiyāmah, 34/40.]
〰〰

al-Ḥadīt̲h̲

20۔ عَنْ أَبِي ذَرٍّ الْغِفَارِيِّ رضي الله عنه عَنْ رَسُوْلِ اللهِ ﷺ : إِذَا اقْتَرَبَ الزَّمَانُ کَثُرَ لُبْسُ الطِّیَالَسَةِ وَکَثُرَتِ التِّجَارَةُ وَکَثُرَ الْمَالُ وَعَظُمَ رَبُّ الْمَالِ بِمَالِهٖ وَکَثُرَتِ الْفَاحِشَةُ وَکَانَتْ إِمَارَةُ الصِّبْیَانِ وَکَثُرَ النِّسَاءُ وَجَارَ السُّلْطَانُ وَطُفِّفَ فِي الْمِکْیَالِ وَالْمِيْزَانِ وَیُرَبِّي الرَّجُلُ جَرْوَ کَلْبٍ خَيْرٌ لَهٗ مِنْ أَنْ یُرَبِّيَ وَلَدًا لَهٗ وَلَا یُوَقَّرُ کَبِيْرٌ وَلَا یُرْحَمُ صَغِيْرٌ وَیَکْثُرُ أَوْلَادُ الزِّنَا حَتّٰی أَنَّ الرَّجُلَ لَیُغَشِّي الْمَرْأَةَ عَلٰی قَارِعَةِ الطَّرِيْقِ فَیَقُوْلُ أَمْثَلُھُمْ فِي ذٰلِکَ الزَّمَانِ: لَوْ اِعْتَزَلْتُمَا عَنِ الطِّرِيْقِ وَیَلْبَسُوْنَ جُلُوْدَ الضَّأَنِ عَلٰی قُلُوْبِ الذِّئَابِ۔ أَمْثَلُھُمْ فِي ذٰلِکَ الزَّمَانِ الْمُدَاھِنُ۔
رَوَاهُ الْحَاکِمُ وَالطَّبَرَانِيُّ۔

20: أخرجہ الحاکم في المستدرک، 3/ 386، الرقم/ 5464، والطبراني في المعجم الأوسط، 5/ 126، الرقم/ 4860، والھیثمي في مجمع الزوائد، 7/ 325۔

حضرت ابو ذر غفاری رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: جب زمانۂ قیامت قریب ہو گا تو ریشم کثرت سے پہنا جانے لگے گا، تجارت بڑھ جائے گی اور مال کی کثرت ہو گی، مال کا سود اصلِ زرّ (Capital) سے بڑھ جائے گا، فحاشی بڑھ جائے گی اور کم عمر لوگوں کی حکومت ہو گی، عورتوں کی کثرت ہو گی، حکمرانوں کا ظلم بڑھ جائے گا، ناپ تول میں کمی کی جائے گی، آدمی اپنے کتے کے پلے کی نگہداشت اپنے بیٹے کی نگہداشت سے بڑھ کر کرے گا، بڑوں کی عزت نہیں کی جائے گی اور چھوٹوں پر شفقت نہیں کی جائے گی، بدکاری سے پیدا ہونے والے بچوں کی کثرت ہو گی۔ یہاں تک کہ مرد عورت کے ساتھ گزرگاہوں میں ہی بدکاری کرنے لگے گا اور اُس زمانے میں جو ان میں سے بہتر شخص ہو گا اُن سے کہے گا: (تمہاری بے حیائی کی انتہاء یہ ہے کہ) تم راستے سے بھی ہٹنا گوارا نہیں کرتے۔ اس زمانے میں بھیڑیے کا دل رکھنے والوں نے بھیڑ کی کھال پہن رکھی ہو گی (یعنی لوگ باہر سے نرم مزاج اور اندر سے ظالم اور خونخوار ہوں گے)۔ اُس زمانے میں اُن میں سے اچھے لوگ بھی خوشامد کریں گے۔
اِس حدیث کو امام حاکم اور طبرانی نے روایت کیا ہے۔

  • Ḥaz̤rat Abū D̲h̲arr Ġhifārī raḍiya Allāhu ‘anhu se riwāyat hai keh Rasūl Allāh ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihī wa-sallam ne farmāyā: jab zamānaʻe qiyāmat qarīb hogā to rehsam kas̲rat se păhnā jāne lagegā, tijārat bar̥h jā’egī aur māl kī kas̲rat hogī, māl kā sūd aṣle zarr (Capital) se bar̥h jā’egā, faḥḥāshī bar̥h jā’egī aur kam ʻumr logoṅ kī ḥukūmat hogī, ʻaurtoṅ kī kas̲rat hogī, ḥukmarānoṅ kā ẓulm bar̥h jā’egā, nāp tol meṅ kamī kī jā’egī, ādamī apne kutte ke pille kī nigăhdāsht apne bet̥e kī nigăhdāsht se bar̥h kar karegā, bar̥oṅ kī ʻizzat nahīṅ kī jā’egī aur c̥hot̥oṅ par shafqat nahīṅ kī jā jā’egī, bad-kārī se paidā hone wāle bachchoṅ kī kas̲rat hogī. Yahāṅ tak keh mard ʻaurat ke sāth guzar-gāhoṅ meṅ hī bad-kārī karne lagegā aur us zamāne meṅ jo un meṅ se behtar shaḳhṣ hogā un se kahegā: (tumhārī be-ḥayā’ī kī intehā’ yeh hai keh) tum rāste se bhī hat̥nā gawārā nahīṅ karte. Us zamāne meṅ bher̥iye kā dil rakhne wāloṅ ne bher̥ kī khāl păhăn rakhī hogī (yaʻnī log bāhar se narm mizaj aur andar se ẓālim aur ḳhūn-ḳhẉār hoṅge). Us zamāne meṅ un meṅ se achc̥he log bhī ḳhẉushāmad kareṅge.
    Is ḥadīs̲ ko Imām Ḥākim aur Ṭabarānī ne riwāyat kiyā hai.

    [Ṭāhir al-Qādrī fī al-Qawlu al-Ḥasani fī ʻalāmatī al-sāʻaṫi wa-ẓuhūri al-fitan,/43_45, raqam: 20.]
    〰〰
    Join Karen

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s