Fitnoṅ kā ẓuhūr 13

al-Qur’ān

(14) وَقَالُوْٓا أَ اِذَا کُنَّا عِظَامًا وَّرُفَاتًا أَ اِنَّا لَمَبْعُوْثُوْنَ خَلْقًا جَدِيْدًاo قُلْ کُوْنُوْا حِجَارَةً اَوْ حَدِيْدًاo اَوْ خَلْقًا مِّمَّا یَکْبُرُ فِيْ صُدُوْرِکُمْ ج فَسَیَقُوْلُوْنَ مَنْ یُّعِيْدُنَاط قُلِ الَّذِيْ فَطَرَکُمْ اَوَّلَ مَرَّةٍ ج فَسَیُنْغِضُوْنَ اِلَيْکَ رُءوْسَھُمْ وَیَقُوْلُوْنَ مَتٰی ھُوَط قُلْ عَسٰٓی اَنْ يَّکُوْنَ قَرِيْبًاo
(الإسراء، 17/ 49-51)

اور کہتے ہیں: جب ہم (مر کر بوسیدہ) ہڈیاں اور ریزہ ریزہ ہو جائیں گے تو کیا ہمیں ازسرِنو پیدا کر کے اٹھایا جائے گا؟o فرما دیجیے: تم پتھر ہو جاؤ یا لوہاo یا کوئی ایسی مخلوق جو تمہارے خیال میں (ان چیزوں سے بھی) زیادہ سخت ہو (کہ اس میں زندگی پانے کی بالکل صلاحیت ہی نہ ہو)، پھر وہ (اس حال میں) کہیں گے کہ ہمیں کون دوبارہ زندہ کرے گا؟ فرما دیجیے: وہی جس نے تمہیں پہلی بار پیدا فرمایا تھا، پھر وہ (تعجب اور تمسخر کے طور پر) آپ کے سامنے اپنے سر ہلا دیں گے اور کہیں گے: یہ کب ہوگا؟ فرما دیجیے: امید ہے جلد ہی ہو جائے گاo

(14) Aur kăhte haiṅ: jab ham (mar kar bosīdah) haddiyāṅ aur rezah-rezah ho jā’eṅge to kyā hameṅ az sire nau paidā kar ke ut̥hāyā jā’egā? Farmā dījiye: tum patthar ho jā’o yā lohā. Yā ko’ī aisī maḳhlūq jo tumhāre ḳhayāl meṅ (in chīzoṅ se bhī) ziyādah saḳht ho (keh us meṅ zindagī pāne kī bil-kul ṣalāḥīyat hī nah ho), phir woh (is ḥāl men) kaheṅge keh hameṅ kaun dobārah zindah karegā? Farmā dījiye: wohī jis ne tumheṅ păhlī bār paidā farmāyā thā, phir woh taʻajjub aur tamasḳhur ke ṭaur par) Āp ke sāmne apne sar hilā deṅge aur kaheṅge: yeh kab hogā? Farmā dījiye: ummīd hai jald hī ho jā’egā.

[al-Isrā’, 17/49_51.]
〰〰
Join Karen

al-Ḥadīt̲h̲

14۔ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ رضي الله عنه أَنَّ رَسُوْلَ اللهِ ﷺ قَالَ: لَیَأْتِیَنَّ عَلَی النَّاسِ زَمَانٌ لَا یَبْقَی أَحَدٌ إِلَّا أَکَلَ الرِّبَا فَإِنْ لَمْ یَأْکُلْهٗ أَصَابَهٗ مِنْ بُخَارِهٖ۔ وَفِي رِوَایَةٍ: مِنْ غُبَارِهٖ۔
رَوَاهُ أَبُوْ دَاوُدَ وَالنَّسَائِيُّ وَابْنُ مَاجَہ وَالْحَاکِمُ۔

14: أخرجہ أبو داود في السنن، کتاب البیوع، باب في اجتناب الشبھات، 3/ 243، الرقم/ 3331، والنسائي في السنن، کتاب التجارات، باب اجتناب الشبھات في الکسب، 7/ 243، الرقم/ 4455، وابن ماجہ في السنن، کتاب التجارات، باب التغلیظ في الربا، 2/ 765، الرقم/ 2278، والحاکم في المستدرک، 2/ 13، الرقم/ 2162، والبیھقي في السنن الکبری، 5/ 276، الرقم/ 10253، والمنذري في الترغیب والترھیب، 3/ 8، الرقم/ 2864۔

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: یقینا لوگوں پر ایسا دور بھی آئے گا جب کوئی شخص بھی سود سے محفوظ نہیں رہے گا۔ اگر کسی نے براہ راست سود نہ بھی کھایا ہو تب بھی سود کا بخار اور ایک روایت کے مطابق سود کا غبار اُسے بہر صورت پہنچ کر رہے گا (گویا وہ براہ راست سود خوری کے جرم کا مرتکب نہ بھی ہو تب بھی پاکیزہ مال کی برکت سے محروم رہے گا)۔
اِس حدیث کو امام ابو داود، نسائی، ابن ماجہ اور حاکم نے روایت کیا ہے۔

  • Ḥaz̤rat Abū Hurayrah raḍiya Allāhu ‘anhu bayān karte haiṅ keh Rasūl Allāh ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihī wa-sallam ne farmāyā: yaqīnan logoṅ par aisā daur bhī ā’egā jab ko’ī shaḳhṣ bhī sūd se măḥfūẓ nahīṅ rahegā. Agar kisī ne barāhe rāst sūd nah bhī khāyā ho tab bhī sūd kā buḳhār aur ek riwāyat ke muṭābiq sūd kā ġhubār use băhr ṣūrat pahŏṅch kar rahegā (goyā woh barāhe rāst sūd ḳhorī ke jurm kā murtakib nah bhī ho tab bhī pākīzah māl kī barakat se măḥrūm rahegā). Is ḥadīs̲ ko Imām Abū Dāwud, Nasā’ī, Ibn Mājahaur Ḥākim ne riwāyat kiyā hai.

    [Ṭāhir al-Qādrī fī al-Qawlu al-Ḥasani fī ʻalāmatī al-sāʻaṫi wa-ẓuhūri al-fitan,/33_34, raqam: 14.]
    〰〰
    Join Karen

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s