Fitnoṅ kā ẓuhūr 17

al-Qur’ān

(18) اِذَا السَّمَآءُ انْشَقَّتْo وَ اَذِنَتْ لِرَبِّھَا وَحُقَّتْo وَ اِذَا الْاَرْضُ مُدَّتْo وَ اَلْقَتْ مَا فِيْھَا وَتَخَلَّتْo

(الانشقاق، 84/ 1-4)

جب (سب) آسمانی کرّے پھٹ جائیں گےo اور اپنے رب کا حکمِ (اِنشقاق) بجا لائیں گے اور (یہی تعمیلِ اَمر) اُس کے لائق ہےo اور جب زمین (ریزہ ریزہ کر کے) پھیلا دی جائے گیo اور جو کچھ اس کے اندر ہے وہ اسے نکال باہر پھینکے گی اور خالی ہو جائے گیo

(18) Jab (sab) āsmānī kurre phat̥ jā’eṅge. Aur apne Rabb kā ḥukme (insheqāq) bajā lā’eṅge aur (yahī taʻmīle amr) us ke lā’iq hai. Aur jab zamīn (rezah-rezah kar ke) phailā dī jā’egī. Aur jo kuc̥h us ke andar hai woh use nikāl bāhar phaiṅkegī aur ḳhālī ho jā’egī.

[al-īnshiqāq, 84/1_4.]
〰〰
Join Karen

al-Ḥadīt̲h̲

18۔ عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِکٍ رضي الله عنه قَالَ: قَالَ رَسُوْلُ اللهِ ﷺ : إِذَا اسْتَحَلَّتْ أُمَّتِي سِتًّا فَعَلَيْھِمُ الدِّمَارُ، إِذَا ظَھَرَ فِيْھِمُ التَّـلَاعُنُ، وَشَرِبُوْا الْخُمُوْرَ وَلَبِسُوْا الْحَرِيْرَ، وَاتَّخَذُوْا الْقِیَانَ، وَاکْتَفَی الرِّجَالُ بِالرِّجَالِ وَالنِّسَاءُ بِالنِّسَاءِ۔
رَوَاهُ الطَّبَرَانِيُّ وَالْبَيْھَقِيُّ وَأَبُوْ نُعَيْمٍ۔

18: أخرجہ الطبراني في المعجم الأوسط، 2/ 18، الرقم/ 1086، والبیھقي في شعب الإیمان، 4/ 377، الرقم/ 5469، وأبو نعیم في حلیۃ الأولیائ، 6/ 123، وذکرہ المنذري في الترغیب والترھیب، 3/ 71، الرقم/ 3123، والھیثمي في مجمع الزوائد، 7/ 331، والھندي في کنز العمال، 7/ 177۔

حضرت انس رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: جب میری اُمت چھ چیزوں کو حلال سمجھنے لگے گی تو اُن پر تباہی نازل ہو گی۔ جب اُن میں باہمی لعنت ملامت عام ہو جائے، لوگ کثرت سے شرابیں پینے لگیں، مرد ریشمی لباس پہننے لگیں، لوگ گانے بجانے اور رقص کرنے والی عورتیں رکھنے لگیں، مرد، مردوں سے اور عورتیں، عورتوں سے جنسی لذت حاصل کرنے لگیں (یعنی ہم جنس پرستی عام ہو جائے اور gays اور lesbians کے گروہ عام ہو جائیں اس وقت تباہی و بربادی ان کا مقدر ٹھہرے گی)۔

اِس حدیث کو امام طبرانی، بیہقی اور ابو نعیم نے روایت کیا ہے۔

  • Ḥaz̤rat Anas raḍiya Allāhu ‘anhu bayān karte haiṅ keh Rasūl Allāh ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihī wa-sallam ne farmāyā: jab merī ummat c̥he chīzoṅ ko ḥalāl samajhne lagegī to un par tabāhī nāzil hogī. Jab un meṅ bāhamī laʻnat malāmat ʻām ho ja’egī, log kas̲rat se sharābeṅ pīne lagīṅ, mard reshamī libās păhăn·ne lagīṅ, log gāne bajāne aur raqṣ karne wāli ʻaurateṅ rakhne lagīṅ, mard, mardoṅ se aur ʻaurateṅ, ʻaurtoṅ se jinsī laz̲z̲at ḥāṣil karne lageṅ (yaʻnī ham jins parastī ʻām ho jā’e aur gays aur lesbians ke guroh ʻām ho jā’eṅ us waqt tabāhī wa barbādī un kā muqaddar t̥hăhregī). Is ḥadīs̲ ko Imām Ṭabarānī, Bayhaqī aur Abū Nuʻaym ne riwāyat kiyā hai.

    [Ṭāhir al-Qādrī fī al-Qawlu al-Ḥasani fī ʻalāmatī al-sāʻaṫi wa-ẓuhūri al-fitan,/38_39, raqam: 18.]
    〰〰
    Join Karen

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s