Fitnoṅ kā ẓuhūr part 6

al-Qur’ān

(7) اَلْحَآقَّةُo مَا الْحَآقَّةُo وَمَآ اَدْرٰ کَ مَا الْحَآقَّةُo
(الحاقۃ، 69/ 1-3)

یقینا واقع ہونے والی گھڑیo کیا چیز ہے یقینا واقع ہونے والی گھڑیo اور آپ کو کس چیز نے خبردار کیا کہ یقینا واقع ہونے والی (قیامت) کیسی ہےo

(7) Yaqīnan wāqeʻ hone wālī ghar̥ī. Kyā chīz hai yaqīnan wāqeʻ hone wālī ghar̥ī. Aur Āp ko kis chīz ne ḳhabardār kiyā keh yaqīnan wāqeʻ hone wālī (Qiyāmat kaisī hai.
[al-Ḥāqqah, 69/1_3.]

al-Ḥadīt̲h̲

7۔ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ رضي الله عنه قَالَ: قَالَ رَسُوْلُ اللهِ ﷺ : إِذَا اتُّخِذَ الْفَيئُ دُوَلًا وَالأَمَانَةُ مَغْنَمًا وَالزَّکَاةُ مَغْرَمًا وَتُعُلِّمَ لِغَيْرِ الدِّيْنِ وَأَطَاعَ الرَّجُلُ امْرَأَتَهٗ وَعَقَّ أُمَّهٗ وَأَدْنَی صَدِيْقَهٗ وَأَقْصَی أَبَاهٗ، وَظَھَرَتِ الأَصْوَاتُ فِي الْمَسَاجِدِ، وَسَادَ الْقَبِيْلَةَ فَاسِقُھُمْ وَکَانَ زَعِيْمُ الْقَوْمِ أَرْذَلَھُمْ، وَأُکْرِمَ الرَّجُلُ مَخَافَةَ شَرِّهٖ وَظَھَرَتِ الْقَيْنَاتُ وَالْمَعَازِفُ وَشُرِبَتِ الْخُمُوْرُ وَلَعَنَ آخِرُ هٰذِهِ الأُمَّةِ أَوَّلَھَا فَلْیَرْتَقِبُوْا عِنْدَ ذَالِکَ رِيْحًا حَمْرَاءَ وَزَلْزَلَةً وَخَسْفًا وَمَسْخًا وَقَذْفًا وَآیَاتٍ تَتَابَعُ کَنِظَامٍ بَالٍ قُطِعَ سِلْکُهٗ فَتَتَابَعَ۔
رَوَاهُ التِّرْمِذِيُّ وَالطَّبَرَانِيُّ۔

حضرت ابو ہریرہ رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: جب محصولات کو ذاتی دولت، امانت کو غنیمت اور زکوٰۃ کو تاوان سمجھا جانے لگے گا، غیر دینی کاموں کے لیے علم حاصل کیا جائے گا، مرد اپنی بیوی کی فرمانبرداری کرے گا اور اپنی ماں کی نافرمانی، اپنے دوست کو قریب کرے گا اور باپ کو دور، مسجدوں میں آوازیں بلند ہونے لگیں گی، قبیلے کا بدکار شخص اُن کا سردار بن بیٹھے گا اور ذلیل آدمی قوم کا لیڈر (یعنی حکمران) بن جائے گا اور آدمی کی عزت محض اُس کے شر سے بچنے کے لیے کی جائے گی، گانے والی عورتیں اور گانے بجانے کا سامان عام ہو جائے گا، (کھلے عام اور کثرت سے) شرابیں پی جانے لگیں گی اور بعد والے لوگ، پہلے لوگوں کو لعن طعن سے یاد کریں گے، اُس وقت سرخ آندھی، زلزلے، زمین میں دھنس جانے، شکلیں بگڑ جانے، آسمان سے پتھر برسنے اور طرح طرح کے لگاتار عذابوں کا انتظار کرو۔ یہ نشانیاں یکے بعد دیگرے یوں ظاہر ہوں گی جس طرح کسی ہار کا دھاگہ ٹوٹ جانے سے گرتے موتیوں کا تانتا بندھ جاتا ہے۔
اِس حدیث کو امام ترمذی اور طبرانی نے روایت کیا ہے۔

  • Ḥaz̤rat Abū Hurayrah raḍiya Allāhu ‘anhu riwāyat karte haiṅ keh Rasūl Allāh ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihi wa-sallam ne farmāyā: jab măḥṣūlāt ko z̲ātī daulat, amānat ko ġhanīmat aur zakāṫ ko tāwān samjhā jāne lagegā, ġhair Dīnī kāmoṅ ke liye ʻilm ḥāṣil kiyā jā’egā, mard apnī biwī kī farmānbardārī karegā aur apnī māṅ kī nā-farmānī, apne dost ko qarīb karegā aur bāp ko dūr, masjidoṅ meṅ āwāzeṅ baland hone lageṅgī, qabīle kā badkār shaḳhṣ un kā sardār ban baitt̥hegā aur z̲alīl ādamī qaum kā līd̥ār (yaʻnī ḥukmarān) ban jā’egā aur ādamī kī ʻizzat măḥz̤ us ke sharr se bachne ke liye kī jā’egī, gāne wālī ʻaurteṅ aur gāne bajāne kā sāmān ʻām ho jā’egā, (khule ʻām aur kas̲rat se) sharābeṅ pī jāne lageṅgī aur baʻd wāle log, păhle logoṅ ko laʻn ṭaʻn se yād kareṅge, us waqt suḳhr āṅdhī, zalzale, zamīn meṅ dhaṅs jāne, shakleṅ bigar̥ jāne, āsmān se patthar barasne aur ṭarḥ-ṭarḥ ke lagātār ʻaz̲āboṅ kā inteẓār karo. Yeh nishāniyāṅ yake baʻd dīgare yūṅ ẓāhir hoṅgī jis ṭarḥ kisī hār kā dhāgah t̥ūt̥ jāne se girte motiyoṅ kā tāṅtā baṅdh jātā hai.

Is ḥadīs̲ ko Imām Tirmid̲h̲ī aur Ṭabarānī ne riwāyat kiyā hai.

[Ṭāhir al-Qādrī fī al-Qawlu al-Ḥasani fī ʻalāmatī al-sāʻaṫi wa-ẓuhūri al-fitan,/22_23, raqam: 07.]

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s