Fitnoṅ kā ẓuhūr 14

al-Qur’ān

(15) وَقَالُوْٓا اِنْ هٰذَآ اِلَّا سِحْرٌ مُّبِيْنٌo أَ اِذَا مِتْنَا وَکُنَّا تُرَابًا وَّعِظَامًا أَ اِنَّا لَمَبْعُوْثُوْنَo اَوَ اٰبَآؤُنَا الْاَوَّلُوْنَo قُلْ نَعَمْ وَاَنْتُمْ دٰخِرُوْنَo فَاِنَّمَا هِیَ زَجْرَةٌ وَّاحِدَةٌ فَاِذَاهُمْ یَنْظُرُوْنَo وَقَالُوْا یٰـوَيْلَنَا هٰذَا یَوْمُ الدِّيْنِo
(الصافات، 37/ 15-20)

اور کہتے ہیں کہ یہ تو صرف کھلا جادو ہےo کیا جب ہم مرجائیں گے اور ہم مٹی اور ہڈیاں ہوجائیں گے تو ہم یقینی طور پر (دوبارہ زندہ کر کے) اٹھائے جائیں گے؟o اور کیا ہمارے اگلے باپ دادا بھی (اٹھائے جائیں گے)؟o فرما دیجیے: ہاں اور (بلکہ) تم ذلیل و رسوا (بھی) ہو گےo پس وہ تو محض ایک (زور دار آواز کی) سخت جھڑک ہوگی سو سب اچانک (اٹھ کر) دیکھنے لگ جائیں گےo اور کہیں گے: ہائے ہماری شامت، یہ تو جزا کا دن ہے-

(15) Aur kăhte haiṅ keh yeh to ṣirf khulā jādū hai. Kyā jab ham mar ja’eṅge aur ham mit̥t̥ī aur haddiyāṅ ho jā’eṅge to ham yaqīnī ṭaur par (do bārah zindah kar ke) ut̥hā’e jā’eṅge? Aur kyā hamāre agle bāp dādā bhī (ut̥hā’e jā’eṅge)? Farmā dījiye: hāṅ aur (bal-keh) tum z̲alīl-o ruswa (bhī) hoge. Pas woh to măḥz̤ ek (zordār āwāz kī) saḳht jhir̥ak hogī so sab achānak (ut̥h kar) deḳhne lag jā’eṅge. Aur kaheṅge: hā’e, hamārī shāmat, yeh to jazā kā din hai.
[al-Ṣāffāt, 37/15_20.]
(16)
〰〰
Join Karen

al-Ḥadīt̲h̲

15۔ عَنْ عِمْرَانَ بْنِ حُصَيْنٍ رضي الله عنهما أَنَّ رَسُوْلَ اللهِ ﷺ قَالَ: فِي هٰذِهِ الأُمَّةِ خَسْفٌ وَمَسْخٌ وَقَذْفٌ، فَقَالَ رَجُلٌ مِنَ الْمُسْلِمِيْنَ: یَا رَسُوْلَ اللهِ! وَمَتٰی ذَاکَ؟ قَالَ: إِذَا ظَھَرَتِ الْقَيْنَاتُ وَالْمَعَازِفُ وَشُرِبَتِ الْخُمُوْرُ۔
رَوَاهُ التِّرْمِذِيُّ۔

15: أخرجہ الترمذي في السنن، کتاب الفتن، باب ما جاء في علامۃ حلول المسخ والخسف، 4/ 495، الرقم/ 2212، والخطیب البغدادي في تاریخ البغداد، 10/ 272۔

حضرت عمران بن حصین رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: اس اُمت کے اندر زمین میں دھنسنے، شکلیں بگڑنے اور آسمان سے پتھر برسنے کا عذاب نازل ہو گا۔ تو کسی صحابی نے عرض کیا: یا رسول اللہ! ایسا کب ہو گا؟ آپ ﷺ نے فرمایا: جب گانے اور ناچنے والی عورتیں اور گانے بجانے کا سامان عام ہو جائے گا اورجب شرابیں سرِ عام پی جائیں گی۔

اس حدیث کو امام ترمذی نے روایت کیا ہے۔

  • Ḥaz̤rat ʻImrān bin Ḥuṣayn raḍiya Allāhu ‘anhu se marwī hai keh Rasūl Allāh ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihī wa-sallam ne farmāyā: is ummat ke andar zamīn meṅ dhaṅsne, shakleṅ bigar̥ne aur āsmān se patthar barasne kā ʻaz̲āb nāzil hogā. To kisī ṣaḥābī ne ʻarz̤ kiyā: Rasūl Allāh! Aisā kab hogā? Āp ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihī wa-sallam ne farmāyā: jab gāne aur nāchne wālī ʻaurteṅ aur gāne bajāne kā sāmān ʻām ho jā’egā aur jab sharābeṅ sare ʻām pī jā’eṅgī. Is ḥadīs̲ ko Imām Tirmid̲h̲ī ne riwāyat kiyā hai.

    [Ṭāhir al-Qādrī fī al-Qawlu al-Ḥasani fī ʻalāmatī al-sāʻaṫi wa-ẓuhūri al-fitan,/34_35, raqam: 15.]
    〰〰
    Join Karen

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s