Fitnoṅ kā ẓuhūr part 5

al-Qur’ān

(6) بَلِ السَّاعَةُ مَوْعِدُهُمْ وَالسَّاعَةُ اَدْهٰی وَاَمَرُّo
(القمر، 54/ 46)

بلکہ اُن کا (اصل) وعدہ تو قیامت ہے اور قیامت کی گھڑی بہت ہی سخت اور بہت ہی تلخ ہےo

(6) Bal-keh un kā (aṣl) waʻdah to qiyāmat hai aur qiyāmat kī ghar̥ī bŏhat hī saḳht aur bŏhat hī talḳh hai.
[al-Qamar, 54/46.]

بسم اللہ الرحمٰن الرحیم

al-Ḥadīt̲h̲

6۔ عَنْ زِیَادِ بْنِ لَبِيْدٍ قَالَ: ذَکَرَ النَّبِيُّ ﷺ شَيْئًا فَقَالَ: ذَاکَ عِنْدَ أَوَانِ ذَهَابِ الْعِلْمِ قُلْتُ: یَا رَسُوْلَ اللهِ، وَکَيْفَ یَذْهَبُ الْعِلْمُ وَنَحْنُ نَقْرَأُ الْقُرْآنَ وَنُقْرِءهٗ أَبْنَائَنَا وَیُقْرِءُهٗ أَبْنَاؤُنَا أَبْنَاءَهُمْ إِلٰی یَوْمِ الْقِیَامَةِ؟ قَالَ: ثَکِلَتْکَ أُمُّکَ زِیَادُ إِنْ کُنْتُ لَأَرَاکَ مِنْ أَفْقَهِ رَجُلٍ بِالْمَدِيْنَةِ أَوَ لَيْسَ هٰذِهِ الْیَهُوْدُ وَالنَّصَارٰی یَقْرَءُوْنَ التَّوْرَاةَ وَالْإِنْجِيْلَ لَا یَعْمَلُوْنَ بِشَيئٍ مِمَّا فِيْهِمَا۔
رَوَاهُ أَحْمَدُ وَابْنُ مَاجَہ وَاللَّفْظُ لَهٗ وَابْنُ أَبِي شَيْبَةَ وَالطَّبَرَانِيُّ۔ وَقَالَ الْحَاکِمُ: هٰذَا حَدِيْثٌ صَحِيْحٌ عَلٰی شَرْطِ الشَّيْخَيْنِ، وَقَالَ الْکِنَانِيُّ: وَرِجَالُ إِسْنَادِهٖ ثِقَاتٌ۔

حضرت زیاد بن لبید رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ حضور نبی اکرم ﷺ نے کسی چیز (یعنی قیامت) کا تذکرہ کیا اور فرمایا: یہ اُس وقت ہوگا جب علم جاتا رہے گا۔ میں نے عرض کیا: یا رسول اللہ! علم کیسے جاتا رہے گا جبکہ ہم خود قرآن پڑھتے ہیں اور اپنے بچوں کو پڑھاتے ہیں اور ہماری اولاد اپنی اولاد کو پڑھائے گی اور تا قیامت یہ سلسلہ جاری رہے گا؟ آپ ﷺ نے فرمایا: اے زیاد! تیری ماں تجھے گم پائے، میں تو تجھے مدینہ کے فقیہ تر لوگوں میں سے سمجھتا تھا، کیا یہ یہود و نصاری تورات و انجیل نہیں پڑھتے، لیکن اُن کی کسی بات پر عمل نہیں کرتے (اسی بد عملی اور زبانی جمع خرچ کے نتیجہ میں یہ اُمت بھی وحی کی برکات سے محروم ہوجائے گی، بس قیل و قال باقی رہ جائے گا)۔
اس حدیث کو امام اَحمد، ابن ماجہ نے مذکورہ الفاظ میں، ابن ابی شیبہ اور طبرانی نے روایت کیا ہے۔ امام حاکم نے فرمایا: یہ حدیث بخاری اور مسلم کی شرائط پر صحیح ہے۔ امام کنانی نے فرمایا: اس کی اسناد کے رجال ثقہ ہیں۔

Hazrat Ziyād bin Labīd raḍiya Allāhu ‘anhu bayān karte haiṅ keh Ḥuz̤ūr Nabīye Akram ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihī wa-sallam ne kisī chīz (yaʻnī qiyāmat) kā taz̲kirah kiyā aur farmāyā: yeh us waqt hogā jab ʻilm jātā rahegā. Maiṅ ne ʻarz̤ kiyā: yā Rasūl Allāh! ʻIlm kaise jātā rahegā jab-keh ham ḳhẉud Qur’ān par̥hte haiṅ aur apne bachchoṅ ko par̥hāte haiṅ aur hamāri aulād apnī aulād ko par̥hā’egī aur tā qiyāmat yeh silsilah jārī rahegā? Āp ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihī wa-sallam ne farmāyā: ae Ziyād! Terī māṅ tujhe gum pā’e, maiṅ to tujhe Madīnah ke faqīh-tar logoṅ meṅ se samajhtā thā, kyā Yahūd wa Naṣārá Tawrāt wa Injīl nahīṅ par̥hte, lekin un kī kisī bāt par ʻamal nahīṅ karte (isī bad ʻamalī aur zabānī jamʻa ḳharch ke natījah meṅ yeh ummat bhī waḥyi kī barakāt se măḥrūm ho jā’egī, bas qīl-o qāl bāqī răh jā’egā).
Is ḥadīs̲ ko Imām Aḥmad, Ibn Mājah ne maz̲kūrah alfāẓ meṅ, Ibn Abī Shaybah aur Ṭabarānī ne riwāyat kiyā hai. Imām Ḥākim ne farmāyā: yeh ḥadīs̲ Buḳhārī aur Muslim kī sharā’iṭ par ṣaḥīḥ hai. Imām Kinānī ne farmāyā: is kī isnād ke rijāl s̲iqah haiṅ.
[Ṭāhir al-Qādrī fī al-Qawlu al-Ḥasani fī ʻalāmatī al-sāʻaṫi wa-ẓuhūri al-fitan,/20_22, raqam: 06.]

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s