Hadith Yeh merā kunbā hai.” Is ḥadīs̲ koYeh merā kunbā hai.” Is ḥadīs̲ k

Sayyidinā ʻAlī Karrama Allāhu Waj·hahu Al-karīm Kā Ẕikre Jamīl

سیدنا علی کرم اﷲ وجھہ الکریم کا ذکرِ جمیل

٥۔ عَنْ سَعْدِ بْنِ أَبِي وَقَّاصٍ رَضِيَ اﷲ عَنْهُ قَالَ: سَمِعْتُ رَسُوْلَ اﷲِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّمَ يَقُوْلُ لَهُ وَ قَدْ خَلَّفَهُ فِي بَعْضِ مَغَازِيْهِ. فَقَالَ لَه عَلِيٌّ: يَا رَسُوْلَ اﷲِ، خَلَّفْتَنِي مَعَ النِّسَاءِ وَالصِّبْيَانِ؟ فَقَالَ لَه رَسُوْلُ اﷲِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّمَ : أَمَا تَرْضٰي أَنْ تَکُوْنَ مِنِّي بِمَنْزِلَةِ هَارُوْنَ مِنْ مُّوْسٰي إِلَّا أَنَّهُ لَا نُبُوَّةَ بَعْدِي. وَسَمِعْتُهُ يَقُوْلُ يَوْمَ خَيْبَرَ: لَأُعْطِيَنَّ الرَّايَةَ رَجُلًا يُحِبُّ اﷲَ وَرَسُوْلَه وَيُحِبُّهُ اﷲُ وَرَسُوْلُه قَالَ: فَتَطَاوَلْنَا لَهَا فَقَالَ: ادْعُوْا لِي عَلِيًّا فَأُتِيَ بِه أَرْمَدَ فَبَصَقَ فِي عَيْنِهِ وَدَفَعَ الرَّايَةَ إِلَيْهِ. فَفَتَحَ اﷲُ عَلَيْهِ. وَلَمَّا نَزَلَتْ هٰذِهِ الْآيَةُ: ﴿فَقُلْ تَعَالَوْا نَدْعُوْ اَبْنَآءَنَا وَاَبْنَآءَ کُمْ﴾ [آل عمران، 3 : 61]، دَعَا رَسُوْلُ اﷲِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّمَ عَلِيًّا وَفَاطِمَةَ وَحَسَنًا وَحُسَيْنًا فَقَالَ: اَللّٰهُمَّ، هٰؤُلَآءِ أًهْلِي. رَوَاهُ مُسْلِمٌ وَالتِّرْمِذِيُّ.

’’حضرت سعد بن ابی وقاص رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ میں نے حضورنبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو فرماتے ہوئے سنا جب آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے بعض غزوات میں حضرت علی رضی اللہ عنہ کو پیچھے (مدینہ منورہ میں) چھوڑ دیا تو حضرت علی رضی اللہ عنہ نے عرض کیا: یا رسول اللہ! آپ نے مجھے عورتوں اور بچوں میں پیچھے چھوڑ دیا ہے؟ تو حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے حضرت علی رضی اللہ عنہ سے فرمایا: کیا تم اس بات پر راضی نہیں ہو کہ تم میرے لیے ایسے ہو جیسے موسیٰ علیہ السلام کے لیے ہارون علیہ السلام تھے، البتہ میرے بعد کوئی نبی نہیں ہو گا۔ اور غزوہ خیبر کے دن میں نے آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے یہ سنا کہ کل میں اس شخص کو جھنڈا دوں گا جو اللہ اور اس کے رسول سے محبت کرتا ہے، اور اللہ اور اس کا رسول اس سے محبت کرتے ہیں، سو ہم سب اس سعادت کے حصول کے انتظار میں تھے، آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا: علی کو میرے پاس لاؤ، حضرت علی رضی اللہ عنہ کو لایا گیا، اس وقت وہ آشوب چشم میں مبتلا تھے، آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ان کی آنکھوں میں لعاب دہن ڈالا اور انہیں جھنڈا عطا کیا، اللہ تعالیٰ نے ان کے ہاتھ پر خیبر فتح کر دیا اور جب یہ آیت نازل ہوئی: ’’آپ فرما دیجیے آؤ ہم اپنے بیٹوں کو بلائیں اور تم اپنے بیٹوں کو بلاؤ۔‘‘ تو حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے حضرت علی، حضرت فاطمہ، حضرت حسن اور حضرت حسین رضی اللہ عنہم کو بلایا اور کہا: اے اللہ! یہ میرا کنبہ ہے۔‘‘ اس حدیث کو امام مسلم اور ترمذی نے روایت کیا ہے۔

  • “Ḥaz̤rat Saʻd bin Abī Waqqāṣ raḍiya Allāhu ‘anhu bayān karte haiṅ ki maiṅ ne Ḥuz̤ūr Nabīye Akram ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihi wa-sallam ko farmāte hū’e sunā jab āp ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihi wa-sallam ne ba’z̤ ġhazwāt meṅ Ḥaz̤rat ʻAlī raḍiya Allāhu ‘anhu ko pīc̥he (Madīnā Munawwarā meṅ) c̥hor̥ diyā to Ḥaz̤rat ʻAlī raḍiya Allāhu ‘anhu ne ʻarz̤ kiyā: yā Rasūl Allāh! Āp ne mujhe ʻaurtoṅ aur bachchoṅ meṅ pīc̥he c̥hor̥ diyā hai? To Ḥuz̤ūr Nabīye Akram ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihi wa-sallam ne Ḥaz̤rat ʻAlī raḍiya Allāhu ‘anhu se farmāyā: kyā tum is bāt par rāz̤i nahīṅ ho ki tum mere liye aise ho jaise Mūsá ‘alayhi al-salām ke liye Hārūn ‘alayhi al-salām the, al-battā mere baʻd ko’ī Nabī nahīṅ hogā. Aur ġhazwā-e Ḳhaibar ke din maiṅ ne āp ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihi wa-sallam se yeh sunā ki kal maiṅ us shaḳhṣ ko jhand̥ā dūngā jo Allāh aur us ke Rasūl se maḥabbat kartā hai, aur Allāh aur us kā Rasūl us se maḥabbat karte haiṅ, so ham sab is saʻādat ke ḥusūl ke inṭeẓār meṅ the, āp ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihi wa-sallam ne farmāyā: ʻAlī ko mere pās lā’o, Ḥaz̤rat ʻAlī raḍiya Allāhu ‘anhu ko lāyā gayā, is waqt woh āshūbe chashm meṅ mubtālā the, āp ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihi wa-sallam ne un kī ānkhoṅ meṅ luʻābe dĕhĕn d̥ālā aur unheṅ jhand̥a ʻaṭā kiyā, Allāh Taʻālá ne un ke hāth par Ḳhaibar fateḥ kar diyā aur jab yeh āyat nāzil hū’ī: “Āp farmā dījīe ā’o ham apne bet̥oṅ ko bulā’eṅ aur tum apne bet̥oṅ ko bulā’o.” To Ḥuz̤ūr Nabīye Akram ṣallá Allāhu ‘alayhi wa-Ālihi wa-sallam ne Ḥaz̤rat ʻAlī, Ḥaz̤rat Fāṭimah, Ḥaz̤rat Ḥasan aur Ḥaz̤rat Ḥusayn raḍiya Allāhu ‘anhum ko bulāyā aur kahā: ae Allāh! Yeh merā kunbā hai.” Is ḥadīs̲ ko imām Muslim aur Tirmiḏẖī ne riwāyat kiyā hai.
    [Aḳhrajah Muslim fī al-Ṣahīh, kitāb faḍā’il al-ṣaḥābah, bāb min faḍā’il ʻAlī bin Abī Ṭālib raḍiya Allāhu ‘anhu, 04/1871, al-raqm: 2404,

al-Tirmiḏẖī fī al-Sunan, kitāb al-manāqib, bāb manāqib Alī bin Abī Ṭālib raḍiya Allāhu ‘anhu, 05/638, al-raqm: 3724,

Ṭāhir al-Qādrī fī Ḥusnu al-maʻāb fī Ḏh̲ikri Abī Turāb karrama Allāhu waj·hahu al-Karīm,/14_15, al-raqm: 05.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s