Fitnoṅ kā ẓuhūr part 9

al-Qur’ān

(8) اِنَّمَا السَّبِيْلُ عَلَی الَّذِيْنَ یَظْلِمُوْنَ النَّاسَ وَیَبْغُوْنَ فِی الْاَرْضِ بِغَيْرِ الْحَقِّ ط اُوْلٰٓـئِکَ لَهُمْ عَذَابٌ اَلِيْمٌo
(الشوریٰ، 42/ 42)

بس (ملامت و گرفت کی) راہ صرف اُن کے خلاف ہے جو لوگوں پر ظلم کرتے ہیں اور زمین میں ناحق سرکشی و فساد پھیلاتے ہیں، ایسے ہی لوگوں کے لیے دردناک عذاب ہےo

(8) Bas (malāmat-o giraft kī) rāh ṣirf un ke ḳhilāf hai jo logoṅ par ẓulm karte haiṅ aur zamīn meṅ nā-ḥaqq sarkashī wa fasād phailāte haiṅ, aise hī logoṅ ke liye dardnāk ʻaz̲āb hai.
[al-Shūrá, 42/42.]
〰〰

al-Ḥadīt̲h̲

8۔ عَنْ أَبِي قِـلَابَةَ قَالَ: قَالَ ابْنُ مَسْعُوْدٍ رضي الله عنه : عَلَيْکُمْ بِالْعِلْمِ قَبْلَ أَنْ یُقْبَضَ، وَقَبْضُهٗ أَنْ یُذْهَبَ بِأَصْحَابِهٖ، وَعَلَيْکُمْ بِالْعِلْمِ فَإِنَّ أَحَدَکُمْ لَا یَدْرِي مَتٰی یُفْتَقَرُ إِلَيْهِ أَوْ یُفْتَقَرُ إِلٰی مَا عِنْدَهٗ، وَإِنَّکُمْ سَتَجِدُوْنَ أَقْوَامًا یَزْعُمُوْنَ أَنَّهُمْ یَدْعُوْنَکُمْ إِلٰی کِتَابِ اللهِ وَقَدْ نَبَذُوْهُ وَرَاءَ ظُهُوْرِهِمْ، فَعَلَيْکُمْ بِالْعِلْمِ وَإِيَّاکُمْ وَالتَّبَدُّعَ، وَإِيَّاکُمْ وَالتَّنَطُّعَ، وَإِيَّاکُمْ وَالتَّعَمُّقَ، وَعَلَيْکُمْ بِالْعَتِيْقِ۔

رَوَاهُ الدَّارِمِيُّ وَعَبْدُ الرَّزَّاقِ وَالطَّبَرَانِيُّ۔

وَفِي رِوَایَةِ أَبِي مُوْسَی الأَشْعَرِيِّ رضي الله عنه : أَنَّ رَسُوْلَ اللهِ ﷺ قَالَ: لَا تَقُوْمُ السَّاعَةُ حَتّٰی یُجْعَلَ کِتَابُ اللهِ عَارًا وَیَکُوْنَ الإِسْلَامُ غَرِيْبًا حَتّٰی یُنْقَصَ الْعِلْمُ وَیُھْرَمَ الزَّمَانُ وَیُنْقَصَ عُمَرَ الْبَشَرِ وَیُنْقَصَ السِّنُوْنُ وَالثَّمَرَاتُ وَیُؤْتَمِنُ التُّھَمَاءُ وَیُتَّھَمُ الأَمْنَاءُ وَیُصَدِّقُ الْکَاذِبُ وَیُکَذِّبَ الصَّادِقُ وَیَکْثُرُ الْھَرْجُ، قَالُوْا: مَا الْھَرْجُ یَا رَسُوْلَ اللهِ؟ قَالَ: الْقَتْلُ، اَلْقَتْلُ وَحَتّٰی تُبْنَی الْغُرُفُ فَتَطَاوَلُ وَحَتّٰی تَحْزَنَ ذَوَاتَ الأَوْلَادِ وَتَفْرَحَ الْعَوَاقِرُ وَیُظْھَرَ الْبَغْيُّ وَالْحَسَدُ وَالشُّحُ وَیُغِيْضَ الْعِلْمُ غَيْضًا وَیُفِيْضَ الْجَھْلُ فَيْضًا وَیَکُوْنَ الْوَلَدُ غَيْضًا وَالشِّتَاء قَيْضًا وَحَتّٰی یُجْھَرَ بِالْفَحْشَاءِ وَتَزُوْلُ الأَرْضُ زَوَالًا۔

رَوَاهُ ابْنُ عَسَاکِرَ۔

وَفِي رِوَایَةِ عَبْدِ الرَّحْمَانِ الْأَنْصَارِيِ رضي الله عنه قَالَ: قَالَ رَسُوْلُ اللهِ ﷺ : مِنِ اقْتِرَابِ السَّاعَةِ کَثْرَةِ الْمَطَرِ وَقِلَّةِ النَّبَاتِ وَکَثْرَةِ الْقُرَاءِ وَقِلَّةِ الْفُقَھَاءِ وَکَثْرَةِ الأُمْرَاءِ وَقِلَّةِ الأَمْنَاءِ۔

ذَکَرَهُ الْهَيْثِمِيُّ وَالْهِنْدِيُّ۔

حضرت ابو قِلابہ بیان کرتے ہیں کہ حضرت عبد اللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ نے فرمایا: علم کے اُٹھ جانے سے پہلے پہلے علم حاصل کرلو، علم کا اُٹھ جانا یہ ہے کہ اہلِ علم رخصت ہو جائیں گے، خوب مضبوطی سے علم حاصل کرو، اُس شخص کو کیا خبر کہ کب اس کی طرف حاجتمندی پیش آ جائے یا اُس کے علم کی دوسروں کو ضرورت پیش آ جائے۔ عنقریب تم ایسے لوگوں کو پاؤگے جن کا دعویٰ یہ ہوگا کہ وہ تمہیں قرآنی دعوت دے رہے ہیں، حالانکہ انہوں نے کتاب اللہ کو پس پشت ڈال دیا ہوگا۔ اِس لیے علم پر مضبوطی سے قائم رہو۔ دین میں نئی باتوں، بے سود موشگافیوں اور غیر ضروری غور و خوض سے بچو اور (سلف صالحین کے) پرانے راستہ پر قائم رہو۔

اِس حدیث کو امام دارمی، عبد الرزاق اور طبرانی نے روایت کیا ہے۔

ایک روایت میں حضرت ابو موسیٰ اشعری رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: قیامت اس وقت تک قائم نہ ہو گی یہاں تک کہ اللہ کی کتاب (پر عمل کرنے) کو عار ٹھہرایا جائے گا اور اسلام اجنبی ہو جائے گا۔ یہاں تک کہ علم اٹھا لیا جائے گا اور زمانہ بوڑھا ہو جائے گا، انسان کی عمر کم ہو جائے گی، ماہ و سال اور غلہ و ثمرات میں (بے برکتی اور) کمی رونما ہو گی، ناقابل اعتماد لوگوں کو امین اور امانت دار لوگوں کو ناقابل اعتماد سمجھا جائے گا، جھوٹے کو سچا اور سچے کو جھوٹا قرار دیا جائے گا، ھرج عام ہو گا۔ لوگوں نے عرض کیا: یا رسول اللہ! ہرج کیا ہے؟ آپ ﷺ نے فرمایا: قتل، قتل۔ اور یہاں تک کہ اونچی اونچی عمارتیں تعمیر کی جائیں گی اور ان پر فخر کیا جائے گا، یہاں تک کہ صاحب اولاد عورتیں غمزدہ ہوں گی اور بے اولاد خوش ہوں گی، ظلم، حسد اور لالچ کا دور دورہ ہو گا، علم کے سوتے خشک ہوتے جائیں گے اور جہالت کا سیلاب اُمنڈ آئے گا، اولاد غم و غصہ کا موجب ہو گی اور موسم سرما میں گرمی ہو گی۔ یہاں تک کہ بدکاری اعلانیہ ہونے لگے گی۔ ان حالات میں زمین کی طنابیں کھینچ دی جائیں گی۔

اسے امام ابن عساکر نے روایت کیا ہے۔

ایک روایت میں حضرت عبد الرحمن انصاری رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: قربِ قیامت کی نشانیوں میں بارش کا زیادہ ہو جانا، فصلوں کا کم ہو جانا، قراء کا زیادہ ہو جانا اور(شرعی احکام کی سمجھ بوجھ رکھنے والے) فقہاء کا کم ہو جانا، امراء کا زیادہ ہو جانا اور امانت داروں کا کم ہو جانا شامل ہے۔

اسے امام ہیثمی اور ہندی نے بیان کیا ہے۔

  • Ḥaz̤rat Abū Qilābah bayān karte haiṅ keh Ḥaz̤rat ʻAbd Allāh bin Masʻūd raḍiya Allāhu ‘anhu ne farmāyā: ʻilm ut̥h jāne se păhle-păhle ʻilm ḥāṣil kar lo, ʻilm kā ut̥h jānā yeh hai keh ăhle ʻilm ruḳhṣat ho jā’eṅge, ḳhūb maz̤būṭī se ʻilm ḥāṣil karo, us shaḳhṣ ko kyā ḳhabar keh kab us kī ṭaraf ḥajat-mandī pesh ā jā’e yā us ke ʻilm kī dūsroṅ ko z̤arūrat pesh ā jā’e. ʻAnqarīb tum aise logoṅ ko pā’oge jin ka daʻwá yeh hogā keh woh tumheṅ Qur’ānī daʻwat de rahe haiṅ, ḥālāṅ-keh unhoṅ ne Kitābullāh ko pase pusht d̥āl diyā hogā. Is liye ʻilm par maz̤būṭī se qā’im raho. Dīn meṅ na’ī bātoṅ, be-sūd maushūgāfiyoṅ aur ġhair z̤arūrī ġhaur-o ḳhauz̤ se bacho aur (salafe ṣāleḥīn ke) purāne rāstah par qā’im raho.
    Is ḥadīs̲ ko Imām Dārimī, ʻAbd al-Razzāq aur Ṭabarānī ne riwāyat kiyā hai. Ek riwāyat meṅ Ḥaz̤rat Abū Mūsá Ashʻarī raḍiya Allāhu ‘anhu bayān karte haiṅ keh Rasūl Allāh ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihi wa-sallam ne farmāyā: qiyāmat us waqt tak qā’im nah hogī yahāṅ tak keh Allāh kī kitāb (par ʻamal karne) ko ʻār t̥hăhrāyā jā’egā aur Islām ajnabī ho jā’egā. Yahāṅ tak keh ʻilm ut̥hā liyā jā’egā aur zamānah būr̥hā ho jā’egā, insān kī ʻumr kam ho jā’egi, māh-o sāl aur ġhallah wa s̲amarāt meṅ (be-barakatī aur) kamī rūnumā hogī, nāqābile eʻtemād logoṅ ko amīn aur amānat-dār logoṅ ko nā-qābile eʻtemād samjhā jā’egā, jhūt̥e ko sachchā aur sachche ko jhūt̥ā qarār diyā jā’egā, harj ʻām hogā. Logoṅ ne ʻarz̤ kiyā: ya Rasūl Allāh! Harj kyā hai? Āp ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihi wa-sallam ne farmāyā: qatl, qatl. Aur yahāṅ tak keh ūṅc̥hī-ūṅchī ʻimārateṅ taʻmīr kī jā’eṅgī aur un par faḳhr kiyā jā’egā, yahāṅ tak keh ṣāḥibe aulād ʻaurteṅ ġhamzadah hoṅgī aur be-aulād ḳhẉush hoṅgī, ẓulm, ḥasad aur lālach kā daur daurā hogā, ʻilm ke sūte ḳhushk hote jā’eṅge aur jahālat kā sailāb umaṅd̥ ā’egā, aulād ġham-o ġhuṣṣah kā mūjib hogī aur mausame sarmā meṅ garmī hogī. Yahāṅ tak keh badkārī eʻlānīyah hone lagegī. In ḥālāt meṅ zamīn kī ṭanābeṅ ḳhaiṅch dī jā’eṅgī.
    Ise Imām Ibn ʻAsākir ne riwāyat kiyā hai. Ek riwāyat meṅ Ḥaz̤rat ʻAbd al-Raḥmān Anṣārī raḍiya Allāhu ‘anhu bayān karte haiṅ keh Rasūl Allāh ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihi wa-sallam ne farmāyā: qurbe qiyāmat kī nishāniyoṅ meṅ bārish kā ziyādah ho jānā, faṣloṅ kā kam ho jānā, qurrā’ kā ziyādah ho jānā aur (sharʻī aḥkām kī samajh būjh rakhne wāle) fuqahā’ kā kam ho jānā, umarā kā ziyādah ho jānā aur amānat-dāroṅ kā kam ho jānā shāmil hai.
    Ise Hayt̲h̲amī aur Hindī ne bayān kiyā hai.

    [Ṭāhir al-Qādrī fī al-Qawlu al-Ḥasani fī ʻalāmatī al-sāʻaṫi wa-ẓuhūri al-fitan,/23_27, raqam: 08.]
    〰〰

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s