Fitnoṅ kā ẓuhūr 16

al-Qur’ān

(17) اِذَا زُلْزِلَتِ الْاَرْضُ زِلْزَالَهَاo وَ اَخْرَجَتِ الْاَرْضُ اَثْقَالَهَاo وَقَالَ الْاِنْسَانُ مَالَهَاo یَوْمَئِذٍ تُحَدِّثُ اَخْبَارَهَاo

(الزلزال، 99/ 1-4)

جب زمین اپنے سخت بھونچال سے بڑی شدت کے ساتھ تھرتھرائی جائے گیo اور زمین اپنے (سب) بوجھ نکال باہر پھینکے گیo اور انسان (حیران و ششدر ہو کر) کہے گا: اسے کیا ہوگیا ہےo اس دن وہ اپنے حالات خود ظاہر کر دے گیo

(17) Jab zamīn apne saḳht bhūṅchāl se bar̥ī shiddat ke sāth thar tharā’ī jā’egī. Aur zamīn apne (sab) bojh nikāl bāhar pheṅkegī. Aur insān (ḥairān-o shashdar ho kar) kahegā: ise kyā ho gayā hai. Us din woh apne hālāt ḳhẉud ẓāhir kar degī.

[al-Zilzāl, 99/1_4.]
〰〰
Join Karen

al-Ḥadīt̲h̲

(17) عَنْ عَبْدِ اللهِ بْنِ عَمْرٍو رضي الله عنهما قَالَ: یَأْتِي عَلَی النَّاسِ زَمَانٌ یَجْتَمِعُوْنَ وَیُصَلُّوْنَ فِي الْمَسَاجِدِ وَلَيْسَ فِيْهِمْ مُؤْمِنٌ۔

رَوَاهُ ابْنُ أَبِي شَيْبَةَ وَالْحَاکِمُ وَالطَّحَاوِيُّ وَالْفَرْیَابِيُّ وَالدَّيْلَمِيُّ وَالْمَقْدِسِيُّ۔ وَقَالَ الْحَاکِمُ: هٰذَا حَدِيْثٌ صَحِيْحُ الإِسْنَادِ۔

17: أخرجہ ابن أبي شیبۃ في المصنف، 6/ 163، الرقم/ 30355، وأیضًا، 7/ 505، الرقم/ 37586، والطحاوي في شرح معاني الآثار، 2/ 172، والفریابي في صفۃ المنافق/ 80، الرقم/ 108- 110، والدیلمي في مسند الفردوس، 5/ 441، الرقم/ 8680، والمقدسي في ذخیرۃ الحفاظ، 5/ 2767، الرقم/ 6469۔

وَفِي رِوَایَةٍ قَالَ: یَأْتِي عَلَی النَّاسِ زَمَانٌ یَجْتَمِعُوْنَ فِي الْمَسَاجِدِ، لَيْسَ فِيْهِمْ مُؤْمِنٌ۔

رَوَاهُ الْحَاکِمُ وَالْآجُرِّيُّ، وَقَالَ الْحَاکِمُ: هٰذَا حَدِيْثٌ صَحِيْحُ الإِسْنَادِ۔

أخرجہ الحاکم في المستدرک، 4/ 489، الرقم/ 8365، والآجري في کتاب الشریعۃ، 2/ 601-602، الرقم/ 236-237۔

وَفِي رِوَایَةٍ قَالَ: لَیَأْتِیَنَّ عَلَی النَّاسِ زَمَانٌ یَجْتَمِعُوْنَ فِي مَسَاجِدِهِمْ، مَا فِيْهِمْ مُؤْمِنٌ۔

رَوَاهُ الْآجُرِّيُّ۔

أخرجہ الآجري في کتاب الشریعۃ، 2/ 602-603، الرقم/ 238۔

حضرت عبد اللہ بن عمرو رضی اللہ عنہما نے فرمایا: لوگوں پر ایک ایسا زمانہ بھی آئے گا کہ وہ مساجد میں اکٹھے ہوں گے اور باجماعت نمازیں پڑھیں گے، لیکن ان میں کوئی ایک بھی (صحیح) مؤمن نہیں ہوگا۔

اسے امام ابن ابی شیبہ، حاکم، طحاوی، فریابی، دیلمی اور مقدسی نے روایت کیا ہے۔ امام حاکم نے فرمایا: اس حدیث کی سند صحیح ہے۔

ایک اور روایت میں حضرت عبد اللہ بن عمرو رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں: لوگوں پر ایک ایسا زمانہ بھی آئے گا کہ وہ (باجماعت نمازوں کے لیے) مساجد میں اکٹھے ہوں گے لیکن ان میں کوئی ایک بھی مومن نہیں ہوگا۔

اسے امام حاکم اور آجری نے روایت کیا ہے۔ امام حاکم نے فرمایا: اس حدیث کی سند صحیح ہے۔

ایک اور روایت میں حضرت عبد اللہ بن عمرو رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں: لوگوں پر ضرور بالضرور ایک ایسا زمانہ آئے گا جس میں وہ (باجماعت نمازوں کے لیے) اپنی مساجد میں جمع ہوں گے لیکن ان میں کوئی ایک بھی مومن نہیں ہوگا۔

اسے امام آجری نے روایت کیا ہے۔

  • Ḥaz̤rat ʻAbd Allāh bin ʻAmr raḍiya Allāhu ‘anhu ne farmāyā: logoṅ par ek aisā zamānah bhī ā’egā keh woh masājid meṅ ikat̥t̥he hoṅge aur bā-jamāʻat namāzeṅ par̥heṅge, lekin un meṅ ko’ī ek bhī (ṣaḥīḥ) Momin nahīṅ hogā. Ise Imām Ibn Abī Shaybah, Ḥākim, Ṭaḥāwī, Faryābī, Daylamī aur Maqdisī ne riwāyat kiyā hai. Imām Ḥākim ne farmāyā: is ḥadīs̲ kī sanad ṣaḥīḥ hai. Ek aur riwāyat meṅ Ḥaz̤rat ʻAbd Allāh bin ʻAmr raḍiya Allāhu ‘anhu bayān karte haiṅ: logoṅ par ek aisā zamānah bhī ā’egā keh woh (bā-jamāʻat namāzoṅ liye) masājid meṅ ikat̥t̥he hoṅge lekin un meṅ ko’ī ek bhī Momin nahīṅ hogā. Ise Imām Ḥākim aur Ājurrī ne riwāyat kiyā hai. Imām Ḥākim ne farmāyā: is ḥadīs̲ kī sanad ṣaḥīḥ hai. Ek aur riwāyat meṅ Ḥaz̤rat ʻAbd Allāh bin ʻAmr raḍiya Allāhu ‘anhu bayān karte haiṅ: logoṅ par z̤arūr bil-z̤arūr ek aisā zamānah ā’egā jis meṅ woh (bā-jamāʻat namāzoṅ ke liye) apnī masājid meṅ jamʻa hoṅge lekin un meṅ ko’ī ek bhī Momin nahīṅ hogā. Ise Imām Ājurī ne riwāyat kiyā hai.

    [Ṭāhir al-Qādrī fī al-Qawlu al-Ḥasani fī ʻalāmatī al-sāʻaṫi wa-ẓuhūri al-fitan,/36_38, raqam: 17.]
    〰〰
    Join Karen

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s