Fitnoṅ kā ẓuhūr part 10

al-Qur’ān

(9) هَلْ یَنْظُرُوْنَ اِلآَّ اَنْ تَاْتِیَهُمُ الْمَلٰٓئِکَةُ اَوْ یَاْتِیَ رَبُّکَ اَوْ یَاْتِیَ بَعْضُ اٰیٰتِ رَبِّکَ ط یَوْمَ یَاْتِيْ بَعْضُ اٰیٰتِ رَبِّکَ لَا یَنْفَعُ نَفْسًا اِيْمَانُهَا لَمْ تَکُنْ اٰمَنَتْ مِنْ قَبْلُ اَوْ کَسَبَتْ فِيْٓ اِيْمَانِهَا خَيْرًا ط قُلِ انْتَظِرُوْٓا اِنَّا مُنْتَظِرُوْنَo
(الأنعام، 6/ 158)

وہ فقط اسی انتظار میں ہیں کہ ان کے پاس (عذاب کے) فرشتے آ پہنچیں یا آپ کا رب (خود) آ جائے یا آپ کے رب کی کچھ (مخصوص) نشانیاں (عیاناً) آ جائیں۔ (انہیں بتا دیجیے کہ) جس دن آپ کے رب کی بعض نشانیاں (یوں ظاہراً) آ پہنچیں گی (تو اس وقت) کسی (ایسے) شخص کا ایمان اسے فائدہ نہیں پہنچائے گا جو پہلے سے ایمان نہیں لایا تھا یا اس نے اپنے ایمان (کی حالت) میں کوئی نیکی نہیں کمائی تھی، فرما دیجیے: تم انتظار کرو ہم (بھی) منتظر ہیںo

(9) Woh faqaṭ isī inteẓār meṅ haiṅ keh un ke pāṣ (ʻaz̲āb ke) firishte ā pahŏṅcheṅ yā Āp kā Rabb (ḳhẉud) ā jā’e yā Āp ke Rabb kī kuc̥h (maḳhṣūṣ) nishāniyāṅ (ʻayānan) ā jā’eṅ. (Unheṅ batā dījiye keh) jis din Āp ke Rabb kī baʻz̤ nishāniyāṅ (yūṅ ẓāhiran) ā pahŏṅcheṅgī (to us waqt) kisī (aise) shaḳhṣ kā īmān use fā’edah nahīṅ pahŏṅchā’egā jo păhle se īmān nahīṅ lāyā thā yā us ne apne īmān (kī ḥālat) meṅ ko’ī nekī nahīṅ kamā’ī thī, farmā dījiye: tum inteẓār karo ham (bhī) muntaẓir haiṅ.
[al-Anʻām, 6/158.]

al-Ḥadīt̲h̲

9۔ عَنْ یَحْیَی بْنِ سَعِيْدٍ أَنَّ عَبْدَ اللهِ بْنَ مَسْعُوْدٍ رضي الله عنه قَالَ لِإِنْسَانٍ: إِنَّکَ فِي زَمَانٍ کَثِيْرٌ فُقَهَاؤُهٗ قَلِيْلٌ قُرَّاؤُهٗ تُحْفَظُ فِيْهِ حُدُوْدُ الْقُرْآنِ وَتُضَيَّعُ حُرُوْفُهٗ قَلِيْلٌ مَنْ یَسْأَلُ کَثِيْرٌ مَنْ یُعْطِي یُطِيْلُوْنَ فِيْهِ الصَّلَاةَ وَیَقْصُرُوْنَ الْخُطْبَةَ یُبَدُّوْنَ أَعْمَالَهُمْ قَبْلَ أَهْوَائِهِمْ وَسَیَأْتِي عَلَی النَّاسِ زَمَانٌ قَلِيْلٌ فُقَهَاؤُهٗ کَثِيْرٌ قُرَّاؤُهٗ یُحْفَظُ فِيْهِ حُرُوْفُ الْقُرْآنِ وَتُضَيَّعُ حُدُوْدُهٗ کَثِيْرٌ مَنْ یَسْأَلُ قَلِيْلٌ مَنْ یُعْطِي یُطِيْلُوْنَ فِيْهِ الْخُطْبَةَ وَیَقْصُرُوْنَ الصَّلَاةَ یُبَدُّوْنَ فِيْهِ أَهْوَائَهُمْ قَبْلَ أَعْمَالِهِمْ۔
رَوَاهُ مَالِکٌ وَالْمُقْرِئُ۔

(أخرجہ مالک بن أنس في الموطأ، کتاب النداء للصلاۃ، باب جامع الصلاۃ، 1/ 173، الرقم/ 417، والمقرئ الداني في السنن الواردۃ في الفتن، 3/ 674- 675، الرقم/ 317۔)

یحیی بن سعید بیان کرتے ہیں کہ حضرت عبد اللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ نے ایک شخص کو نصیحت کرتے ہوئے فرمایا: دیکھو! تم ایسے زمانہ میں ہو جس میں فقیہ زیادہ ہیں اور قاری کم، اس زمانہ میں قرآن کے حروف سے زیادہ اس کی حدود کی نگہداشت کی جاتی ہے، مانگنے والے کم اور دینے والے زیادہ ہیں، خطبہ مختصر اور نماز لمبی ہوتی ہے، اس زمانہ میں لوگ اعمال کو خواہشات پر مقدم رکھتے ہیں۔ اور (قرب قیامت کے وقت) ایک زمانہ ایسا آئے گا جس میں فقیہ کم ہوں گے اور قاری زیادہ، قرآن کے حروف کی حفاظت کی جائے گی مگر اس کی حدود کو پامال کیا جائے گا، مانگنے والوں کی بھیڑ ہوگی لیکن دینے والے کم ہوں گے، تقریریں بڑی لمبی چوڑی کی جائیں گی لیکن نماز مختصر سی پڑھی جائے گی اور لوگ اعمال سے زیادہ اپنی خواہشات کو مقدم رکھیں گے۔
اسے امام مالک اور مقرئ نے روایت کیا ہے۔

  • Ḥaz̤rat Yaḥyá bin Saʻīd bayān karte haiṅ keh Ḥaz̤rat ʻAbd Allāh bin Masʻūd raḍiya Allāhu ‘anhu ne ek shaḳhṣ ko naṣīḥat karte huwe farmāyā: dekho! Tum aise zamānah meṅ ho jis meṅ faqīh ziyādah haiṅ aur qārī kam, is zamānah meṅ Qur’ān ke ḥurūf se ziyādah us kī ḥudūd kī nigăh-dāsht kī jātī hai, māṅgne wāle kam aur dene wāle ziyādah haiṅ, ḳhuṭbah muḳhtaṣar aur namāz lambī hotī hai, is zamānah meṅ log aʻmāl ko ḳhẉāhishāt par muqaddam rakhte haiṅ. Aur (qurbe qiyāmat ke waqt) ek zamānah aisā ā’egā jis meṅ faqīh kam hoṅge aur qārī ziyādah, Qur’ān ke ḥurūf kī ḥifāẓat kī jā’egī magar us kī ḥudūd ko pāmāl kiyā jā’egā, māṅgne wāloṅ kī bhīr̥ hogī lekin dene wāle kam hoṅge, taqrīreṅ bar̥ī lambī chaur̥ī kī jā’eṅgī lekin namāz muḳhtaṣar par̥hī jā’egī aur log aʻmāl se ziyādah apnī ḳhẉāhishāt ko muqaddam rakheṅge.
    Ise Imām Mālik aur Muqri’ ne riwāyat kiyā hai.

    [Ṭāhir al-Qādrī fī al-Qawlu al-Ḥasani fī ʻalāmatī al-sāʻaṫi wa-ẓuhūri al-fitan,/27_28, raqam: 09.]
    〰〰

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s