Fitnoṅ kā ẓuhūr part 7

al-Qur’ān

(11) فَهَلْ یَنْظُرُوْنَ اِلَّا السَّاعَةَ اَنْ تَاْتِیَهُمْ بَغْتَةً ج فَقَدْ جَآء اَشْرَاطُهَا ج فَاَنّٰی لَهُمْ اِذَا جَآءتْهُمْ ذِکْرٰهُمْo
(محمد، 47/ 18)

تو اب یہ (منکر) لوگ صرف قیامت ہی کا انتظار کر رہے ہیں کہ وہ ان پر اچانک آ پہنچے؟ سو واقعی اس کی نشانیاں (قریب) آ پہنچی ہیں، پھر انہیں ان کی نصیحت کہاں (مفید) ہو گی جب (خود) قیامت (ہی) آ پہنچے گیo

(11) To ab yeh (munkir) log ṣirf qiyāmat hī kā inteẓār kar rahe haiṅ keh woh un par achānak ā pahŏṅche? So wāqeʻī us kī nishāniyāṅ (qarīb) ā pahŏṅchī haiṅ, phir unheṅ un kī naṣīhat kahāṅ (mufīd) hogī jab (ḳhẉud) qiyāmat (hī) ā pahŏṅchegī.

[Muḥammad, 47/18.]

al-Ḥadīt̲h̲

11۔ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ رضي الله عنه قَالَ: قَالَ رَسُوْلُ اللهِ ﷺ : صِنْفَانِ مِنْ أَهْلِ النَّارِ لَمْ أَرَهُمَا قَوْمٌ مَعَهُمْ سِیَاطٌ کَأَذْنَابِ الْبَقَرِ یَضْرِبُوْنَ بِهَا النَّاسَ وَنِسَاءٌ کَاسِیَاتٌ عَارِیَاتٌ مُمِيْـلَاتٌ مَائِـلَاتٌ۔
رَوَاهُ مُسْلِمٌ وَأَحْمَدُ وَابْنُ حِبَّانَ وَأَبُوْ یَعْلٰی۔

11: أخرجہ مسلم في الصحیح، کتاب اللباس والزینۃ، باب النساء الکاسیات العاریات المائلات الممیلات، 3/ 1680، الرقم/ 2128، وأحمد بن حنبل في المسند، 2/ 355، الرقم/ 8650، وأبو یعلی في المسند، 12/ 46، الرقم/ 6690، وابن حبان في الصحیح، 16/ 500، 501، الرقم/ 7461، والطبراني في المعجم الأوسط، 6/ 80، الرقم/ 5854، والبیھقي في السنن الکبری، 2/ 234، الرقم/ 3077، والدیلمي في مسند الفردوس، 2/ 401، الرقم/ 3783۔

وَفِي رِوَایَةِ عَبْدِ اللهِ بْنِ عَمْرٍو رضي الله عنهما : أَنَّ رَسُوْلَ اللهِ ﷺ قَالَ: سَیَکُوْنُ فِي آخِرِ هٰذِهِ الأُمَّةِ رِجَالٌ یَرْکَبُوْنَ عَلَی الْمِیَاثِرِ حَتّٰی یَأْتُوْا أَبْوَابَ مَسَاجِدِھِمْ نِسَاؤُھُمْ کَاسِیَاتٌ عَارِیَاتٌ۔
رَوَاهُ أَحْمَدُ وَالْحَاکِمُ۔

أخرجہ أحمد بن حنبل في المسند، 2/ 223، الرقم/ 7083، والحاکم في المستدرک، 4/ 483، الرقم/ 8346، والھیثمي في مجمع الزوائد، 5/ 137۔

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: دو دوزخی گروہ ایسے ہیں جن کو میں نے نہیں دیکھا (بعد میں پیدا ہوں گے) ایک وہ گروہ جن کے ہاتھوں میں بیل کی دم کی مانند کوڑے ہوں گے وہ اُن کو لوگوں کے منہ پر (ناحق) ماریں گے۔ دوم وہ عورتیں جو (کہنے کو تو) لباس پہنے ہوئے ہوں گی لیکن درحقیقت برہنہ ہوں گی اور (لوگوں کو اپنے جسم کی نمائش اور لباس کی زیبائش سے اپنی طرف) مائل کریں گی اور (خود بھی مردوں سے اختلاط کی طرف) مائل ہوں گی۔
اِس حدیث کو امام مسلم، احمد، ابن حبان اور ابو یعلی نے روایت کیا ہے۔

ایک روایت میں حضرت عبد اللہ بن عمرو رضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: اس اُمت کے آخر میں ایسے لوگ ہوں گے جو مہنگی گاڑیوں کی مخملیں گدیوں پر بیٹھ کر مسجدوں کے دروازوں تک پہنچا کریں گے، ان کی عورتیں لباس پہننے کے باوجود برہنہ ہوں گی۔
اِس حدیث کو امام احمد اور حاکم نے روایت کیا ہے۔

  • Ḥaz̤rat Abū Hurayrah raḍiya Allāhu ‘anhu se marwī hai keh Rasūl Allāh ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihī wa-sallam ne farmāyā: do dozaḳhī guroh aise haiṅ jin ko maiṅ ne nahīṅ dekhā (baʻd meṅ paidā hoṅge) ek woh guroh jin ke hāthoṅ meṅ bail kī dum kī mānind kor̥e hoṅge woh un ko logoṅ ke muṅh par (nā-ḥaqq) māreṅge. Duwam woh ʻaurteṅ jo (kăhne ko to) libās păhne huwe hoṅgī lekin dar ḥaqīqat barăhnah hoṅgī aur (logoṅ ko apne jism kī numā’ish aur libās kī zebā’ish se apnī ṭaraf) mā’il kareṅgī aur (ḳhẉud bhī mardoṅ se iḳhtelāṭ kī ṭaraf) mā’il hoṅgī.
    Is ḥadīs̲ ko Imām Muslim, Aḥmad, Ibn Ḥibbān aur Abū Yaʻlá ne riwāyat kiyā hai. Ek riwāyat meṅ Ḥaz̤rat ʻAbd Allāh bin ʻAmr raḍiya Allāhu ‘anhu bayān karte haiṅ keh Rasūl Allāh ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihī wa-sallam ne farmāyā: us ummat ke āḳhir meṅ aise log hoṅge jo măhṅgī gār̥iyoṅ kī maḳhmalīṅ gaddiyoṅ par bait̥h kar masjidoṅ ke darwāzoṅ tak pahŏṅchā kareṅge, un kī ʻaurteṅ libās păhăn·ne ke bā-wujūd barăhnah hoṅgī.
    Is ḥadīs̲ ko Imām Aḥmad aur Ḥākim ne riwāyat kiyā hai.

    [Ṭāhir al-Qādrī fī al-Qawlu al-Ḥasani fī ʻalāmatī al-sāʻaṫi wa-ẓuhūri al-fitan,/29_31, raqam: 11.]
    〰〰
    Join Karen

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s